بالی اُمر کی پیاس پارٹ-- urdu sexi stori

User avatar
rajaarkey
Super member
Posts: 6651
Joined: 10 Oct 2014 10:09
Contact:

بالی اُمر کی پیاس پارٹ-- urdu sexi stori

Post by rajaarkey » 02 Apr 2017 15:35

بالی اُمر کی پیاس پارٹ--1
sexi stori



دوستوں یہ کہانی مجھے گل خان نے بھیجی ہے جسے میں پوسٹ کر رہا ہوں

بالی اُمر کی پیاس پارٹ--1

ہائی، میں اَںجلِ۔ّ۔! کھیر چھچوڑو! نام میں کیا رکھا ہے؟ چھِچھورے لڑکوں کو ویسے بھی نام سے زیادا 'کام' سے متلب رہتا ہے۔ اِسیلِئے سِرف 'کام' کی ہی باتیں کرُوںگی۔

میں آج 18 کی ہو گیی ہُوں۔ کُچّھ برس پہلے تک میں بِلکُل 'پھلیٹ' تھی۔۔ آگے سے بھی۔۔ اؤر پِچھے سے بھی۔ پر سکُول بس میں آتے جاتے; لڑکوں کے کںدھوں کی رگڑ کھا کھا کر مُجھے پتا ہی نہی چلا کی کب میرے کُلہوں اؤر چھاتِیو پر چربی چڑھ گیّ۔۔ بالی اُمر میں ہی میرے نِتںب بیچ سے ایک پھاںک نِکالے ہُئے گول تربُوج کی ترہ اُبھر گیے۔ میری چھاتی پر بھگوان کے دِئے دو اَنمول 'پھل' بھی اَب 'اَمرُودوں' سے بڑھکر موٹی موٹی 'سیبوں' جیسے ہو گیے تھے۔ میں کیِ بار باتھرُوم میں نںگی ہوکر اَچرج سے اُنہے دیکھا کرتی تھی۔۔ چھچھُو کر۔۔ دبا کر۔۔ مسل کر۔ مُجھے ایسا کرتے ہُئے اَجیب سا آنںد آتا ۔۔ 'وہاں بھی۔۔ اؤر نیچے بھی۔

میرے گورے چِٹ بدن پر اُس چھہوٹی سی کھاس جگہ کو چھچوڑکر کہیں بالوں کا نامو-نِشان تک نہی تھا۔۔ ہُلکے ہُلکے میری بگل میں بھی تھے۔ اُسکے اَلاوا گردن سے لیکر پیروں تک میں ایکدُوم چِکنی تھی۔ کلاس کے لڑکوں کو للچائی نزروں سے اَپنی چھاتی پر جھُول رہے 'سیبوں' کو گھُورتے دیکھ میری جاںگھوں کے بیچ چھِپِ بیٹھی ہُلکے ہُلکے بالوں والی، مگر چِکناہٹ سے بھری تِتلی کے پںکھ پھڑپھڑنے لگتے اؤر چُوچِیو پر گُلابی رںگت کے 'اَنار دانے' تن کر کھڑے ہو جاتے۔ پر مُجھے کوئی پھرک نہی پڑا۔ ہاں، کبھی کبھار شرم آ جاتی تھی۔ یے بھی نہی آتی اَگر ممّی نے نہی بولا ہوتا،"اَب تُو بڑی ہو گیی ہے اَںجُو۔۔ برا ڈالنی شُرُو کر دے اؤر چُنّی بھی لِیا کر!"

سچ کہُوں تو مُجھے اَپنے اُنمُکت اُرجوں کو کِسی مریادا میں باںدھ کر رکھنا کبھی نہی سُہایا اؤر نا ہی اُنکو چُنّی سے پردے میں رکھنا۔ مؤکا مِلتے ہی میں برا کو جانبُوجھ کر باتھرُوم کی کھُوںٹِ پر ہی ٹاںگ جاتی اؤر کلاس میں منچلے لڑکوں کو اَپنے اِرد گِرد مںڈراتے دیکھ مزے لیتی۔۔ میں اَکسر جان بُوجھ اَپنے ہاتھ اُپر اُٹھا اَںگڑائی سی لیتی اؤر میری چُوچِیا تن کر جھُولنے سی لگتی۔ اُس وقت میرے سامنے کھڑے لڑکوں کی ہالت کھراب ہو جاتی۔ّ۔ کُچّھ تو اَپنے ہوںٹو پر ایسے جیبھ پھیرنے لگتے مانو مؤکا مِلتے ہی مُجھے نوچ ڈالیںگے۔ کلاس کی سب لڑکِیاں مُجھسے جلنے لگی۔۔ ہالاںکِ 'وو' سب اُنکے پاس بھی تھا۔۔ پر میرے جیسا نہی۔۔

میں پڑھائی میں بِلکُل بھی اَچّھِ نہی تھی پر سبھی میل-ٹیچرس کا 'پُورا پیار' مُجھے مِلتا تھا۔ یے اُنکا پیار ہی تو تھا کِ ہوم-ورک نا کرکے لے جانے پر بھی وو مُسکُرکر بِنا کُچّھ کہے چُپچاپ کاپی بںد کرکے مُجھے پکڑا دیتے۔۔ باکی سب کی پِٹائی ہوتی۔ پر ہاں، وو میرے پڑھائی میں دھیان نا دینے کا ہرجانا وسُول کرنا کبھی نہی بھُولتے تھے۔ جِس کِسی کا بھی کھالی پیرِیڈ نِکل آتا; کِسی نا کِسی بہانے سے مُجھے سٹیپھرُم میں بُلا ہی لیتے۔ میرے ہاتھوں کو اَپنے ہاتھ میں لیکر مسلتے ہُئے مُجھے سمجھاتے رہتے۔ کمر سے چِپکا ہُآ اُنکا دُوسرا ہاتھ دھیرے دھیرے پھِسلتا ہُآ میرے نِتںبوں پر آ ٹِکتا۔ مُجھے پڑھائی پر 'اؤر زیادا' دھیان دینے کو کہتے ہُئے وو میرے نِتںبوں پر ہلکی ہلکی چپت لگتے ہُئے میرے نِتںبوں کی تھِرکن کا مزا لُوٹ'تے رہتے۔۔ مُجھے پڑھائی کے فایڈے گِنواتے ہُئے اَکسر وو 'بھاوُک' ہو جاتے تھے، اؤر چپت لگانا بھُول نِتںبوں پر ہی ہاتھ جما لیتے۔ کبھی کبھی تو اُنکی اُںگلِیاں سکرٹ کے اُپر سے ہی میری 'درار' کی گہرائی ماپنے کی کوشِش کرنے لگتی۔ّ۔

اُنکا دھیان ہر وقت اُنکی تھپکیّوں کے کارن لگاتار تھِرکتِ رہتی میری چُوچِیو پر ہی ہوتا تھا۔۔ پر کِسی نے کبھی 'اُنن' پر جھپٹّا نہی مارا۔ شاید 'وو' یے سوچتے ہوںگے کِ کہیں میں بِدک نا جاُّوں۔۔ پر میں اُنکو کبھی چاہکر بھی نہی بتا پائی کی مُجھے ایسا کرواتے ہُئے میٹھی-میٹھی کھُجلی ہوتی ہے اؤر بہُت آنںد آتا ہے۔ّ۔

ہاں! ایک بات میں کبھی نہی بھُول پاُّنگِ۔۔ میرے ہِسٹری والے سر کا ہاتھ ایسے ہی سمجھاتے ہُئے ایک دِن کمر سے نہی، میرے گھُٹنو سے چلنا شُرُو ہُآ۔۔ اؤر دھیرے دھیرے میری سکرٹ کے اَںدر گھُس گیا۔ اَپنی کیلے کے تنے جیسی لںبی گوری اؤر چِکنی جاںگھوں پر اُنکے 'کاںپتے' ہُئے ہاتھ کو مہسُوس کرکے میں مچل اُٹھی تھی۔ّ۔ کھُشی کے مارے مینے آںکھیں بںد کرکے اَپنی جاںگھیں کھول دی اؤر اُنکے ہاتھ کو میری جاںگھوں کے بیچ میں اُپر چڑھتا ہُآ مہسُوس کرنے لگی۔۔ اَچانک میری پھُول جیسی نازُک یونِ سے پانی سا ٹپکنے لگا۔۔

اَچانک اُنہونے میری جاںگھوں میں بُری ترہ پھںسی ہُئی 'نِکّر' کے اَںدر اُںگلی گھُسا دی۔۔ پر ہڑبڑی اؤر جلدبازی میں غلتی سے اُنکی اُںگلی سیدھی میری چِکنی ہوکر ٹپک رہی یونِ کی موٹی موٹی پھاںکوں کے بیچ گھُس گیّ۔۔ میں درد سے تِلمِلا اُٹھی۔۔ اَچانک ہُئے اِس پرہار کو میں سہن نہی کر پائی۔ چھٹپٹاتے ہُئے مینے اَپنے آپکو اُنسے چھُڑایا اؤر دیوار کی ترپھ مُںہ پھیر کر کھڑی ہو گیّ۔ّ۔ میری آںکھیں دبدبا گیی تھی۔۔
میں اِس ساری پرکرِیا کے 'پیار سے' پھِر شُرُو ہونے کا اِںتجار کر ہی رہی تھی کِ 'وو' ماسٹر میرے آگے ہاتھ جوڑکر کھڑا ہو گیا،"پلیز اَںجلِ۔۔ مُجھسے غلتی ہو گیّ۔۔ میں بہک گیا تھا۔ّ۔ کِسی سے کُچّھ مت کہنا۔۔ میری نؤکری کا سوال ہے۔ّ۔!" اِس'سے پہلے میں کُچّھ بولنے کی ہِمّت جُٹاتی; بِنا متلب کی بکبک کرتا ہُآ وو سٹیپھرُم سے بھاگ گیا۔۔ مُجھے تڑپتِ چھچوڑکر۔۔
نِگوڈی 'اُںگلی' نے میرے یؤون کو اِس کدر بھڑکایا کی میں اَپنے جلوّں سے لڑکوں کے دِلوں میں آگ لگانا بھُول اَپنی ننہی سی پھُدکٹی یونِ کی پیاس بُجھانے کی جُگت میں رہنے لگی۔ اِسکے لِئے مینے اَپنے اَںگ-پردرشن اَبھِیان کو اؤر تیج کر دِیا۔ اَںجان سی بنکر، کھُجلی کرنے کے بہانے میں بیںچ پر بیٹھی ہُئی سکرٹ میں ہاتھ ڈال اُسکو جاںگھوں تک اُپر کھِسکا لیتی اؤر کلاس میں لڑکوں کی سیٹِیاں بجنے لگتی۔ اَب پُورے دِن لڑکوں کی باتوں کا کیندر میں ہی رہنے لگی۔ آج اَہساس ہوتا ہے کِ یونِ میں ایک بار اؤر مردانی اُںگلی کروانے کے چکّر میں میں کِتنی بدنام ہو گیی تھی۔
کھیر; میرا 'کام' جلد ہی بن جاتا اَگر 'وو' (جو کوئی بھی تھا) میرے بیگ میں نِہایت ہی اَشلیل لیٹر ڈالنے سے پہلے مُجھے بتا دیتا۔ کاش لیٹر میرے کشوٹُو بھیّا سے پہلے مُجھے مِل جاتا! 'گدھے' نے لیٹر سیدھا میرے شرابی پاپا کو پکڑا دِیا اؤر رات کو نشے میں دھُتت ہوکر پاپا مُجھے اَپنے سامنے کھڑی کرکے لیٹر پڑھنے لگے:

" ہائی جانے-من!

کیا کھاتی ہو یار؟ اِتنی مست ہوتی جا رہی ہو کِ سارے لڑکوں کو اَپنا دیوانا بنا کے رکھ دِیا۔ تُمہاری 'پپیتے' جیسے چُونچِیو نے ہمیں پہلے ہی پاگل بنا رکھا تھا، اَب اَپنی گؤری چِکنی جاںگھیں دِکھا دِکھا کر کیا ہماری جان لینے کا اِرادا ہے؟ ایسے ہی چلتا رہا تو تُم اَپنے ساتھ 'اِس' سال ایگزیم میں سب لڑکوں کو بھی لے ڈُبگی۔۔

پر مُجھے تُمسے کوئی گِلا نہی ہے۔ تُمہاری مستانی چُونچِیا دیکھکر میں دھنے ہو جاتا تھا; اَب نںگی چِکنی جاںگھیں دیکھکر تو جیسے اَمر ہی ہو گیا ہُوں۔ پھِر پاس یا پھیل ہونے کی پرواہ کِسے ہے اَگر روج تُمہارے اَںگوں کے درشن ہوتے رہیں۔ ایک رِکویسٹ ہے، پلیز مان لینا! سکرٹ کو تھوڑا سا اؤر اُپر کر دِیا کرو تاکِ میں تُمہاری گیلی 'کcچِ' کا رںگ دیکھ سکُوں۔ سکُول کے باتھرُوم میں جاکر تُمہاری کلپنا کرتے ہُئے اَپنے لںڈ کو ہِلاتا ہُوں تو بار بار یہی سوال مںن میں اُبھرتا رہتا ہے کِ 'کچّچی' کا رںگ کیا ہوگا۔۔ اِس وجہ سے میرے لںڈ کا رس نِکلنے میں دیری ہو جاتی ہے اؤر کلاس میں ٹیچرس کی سُن'نِ پڑتی ہے۔ّ۔ پلیز، یے بات آگے سے یاد رکھنا!

تُمہاری کسم جانے-من، اَب تو میرے سپنو میں بھی پرِیںکا چوپڑا کی جگہ نںگی ہوکر تُم ہی آنے لگی ہو۔ 'وو' تو اَب مُجھے تُمہارے سامنے کُچّھ بھی نہی لگتی۔ سونے سے پہلے 2 بار خیالوں میں تُمہے پُوری نںگی کرکے چود'تے ہُئے اَپنے لںڈ کا رس نِکلتا ہُوں، پھِر بھی سُبہ میرا 'کچّچھا' گیلا مِلتا ہے۔ پھِر سُبہ بِستیر سے اُٹھنے سے پہلے تُمہے ایک بار زرُور یاد کرتا ہُوں۔

مینے سُنا ہے کِ لڑکِیوں میں چُدائی کی بھُوکھ لڑکوں سے بھی زیادا ہوتی ہے۔ تُمہارے اَںدر بھی ہوگی نا؟ ویسے تو تُمہاری چُدائی کرنے کے لِئے سبھی اَپنے لںڈ کو تیل لگائے پھِرتے ہیں; پر تُمہاری کسم جانیمن، میں تُمہے سبسے زیادا پیار کرتا ہُوں، اَسلی والا۔ کِسی اؤر کے بہکاوے میں مت آنا، زیاداتر لڑکے چودتے ہُئے پاگل ہو جاتے ہیں۔ وو تُمہاری کُںواری چُوت کو ایکدُوم پھاڑ ڈالیںگے۔ پر میں سب کُچّھ 'پیار سے کرُوںگا۔۔ تُمہاری کسم۔ پہلے اُںگلی سے تُمہاری چُوت کو تھوڑی سی کھولُوںگا اؤر چاٹ چاٹ کر اَںدر باہر سے پُوری ترہ گیلی کر دُوںگا۔۔ پھِر دھیرے دھیرے لںڈ اَںدر کرنے کی کوشِش کرُوںگا، تُمنے کھُشی کھُشی لے لِیا تو ٹھیک، ورنا چھچوڑ دُوںگا۔۔ تُمہاری کسم جانیمن۔

اَگر تُمنے اَپنی چھُدائی کروانے کا مُوڈ بنا لِیا ہو تو کل اَپنا لال رُمال لیکر آنا اؤر اُسکو رِسیس میں اَپنے بیںچ پر چھچوڑ دینا۔ پھِر میں بتاُّنگا کِ کب کہاں اؤر کیسے مِلنا ہے!

پلیز جان، ایک بار سیوا کا مؤکا زرُور دینا۔ تُم ہمیشا یاد رکھوگی اؤر روج روج چُدائی کروانے کی سوچوگی، میرا داوا ہے۔

تُمہارا آشِق!

لیٹر میں شُدّھ 'کامرس' کی باتیں پڑھتے پڑھتے پاپا کا نشا کب کاپھُور ہو گیا، شاید اُنہے بھی اَہساس نہی ہُآ۔ سِرف اِسیلِئے شاید میں اُس رات کُںواری رہ گیّ۔ ورنا وو میرے ساتھ بھی ویسا ہی کرتے جیسا اُنہونے بڑی دیدی 'نِمّو' کے ساتھ کُچّھ سال پہلے کِیا تھا۔

میں تو کھیر اُس وقت چھہوٹی سی تھی۔ دیدی نے ہی بتایا تھا۔ سُنی سُنائی بتا رہی ہُوں۔ وِسواس ہو تو ٹھیک ورنا میرا کیا چاٹ لوگے؟

پاپا نِمّو کو بالوں سے پکڑکر گھسیٹ'تے ہُئے اُپر لائے تھے۔ شراب پینے کے باد پاپا سے اُلجھنے کی ہِمّت گھر میں کوئی نہی کرتا۔ ممّی کھڑی کھڑی تماشا دیکھتی رہی۔ بال پکڑ کر 5-7 کرارے جھاپڑ نِمّوں کو مارے اؤر اُسکی گردن کو دبوچ لِیا۔ پھِر جانے اُنکے مںن میں کیا خیال آیا; بولے،" سزا بھی ویسی ہی ہونی چاہِئے جیسی غلتی ہو!" دیدی کے کمیز کو دونو ہاتھوں سے گلے سے پکڑا اؤر ایک ہی جھٹکے میں تار تار کر ڈالا; کمیز کو بھی اؤر دیدی کی 'اِزّت' کو بھی۔ دیدی کے میری ترہ مستایے ہُئے گول گول کبُوتر جو تھوڑے بہُت اُسکے سمیز نے چھُپا رکھے تھے; اَگلے جھٹکے کے باد وو بھی چھُپے نہی رہے۔ دیدی بتاتی ہیں کِ پاپا کے سامنے 'اُنکو' پھڑکتے دیکھ اُنہے کھُوب شرم آئی تھی۔ اُنہونے اَپنے ہاتھوں سے 'اُنہے' چھِپانے کی کوشِش کی تو پاپا نے 'ٹیچرس' کی ترہ اُسکو ہاتھ اُپر کرنے کا آدیش دے دِیا۔۔ 'ٹیچرس' کی بات پر ایک اؤر بات یاد آ گیّ، پر وو باد میں سُناُّنگِ۔ّ۔۔

ہاں تو میں بتا رہی تھی۔۔ ہاں۔۔ تو دیدی کے دونو سںترے ہاتھ اُپر کرتے ہی اؤر بھی تن کر کھڑے ہو گیے۔ جیسے اُنکو شرم نہی گرو ہو رہا ہو۔ دانو کی نوک بھی پاپا کی اؤر ہی گھُور رہی تھی۔ اَب بھلا میرے پاپا یے سب کیسے سہن کرتے؟ پاپا کے سامنے تو آج تک کوئی بھی نہی اَکڑا تھا۔ پھِر وو کیسے اَکڑ گیے؟ پاپا نے دونو چُوچِیوں کے دانوں کو کسکر پکڑا اؤر مسل دِیا۔ دیدی بتاتی ہیں کِ اُس وقت اُنکی یونِ نے بھی رس چھچوڑ دِیا تھا۔ پر کمبخت 'کبُوتروں' پر اِسکا کوئی اَسر نہی ہُآ۔ وو تو اؤر زیادا اَکڑ گیے۔

پھِر تو دیدی کی کھیر ہی نہی تھی۔ گُسّے کے مارے اُنہونے دیدی کی سلوار کا ناڈا پکڑا اؤر کھیںچ لِیا۔ دیدی نے ہاتھ نیچے کرکے سلوار سںبھالنے کی کوشِش کی تو ایک ساتھ کیِ جھاپڑ پڑے۔ بیچاری دیدی کیا کرتی؟ اُنکے ہاتھ اُپر ہو گیے اؤر سلوار نیچے۔ گُسّے گُسّے میں ہی اُنہونے اُنکی 'کچھِ' بھی نیچے کھیںچ دی اؤر گُرّاتے ہُئے بولے،" کُتِیا! مُرگی بن جا اُدھر مُںہ کرکے"۔۔ اؤر دیدی بن گیی مُرگی۔
ہائے! دیدی کو کِتنی شرم آئی ہوگی، سوچ کر دیکھو! پاپا دیدی کے پِچھے چارپائی پر بیٹھ گیے تھے۔ دیدی جاںگھوں اؤر گھُٹنو تک نِکلی ہُئی سلوار کے بیچ میں سے سب کُچّھ دیکھ رہی تھی۔ پاپا اُسکے گول مٹول چُوتدوں کے بیچ اُنکے دونو چھیدو کو گھُور رہے تھے۔ دیدی کی یونِ کی پھاںکیں ڈر کے مارے کبھی کھُل رہی تھی، کبھی بںد ہو رہی تھی۔ پاپا نے گُسّے میں اُسکے نِتںبوں کو اَپنے ہاتھوں میں پکڑا اؤر اُنہے بیچ سے چیرنے کی کوشِش کرنے لگے۔ شُکرا ہے دیدی کے چُوتڑ سُڈؤل تھے، پاپا سپھل نہی ہو پائے!

"کِسی سے مروا بھی لی ہے کیا کُتِیا؟" پاپا نے تھک ہار کر اُنہے چھچوڑتے ہُئے کہا تھا۔

دیدی نے بتایا کِ منا کرنے کے باوجُود اُنکو وِسواس نہی ہُآ۔ ممّی سے مومبتّی لانے کو بولا۔ ڈری سہمی درواجے پر کھڑی سب کُچّھ دیکھ رہی ممّی چُپ چاپ رسوئی میں گیی اؤر اُنکو مومبتّی لاکر دے دی۔

جیسا 'اُس' لڑکے نے کھت میں لِکھا تھا، پاپا بڑے نِردیی نِکلے۔ دیدی نے بتایا کی اُنکی یونِ کا چھید موٹی مومبتّی کی پتلی نوک سے ڈھُوںڈھ کر ایک ہی جھٹکے میں اَںدر گھُسا دی۔ دیدی کا سِر سیدھا زمین سے جا ٹکرایا تھا اؤر پاپا کے ہاتھ سے چھچھُوٹنے پر بھی مومبتّی یونِ میں ہی پھںسی رہ گیی تھی۔ پاپا نے مومبتّی نِکالی تو وو کھُون سے لتھپتھ تھی۔ تب جاکر پاپا کو یکین ہُآ کِ اُنکی بیٹی کُںواری ہی ہے (تھی)۔ ایسا ہے پاپا کا گُسّا!

دیدی نے بتایا کِ اُس دِن اؤر اُس 'مومبتّی' کو وو کبھی نہی بھُول پائی۔ مومبتّی کو تو اُسنے 'نِشانی' کے تؤر پر اَپنے پاس ہی رکھ لِیا۔۔ وو بتاتی ہیں کِ اُسکے باد شادی تک 'وو' مومبتّی ہی بھری جوانی میں اُنکا سہارا بنی۔ جیسے اَںدھے کو لکڑی کا سہارا ہوتا ہے، ویسے ہی دیدی کو بھی مومبتّی کا سہارا تھا شاید

کھیر، بھگوان کا شُکر ہے مُجھے اُنہونے یے کہکر ہی بکھس دِیا،" کُتِیا! مُجھے وِسواس تھا کِ تُو بھی میری اؤلاد نہی ہے۔ تیری ممّی کی ترہ تُو بھی رںڈی ہے رںڈی! آج کے باد تُو سکُول نہی جاّیگی" کہکر وو اُپر چلے گیے۔۔ تھیںک گاڈ! میں بچ گیّ۔ دیدی کی ترہ میرا کُںواراپن دیکھنے کے چکّر میں اُنہونے میری سیل نہی توڑی۔

لگے ہاتھوں 'دیدی' کی وو چھہوٹی سی غلتی بھی سُن لو جِسکی وجہ سے پاپا نے اُنہے اِتنی 'سخت' سزا دی۔ّ۔

دراَسل گلی کے 'کلُّو' سے بڑے دینو سے دیدی کی گُٹرگُو چل رہی تھی۔۔ بس آںکھوں اؤر اِشاروں میں ہی۔ دھیرے دھیرے دونو ایک دُوسرے کو پریمپاتر لِکھ لِکھ کر اُنکا 'جہاز' بنا بنا کر ایک دُوسرے کی چھتو پر پھیںکنے لگے۔ دیدی بتاتی ہیں کِ کیِ بار 'کلُّو' نے چُوت اؤر لںڈ سے بھرے پریمپاتر ہماری چھت پر اُڑائے اؤر اَپنے پاس بُلانے کی پرارتھنا کی۔ پر دیدی بیبس تھی۔ کارن یے تھا کی شام 8:00 بجتے ہی ہمارے 'سرِیوں' والے درواجے پر تالا لگ جاتا تھا اؤر چابی پاپا کے پاس ہی رہتی تھی۔ پھِر نا کوئی اَںدر آ پتا تھا اؤر نا کوئی باہر جا پتا تھا۔ آپ کھُد ہی سوچِئے، دیدی بُلاتی بھی تو بُلاتی کیسے؟

پر ایک دِن کلُّو تیش میں آکر سنّی دیاول بن گیا۔ 'جہاز' میں لِکھ بھیجا کِ آج رات اَگر 12:00 بجے درواجا نہی کھُلا تو وو سرِیا اُکھاڑ دیگا۔ دیدی بتاتی ہیں کِ ایک دِن پہلے ہی اُنہونے چھت سے اُسکو اَپنی چُوت، چُوچِیاں اؤر چُوتڑ دِکھائے تھے، اِسیلِئے وہ پاگلا گیا تھا، پاگل!

دیدی کو 'پیار' کے جوش اؤر جزبے کی پرکھ تھی۔ اُنکو وِسواس تھا کِ 'کلُّو' نے کہ دِیا تو کہ دِیا۔ وو زرُور آایگا۔۔ اؤر آیا بھی۔ دیدی 12 بجنے سے پہلے ہی کلُّو کو مناکر درواجے کے 'سرِے' بچانے نیچے پہُںچ چُکی تھی۔۔ ممّی اؤر پاپا کی چارپائی کے پاس ڈالی اَپنی چارپائی سے اُٹھکر!

دیدی کے لاکھ سمجھنے کے باد وو ایک ہی شرت پر مانا "چُوس چُوس کر نِکلوانا پڑیگا!"
(¨`·.·´¨) Always
`·.¸(¨`·.·´¨) Keep Loving &;
(¨`·.·´¨)¸.·´ Keep Smiling !
`·.¸.·´ -- raj sharma

User avatar
rajaarkey
Super member
Posts: 6651
Joined: 10 Oct 2014 10:09
Contact:

Re: بالی اُمر کی پیاس پارٹ-- urdu sexi stori

Post by rajaarkey » 02 Apr 2017 15:37


دیدی کھُش ہوکر مان گیی اؤر جھٹ سے گھُٹنے ٹکے کر نیچے بیٹھ گیّ۔ دیدی بتاتی ہیں کِ کلُّو نے اَپنا 'لںڈ' کھڑا کِیا اؤر سرِیوں کے بیچ سے دیدی کو پکڑا دِیا۔۔ دیدی بتاتی ہیں کِ اُسکو 'وو' گرم گرم اؤر چُوسنے میں بڑا کھٹّا میٹھا لگ رہا تھا۔ چُوسنے چُوسنے کے چکّر میں دونو کی آںکھ بںد ہو گیی اؤر تبھی کھُلی جب پاپا نے پِچھے سے آکر دیدی کو پِچھے کھیںچ لںڈ مُسکِل سے باہر نِکلوایا۔

پاپا کو دیکھتے ہی گھر کے سرِیا تک اُکھاڑ دینے کا داوا کرنے والا 'کلُّو دیاول' تو پتا ہی نہی چلا کہاں گایب ہُآ۔ بیچاری دیدی کو اِتنی بڑی سزا اَکیلے سہن کرنی پڑی۔ سالا کلُّو بھی پکڑا جاتا اؤر اُسکے چچھید میں بھی مومبتّی گھُستی تو اُسکو پتا تو چلتا مومبتّی اَںدر ڈلوانے میں کِتنا درد ہوتا ہے۔

کھیر، ہر روز کی ترہ سکُول کے لِئے تیّار ہونے کا ٹائیم ہوتے ہی میری کسی ہُئی چُوچِیا پھڑکنے لگی; 'شِکار' کی تلاش کا ٹائیم ہوتے ہی اُنمیں اَجیب سی گُدگُدی ہونے لگ جاتی تھی۔ مینے یہی سوچا تھا کِ روز کی ترہ رات کی وو بات تو نشے کے ساتھ ہی پاپا کے سِر سے اُتر گیی ہوگی۔ پر ہائے ری میری کِسمت; اِس بار ایسا نہی ہُآ،" کِسلِئے اِتنی پھُدک رہی ہے؟ چل میرے ساتھ کھیت میں!"

"پر پاپا! میرے ایگزیم سِر پر ہیں!" بیشرم سی بنتے ہُئے مینے رات والی بات بھُول کر اُنسے بہس کی۔

پاپا نے مُجھے اُپر سے نیچے تک گھُورتے ہُئے کہا،" یے لے اُٹھا ٹوکری! ہو گیا تیرا سکُول بس! تیری ہازِری لگ جاّیگی سکُول میں! ریںپھل کے لڑکے سے بات کر لی ہے۔ آج سے کالیج سے آنے کے باد تُجھے یہیں پڑھا جایا کریگا! تیّاری ہو جائے تو پیپر دے دینا۔ اَگلے سال تُجھے گرل'س سکُول میں ڈالُوںگا۔ وہاں دِکھانا تُو کچھی کا رںگ!" آخِری بات کہتے ہُئے پاپا نے میری اؤر دیکھتے ہُئے زمین پر تھُوک دِیا۔ میری کچھی کی بات کرنے سے شاید اُنکے مُںہ میں پانی آ گیا ہوگا۔

کام کرنے کی میری آدت تو تھی نہی۔ پُرانا سا لہنگا پہنے کھیت سے لؤٹی تو بدن کی پوری پوری دُکھ رہی تھی۔ دِل ہو رہا تھا جیسے کوئی مُجھے اَپنے پاس لِٹاکر آٹے کی ترہ گُوںتھ ڈالے۔ میری اُپر جانے تک کی ہِمّت نہی ہُئی اؤر نیچے کے کمرے میں چارپائی کو سیدھا کرکے اُس پر پسری اؤر سو گیّ۔

---------------------------------------------------------------------------

ریںپھل کا لڑکے نے گھر میں گھُس کر آواز دی۔ مُجھے پتا تھا کِ گھر میں کوئی نہی ہے۔ پھِر بھی میں کُچّھ نا بولی۔ در-اَسل پڑھنے کا میرا مںن تھا ہی نہی، اِسیلِئے سونے کا بہانا کِئے پڑی رہی۔ میرے پاس آتے ہی وو پھِر بولا،"اَںجلِ!"

اُسنے 2-3 بار مُجھکو آواز دی۔ پر مُجھے نہی اُٹھنا تھا سو نہی اُٹھی۔ ہائے ऱااَم! وو تو اَگلے ہی پل لڑکوں والی اؤکات پر آ گیا۔ سیدھا نِتںبوں پر ہاتھ لگاکر ہِلایا،"اَںجلِ۔۔ اُٹھو نا! پڑھنا نہی ہے کیا؟"

اِس ہرکت نے تو دُوسری ہی پڑھائی کرنے کی للک مُجھمیں جگا دی۔ اُسکے ہاتھ کا اَہساس پاتے ہی میرے نِتںب سِکُڈ سے گیے۔ پُورا بدن اُسکے چھُونے سے تھِرک اُٹھا تھا۔ اُسکو میرے جاگ جانے کی غلتپھہمی نا ہو جائے اِسیلِئے نیںد میں ہی بڑبڑانے کا ناٹک کرتی ہُئی میں اُلٹی ہو گیی; اَپنے ماںسل نِتںبوں کی کساوٹ سے اُسکو للچانے کے لِئے۔

سارا گاںو اُس چاسمِش کو شریپھ کہتا تھا، پر وو تو بڑا ہی ہرامی نِکلا۔ ایک بار باہر نزر مار کر آیا اؤر میرے نِتںبوں سے تھوڑا نیچے مُجھسے سٹکار چارپائی پر ہی بیٹھ گیا۔ میرا مُںہ دُوسری ترپھ تھا پر مُجھے یکین تھا کِ وو چوری چوری میرے بدن کی کامُک بناوٹ کا ہی لُتف اُٹھا رہا ہوگا!

"اَںجلِ!" اِس بار تھوڑی تیج بولتے ہُئے اُسنے میرے گھُٹنوں تک کے لہںگے سے نیچے میری نںگی گُدج پِںڈلِیوں پر ہاتھ رکھکر مُجھے ہِلایا اؤر سرکتے ہُئے اَپنا ہاتھ میرے گھُٹنو تک لے گیا۔ اَب اُسکا ہاتھ نیچے اؤر لہںگا اُپر تھا۔

مُجھسے اَب سہن کرنا مُشکِل ہو رہا تھا۔ پر شِکار ہاتھ سے نِکالنے کا ڈر تھا۔ میں چُپّی سادھے رہی اؤر اُسکو جلد سے جلد اَپنے پِںجرے میں لانے کے لِئے دُوسری ٹاںگ گھُٹنو سے موڈی اؤر اَپنے پیٹ سے چِپکا لی۔ اِسکے ساتھ ہی لہںگا اُپر سرکتا گیا اؤر میری ایک جاںگھ کافی اُپر تک نںگی ہو گیّ۔ مینے دیکھا نہی، پر میری کچھی تک آ رہی باہر کی ٹھںڈی ہوا سے مُجھے لگ رہا تھا کِ اُسکو میری کچھی کا رںگ دِکھنے لگا ہے۔

"آ۔ّآنّنجلِ" اِس بار اُسکی آواز میں کںپکپاہٹ سی تھی۔۔ سِسک اُٹھا تھا وو شاید! ایک بار کھڑا ہُآ اؤر پھِر بیٹھ گیا۔۔ شاید میرا لہںگا اُسکے نیچے پھںسا ہُآ ہوگا۔ واپس بیٹھتے ہی اُسنے لہںگے کو اُپر پلٹ کر میری کمر پر ڈال دِیا۔۔

اُسکا کیا ہال ہُآ ہوگا یے تو پتا نہی۔ پر میری یونِ میں بُلبُلے سے اُٹھنے شُرُو ہو چُکے تھے۔ جب سہن کرنے کی ہد پار ہو گیی تو میں نیںد میں ہی بنی ہُئی اَپنا ہاتھ مُوڈی ہُئی ٹاںگ کے نیچے سے لے جاکر اَپنی کچھی میں اُںگلِیاں گھُسا 'وہاں' کھُجلی کرنے کرنے کے بہانے اُسکو کُریدنے لگی۔ میرا یے ہال تھا تو اُسکا کیا ہو رہا ہوگا؟ سُلگ گیا ہوگا نا؟

مینے ہاتھ واپس کھیںچا تو اَہساس ہُآ جیسے میری یونِ کی ایک پھاںک کچھی سے باہر ہی رہ گیی ہے۔ اَگلے ہی پل اُسکی ایک ہرکت سے میں بؤکھلا اُٹھی۔ اُسنے جھٹ سے لہںگا نیچے سرکا دِیا۔ کمبخت نے میری ساری میہنت کو مِٹّی میں مِلا دِیا۔

پر میرا سوچنا غلت سابِت ہُآ۔ وو تو میری اُمّید سے بھی زیادا شاتِر نِکلا۔ ایک آخِری بار میرا نام پُکارتے ہُئے اُسنے میری نیںد کو ماپنے کی کوشِش کی اؤر اَپنا ہاتھ لہںگے کے نیچے سرکتے ہُئے میرے نِتںبوں پر لے گیا۔ّ۔۔

کچھی کے اُپر تھِرکتِ ہُئی اُسکی اُںگلِیوں نے تو میری جان ہی نِکل دی۔ کسے ہُئے میرے چِکنے چُوتدوں پر دھیرے دھیرے مںڈراتا ہُآ اُسکا ہاتھ کبھی 'اِسکو' کبھی اُسکو دبا کر دیکھتا رہا۔ میری چُوچِیاں چارپائی میں دبکر چھیٹپاٹینے لگی تھی۔ مینے بڑی مُشکِل سے کھُد پر کابُو پایا ہُآ تھا۔۔

اَچانک اُسنے میرے لہںگے کو واپس اُپر اُٹھایا اؤر دھیرے سے اَپنی ایک اُںگلی کچھی میں گھُسا دی۔۔ دھیرے دھیرے وا اُںگلی سرکتِ ہُئی پہلے نِتںبوں کی درار میں گھُومی اؤر پھِر نیچے آنے لگی۔۔ مینے دم سادھ رکھا تھا۔۔ پر جیسے ہی اُںگلی میری 'پھُولکُنورِ' کی پھاںکوں کے بیچ آئی; میں اُچّھل پڑی۔۔ اؤر اُسی پل اُسکا ہاتھ وہاں سے ہٹا اؤر چارپائی کا بوجھ کم ہو گیا۔۔

میری چھہوٹی سی مچھلِ تڑپ اُٹھی۔ مُجھے لگا، مؤکا ہاتھ سے گیا۔۔ پر اِتنی آسانی سے میں بھی ہار مان'نے والوں میں سے نہی ہُوں۔ّ۔ اَپنی سِسکِیوں کو نیںد کی بڑبڑاہٹ میں بدل کر میں سیدھی ہو گیی اؤر آںکھیں بںد کِئے ہُئے ہی مینے اَپنی جاںگھیں گھُٹنوں سے پُوری ترہ موڑ کر ایک دُوسری سے وِپریت دِشا میں پھیلا دی۔ اَب لہںگا میرے گھُٹنو سے اُپر تھا اؤر مُجھے وِسواس تھا کِ میری بھیگی ہُئی کچھی کے اَںدر بیٹھی 'چھمّک چھلّو' ٹھیک اُسکے سامنے ہوگی۔

تھوڑی دیر اؤر یُوںہی بڑبڑاتے ہُئے میں چُپ ہو کر گہری نیںد میں ہونے کا ناٹک کرنے لگی۔ اَچانک مُجھے کمرے کی چِتکنِ بںد ہونے کی آواز آئی۔ اَگلے ہی پل وہ واپس چارپائی پر ہی آکر بیٹھ گیا۔۔ دھیرے دھیرے پھِر سے ریںگتا ہُآ اُسکا ہاتھ وہیں پہُںچ گیا۔ میری یونِ کے اُپر سے اُسنے کچھی کو سرکّر ایک ترپھ کر دِیا۔ مینے ہُلکی سی آںکھیں کھولکر دیکھا۔ اُسنے چسمیں نہی پہنے ہُئے تھے۔ شاید اُتار کر ایک ترپھ رکھ دِئے ہوںگے۔ وہ آںکھیں پھیڈ ہُئے میری پھڑکٹی ہُئی یونِ کو ہی دیکھ رہا تھا۔ اُسکے چیہرے پر اُتّیجنا کے بھاو اَلگ ہی نزر آ رہے تھے۔۔

اَچانک اُسنے اَپنا چیہرا اُٹھایا تو مینے اَپنی آںکھیں پُوری ترہ بںد کر لی۔ اُسکے باد تو اُسنے مُجھے ہوا میں ہی اُڑا دِیا۔ یونِ کی دونو پھاںکوں پر مُجھے اُسکے دونو ہاتھ مہسُوس ہُئے۔ بہُت ہی آرام سے اُسنے اَپنے اَںگُوٹھے اؤر اُںگلِیوں سے پکڑ کر موٹی موٹی پھاںکوں کو ایک دُوسری سے اَلگ کر دِیا۔ جانے کیا ڈھُوںڈھ رہا تھا وہ اَںدر۔ پر جو کُچّھ بھی کر رہا تھا، مُجھسے سہن نہی ہُآ اؤر مینے کاںپتے ہُئے جاںگھیں بھیںچ کر اَپنا پانی چھچوڑ دِیا۔۔ پر آسچریجنک ڈھںگ سے اِس بار اُسنے اَپنے ہاتھ نہی ہٹائے۔ّ۔

کِسی کپڑے سے (شاید میرے لہںگے سے ہی) اُسنے یونِ کو ساپھ کِیا اؤر پھِر سے میری یونِ کو چؤڑا کر لِیا۔ پر اَب جھاڑ جانے کی وجہ سے مُجھے نارمل رہنے میں کوئی کھاس دِکّت نہی ہو رہی تھی۔ ہاں، مزا اَب بھی آ رہا تھا اؤر میں پُورا مزا لینا چاہتی تھی۔

اَگلے ہی پل مُجھے گرم ساںسیں یونِ میں گھُستی ہُئی مہسُوس ہُئی اؤر پاگل سی ہوکر مینے وہاں سے اَپنے آپکو اُٹھا لِیا۔۔ مینے اَپنی آںکھیں کھول کر دیکھا۔ اُسکا چیہرا میری یونِ پر جھُکا ہُآ تھا۔۔ میں اَںدازا لگا ہی رہی تھی کِ مُجھے پتا چل گیا کِ وو کیا کرنا چاہتا ہے۔ اَچانک وو میری یونِ کو اَپنی جیبھ سے چاٹنے لگا۔۔ میرے سارے بدن میں جھُرجُری سی اُٹھ گیّ۔ّاِس آنںد کو سہن نا کر پانے کے کارن میری سِسکی نِکل گیی اؤر میں اَپنے نِتںبوں کو اُٹھا اُٹھا کر پٹک'نے لگی۔ّ۔پر اَب وو ڈر نہی رہا تھا۔ّ۔ میری جاںگھوں کو اُسنے کسکر ایک جگہ دبوچ لِیا اؤر میری یونِ کے اَںدر جیبھ گھُسا دی۔۔

"اَیایا!" بہُت دیر سے دبائے رکھا تھا اِس سِسکی کو۔۔ اَب دبی نا رہ سکی۔۔ مزا اِتنا آ رہا تھا کی کیا بتاُّ۔ّ۔ سہن نا کر پانے کے کارن مینے اَپنا ہاتھ وہاں لے جاکر اُسکو وہاں سے ہٹانے کی کوشِش کی تو اُسنے میرا ہاتھ پکڑ لِیا،" کُچّھ نہی ہوتا اَںجلِ۔۔ بس دو مِنِٹ اؤر!" کہکر اُسنے میری جاںگھوں کو میرے چیہرے کی ترپھ دھکیل کر وہیں دبوچ لِیا اؤر پھِر سے جیبھ کے ساتھ میری یونِ کی گہرائی ماپنے لگا۔ّ۔

ہائے رام! اِسکا متلب اُسکو پتا تھا کی میں جاگ رہی ہُوں۔۔ پہلے یے بات بول دیتا تو میں کیُوں گھُٹ گھُٹ کر مزے لیتی، میں جھٹ سے اَپنی کوہنی چارپائی پر ٹکے کر اُپر اُٹھ گیی اؤر سِسکتے ہُئے بولی،" اَیایا۔ّ۔جلدی کرو نا۔۔ کوئی آ جاّیگا نہی تو!"

پھِر کیا تھا۔۔ اُسنے چیہرا اُپر کرکے مُسکُراتے ہُئے میری اؤر دیکھا۔۔ اُسکی ناک پر اَپنی یونِ کا گاڑھا پانی لگا دیکھا تو میری ہںسی چھچھُوٹ گیّ۔۔ اِس ہںسی نے اُسکی جھِجھک اؤر بھی کھول دی۔۔ جھٹ سے مُجھے پکڑ کر نیچے اُتارا اؤر گھُٹنے زمین پر ٹیکا مُجھے کمر سے اُپر چارپائی پر لِٹا دِیا۔ّ،" یے کیا کر رہے ہو؟"

"ٹائیم نہی ہے اَبھی بتانے کا۔۔ باد میں سب بتا دُوںگا۔۔ کِتنی رسیلی ہے تُو ہائے۔۔ اَپنی گیںڈ کو تھوڑا اُپر کر لے۔۔"

"پر کیسے کرُوں؟۔۔ میرے تو گھُٹنے زمین پر ٹیکے ہُئے ہیں۔ّ؟"

"تُو بھی نا۔۔ !" اُسکو گُسّا سا آیا اؤر میری ایک ٹاںگ چارپائی کے اُپر چڑھا دی۔۔ نیچے تکِیا رکھا اؤر مُجھے اَپنا پیٹ وہاں ٹیکا لینے کو بولا۔۔ مینے ویسا ہی کِیا۔۔

"اَب اُٹھاّو اَپنے چُوتڑ اُپر۔۔ جلدی کرو۔۔" بولتے ہُئے اُسنے اَپنا مُوسل جیسا لِںگ پیںٹ میں سے نِکال لِیا۔۔

میں اَپنے نِتںبوں کو اُپر اُٹھاتے ہُئے اَپنی یونِ کو اُسکے سامنے پروسا ہی تھا کِ باہر پاپا کی آواز سُنکر میرا دم نِکل گیا،" پپّپا!" میں چِلّائی۔ّ۔۔

"دو کام کیا کر لِئے; تیری تو جان ہی نِکل گیّ۔۔ چل کھڑی ہو جا اَب! نہا دھو لے۔ 'وو' آنے ہی والا ہوگا۔ّ۔ پاپا نے کمرے میں گھُسکر کہا اؤر باہر نِکل گیے،"جا کشوٹُو! ایک 'اَدّھا' لیکر آ!"

ہائے رام! میری تو ساںسیں ہی تھم گیی تھی۔ گنیمت رہی کی سپنے میں مینے سچمُچ اَپنا لہںگا نہی اُٹھایا تھا۔ اَپنی چُوچِیو کو دباکر مینے 2-4 لںبی لںبی ساںسیں لی اؤر لہںگے میں ہاتھ ڈال اَپنی کچھی کو چیک کِیا۔ یونِ کے پانی سے وو نیچے سے تر ہو چُکی تھی۔ بچ گیی!

رگڑ رگڑ کر نہاتے ہُئے مینے کھیت کی مِٹّی اَپنے بدن سے اُتاری اؤر نیی نویلی کچھی پہن لی جو ممّی 2-4 دِن پہلے ہی باجار سے لائی تھی،" پتا نہی اَںجُو! تیری اُمر میں تو میں کچھی پہنتی بھی نہی تھی۔ تیری اِتنی جلدی کیسے کھراب ہو جاتی ہے" ممّی نے لاکر دیتے ہُئے کہا تھا۔

مُجھے پُوری اُمّید تھی کِ ریںپھل کا لڑکا میرا سپنا ساکار زرُور کریگا۔ اِسیلِئے مینے سکُول والی سکرٹ ڈالی اؤر بِنا برا کے شرٹ پہنکر باتھرُوم سے باہر آ گیّ۔

"جا وو نیچے بیٹھے تیرا اِںتزار کر رہے ہیں۔۔ کِتنی بار کہا ہے برا ڈال لِیا کر; نِکمّی! یے ہِلتے ہیں تو تُجھے شرم نہی آتی؟" ممّی کی اِس بات کو مینے نزراَںداج کِیا اؤر اَپنا بیگ اُٹھا سیڑھِیوں سے نیچے اُترتی چلی گیّ۔

نیچے جاکر مینے اُس چشمُو کے ساتھ بیٹھی پڑوس کی رِںکی کو دیکھا تو میری سمجھ میں آیا کِ ممّی نے بیٹھا ہے کی وجاے بیٹھے ہیں کیُو بولا تھا
"تُم کِسلِئے آئی ہو؟" مینے رِںکی سے کہا اؤر چشمُو کو اَبھِوادن کے رُوپ میں داںت دِکھا دِئے۔

اُلُّو کی دُوم ہںسا بھی نہی مُجھے دیکھکر،" کُرسی نہیں ہیں کیا؟"

"میں بھی یہیں پڑھ لِیا کرُوںگی۔۔ بھیّا نے کہا ہے کِ اَب روج یہیں آنا ہے۔ پہلے میں بھیّا کے گھر جاتی تھی پڑھنے۔۔ " رِںکی کی سُریلی آواز نے بھی مُجھے ڈںک سا مارا۔ّ۔

"کؤن بھیّا؟" مینے مُںہ چڑھا کر پُوچّھا!

"یے۔۔ ترُن بھیّا! اؤر کؤن؟ اؤر کیا اِنکو سر کہیںگے؟ 4-5 سال ہی تو بڑے ہیں۔۔" رِںکی نے مُسکُراتے ہُئے کہا۔۔

ہائے رام! جو تھوڑی دیر پہلے سپنے میں 'سیّاں' بنکر میری 'پھُولجھڑی' میں جیبھ گھُما رہا تھا; اُسکو کیا اَب بھیّا کہنا پڑیگا؟ نا! مینے نا کہا بھیّا
" میں تو سر ہی کہُوںگی! ٹھیک ہے نا، ترُن سر؟"

بیشرمی سے میں چارپائی پر اُسکے سامنے پسر گیی اؤر ایک ٹاںگ سیدھی کِئے ہُئے دُوسری گھُٹنے سے موڑ اَپنی چھاتی سے لگا لی۔ سیدھی ٹاںگ والی چِکنی جاںگھ تو مُجھے اُپر سے ہی دِکھائی دے رہی تھی۔۔ اُسکو کیا کیا دِکھ رہا ہوگا، آپ کھُد ہی سوچ لو۔

"ٹھیک سے بیٹھ جاّو! اَب پڑھنا شُرُو کریںگے۔۔ " ہرامی نے میری جنّت کی اور دیکھا تک نہی اؤر کھُد ایک ترپھ ہو رِںکی کو بیچ میں بیٹھنے کی جگہ دے دی۔۔ میں تو سُلگتی رہ گیّ۔۔ مینے آلتھی پالتی مار کر اَپنا گھُٹنا جلن کی وجہ سے رِںکی کی کوکھ میں پھںسا دِیا اؤر آگے جھُک کر رانی سُورت بنائے کاپی کی اؤر دیکھنے لگی۔ّ۔
(¨`·.·´¨) Always
`·.¸(¨`·.·´¨) Keep Loving &;
(¨`·.·´¨)¸.·´ Keep Smiling !
`·.¸.·´ -- raj sharma

User avatar
rajaarkey
Super member
Posts: 6651
Joined: 10 Oct 2014 10:09
Contact:

Re: بالی اُمر کی پیاس پارٹ-- urdu sexi stori

Post by rajaarkey » 02 Apr 2017 15:42


ایک ڈیڑھ گھںٹے میں جانے کِتنے ہی سوال نِکال دِئے اُسنے، میری سمجھ میں تو کھاک بھی نہی آیا۔۔ کبھی اُسکے چیہرے پر مُسکُراہٹ کو کبھی اُسکی پیںٹ کے مردانا اُبھر کو ڈھُوںڈھتی رہی، پر کُچّھ نہی مِلا۔۔

پڑھتے ہُئے اُسکا دھیان ایک دو بار میری چُوچِیو کی اؤر ہُآ تو مُجھے لگا کِ وو 'دُودھ' کا دیوانا ہے۔ مینے جھٹ سے اُسکی سُنتے سُنتے اَپنی شرٹ کا بیچ والا ایک بٹن کھول دِیا۔ میری گڈرائی ہُئی چُوچِیا، جو شرٹ میں گھُٹن مہسُوس کر رہی تھی; راستا مِلتے ہی اُس اؤر سرک کر ساںس لینے کے لِئے باہر جھاںکنے لگی۔۔ دونو میں باہر نِکلنے کی مچی ہوڑ کا پھایڈا اُنکے بیچ کی گہری گھاٹی کو ہو رہا تھا، اؤر وہ بِلکُل سامنے تھی۔

ترُن نے جیسے ہی اِس بار مُجھسے پُوچّھنے کے لِئے میری اؤر دیکھا تو اُسکا چیہرا ایکدم لال ہو گیا۔۔ ہڑبڑتے ہُئے اُسنے کہا،" بس! آج اِتنا ہی۔۔ مُجھے کہیں جانا ہے۔ّ۔ کہتے ہُئے اُسنے نزریں چُراکر ایک بار اؤر میری گوری چُوچِیو کو دیکھا اؤر کھڑا ہو گیا۔ّ۔۔

ہد تو تب ہو گیّ، جب وو میرے سوال کا جواب دِئے بِنا نِکل گیا۔

مینے تو سِرف اِتنا ہی پُوچّھا تھا،" مزا نہی آیا کیا، سر؟"

کرمشہ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔۔
(¨`·.·´¨) Always
`·.¸(¨`·.·´¨) Keep Loving &;
(¨`·.·´¨)¸.·´ Keep Smiling !
`·.¸.·´ -- raj sharma

User avatar
rajaarkey
Super member
Posts: 6651
Joined: 10 Oct 2014 10:09
Contact:

2 گتاںک سے آگے۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔۔

Post by rajaarkey » 02 Apr 2017 15:44

2

گتاںک سے آگے۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔ّ۔۔


سپنے میں ہی سہی، پر بدن میں جو آگ لگی تھی، اُسکی دہک سے اَگلے دِن بھی میرا اَںگ - اَںگ سُلگ رہا تھا۔ جوانی کی تڑپ سُناتی تو سُناتی کِسکو! سُبہ اُٹھی تو گھر پر کوئی نہی تھا۔۔ پاپا شاید آج ممّی کو کھیت میں لے گیے ہوںگے۔۔ ہپھتے میں 2 دِن تو کم سے کم ایسا ہوتا ہی تھا جب پاپا ممّی کے ساتھ ہی کھیت میں جاتے تھے۔۔

اُنن دو دینو میں ممّی اِس ترہ سجدھج کر کھانا ساتھ لیکر جاتی تھی جیسے کھیت میں نہی، کہیں بُڈّھے بُدّھِیوں کی سؤندرے پرتِیوگِتا میں جا رہی ہوں۔۔ مزاک کر رہی ہُوں۔ّ۔ ممّی تو اَب تک بُدّھِ نہی ہُئی ہیں۔۔ 40 کی اُمر میں بھی وو بڑی دیدی کی ترہ رسیلی ہیں۔۔ میرا تو کھیر مُقابلا ہی کیا ہے۔ّ؟

کھیر; میں بھی کِن باتوں کو اُٹھا لیتی ہُوں۔ّ۔ ہاں تو میں بتا رہی تھی کِ اَگلے دِن سُبہ اُٹھی تو کوئی گھر پر نہی تھا۔ّ۔ کھالی گھر میں کھُد کو اَکیلی پاکر میری جاںگھوں کے بیچ سُرسُری سی مچنے لگی۔۔ مینے درواجا اَںدر سے بںد کِیا اؤر چارپائی پر آکر اَپنی جاںگھوں کو پھیلاکر سکرٹ پُوری ترہ اُپر اُٹھا لِیا۔۔

میں دیکھکر ہیرت میں پڑ گیّ۔۔ چھہوٹی سی میری یونِ کِسی بڑے پاو کی ترہ پھُول کر میری کچھی سے باہر نِکلنے کو اُتاولی ہو رہی تھی۔ّ۔ موٹی موٹی یونِ کی پتِّیاں سںترے کی پھاںکوں کی ترہ اُبھر کر کچھی کے باہر سے ہی دِکھائی دے رہی تھی۔ّ۔ اُنکے بیچ کی جھِرّی میں کچھی اِس ترہ اَںدر گھُسی ہُئی تھی جیسے یونِ کا دِل کچھی پر ہی آ گیا ہو۔ّ۔

ڈر تو کِسی بات کا تھا ہی نہی۔ّ۔ میں لیٹی اؤر نِتںبوں کو اُکساتے ہُئے کچھی کو اُتار پھیںکا اؤر واپس بیٹھکر جاںگھوں کو پھِر دُور دُور کر دِیا۔ّ۔ ہائے! اَپنی ہی یونِ کے رسیلیپان اؤر جاںگھوں تک پسر گیی چِکناہٹ کو دیکھتے ہی میں مدہوش سی ہو گیّ۔۔

مینے اَپنا ہاتھ نیچے لے جاکر اَپنی اُںگلِیوں سے یونِ کی سںترِیا پھاںکوں کو سہلا کر دیکھا۔۔ پھاںکوں پر اُگے ہُئے ہلکے ہلکے بھُورے رںگ کے چھہوٹے چھہوٹے بال اُتّیںجانا کے مارے کھڑے ہو گیے۔۔ اُںنپر ہاتھ پھیرنے سے مُجھے یونِ کے اَںدر تک گُدگُدی اؤر آنںد کا اَہساس ہو رہا تھا۔ّ۔۔ یونِ پر اُپر نیچے اُںگلِیوں سے کریڑا سی کرتی ہُئی میں بدہواس سی ہوتی جا رہی تھی۔۔ پھاںکوں کو پھیلاکر مینے اَںدر جھاںکنے کی کوشِش کی; چِکنی چِکنی لال توچا کے اَلاوا مُجھے اؤر کُچّھ دِکھائی نا دِیا۔ّ۔ پر مُجھے دیکھنا تھا۔ّ۔ّ۔۔

میں اُٹھی اؤر بیڈ پر جاکر ڈریسِںگ ٹیبل کے سامنے بیٹھ گیّ۔۔ ہاں۔۔ اَب مُجھے ٹھیک ٹھیک اَپنی جنّت کا دوار دِکھائی دے رہا تھا۔۔ گہرے لال اؤر گُلابی رںگ میں رںگا 'وو' کوئی آدھا اِںچ گہرا ایک گڈّھا سا تھا۔ّ۔

مُجھے پتا تھا کِ جب بھی میرا 'کلیان' ہوگا۔۔ یہیں سے ہوگا۔ّ۔! جہاں سے یونِ کی پھاںکیں اَلگ ہونی شُرُو ہوتی ہیں۔۔ وہاں پر ایک چھہوٹا سا دانا اُبھرا ہُآ تھا۔۔ ٹھیک میری چُوچِیوں کے دانے کی ترہ۔۔ اُتّیجنا کے مارے پاگل سی ہوکر میں اُسکو اُںگلی سے چھیڑنے لگی۔۔

ہمیشا کی ترہ وہاں سپرش کرتے ہی میری آںکھیں بںد ہونے لگی۔۔ جاںگھوں میں ہلکا ہلکا کںپن سا شُرُو ہو گیا۔ّ۔ ویسے یے سب میں پہلے بھی مہسُوس کر چُکی تھی۔۔ پر سامنے شیشے میں دیکھتے ہُئے ایسا کرنے میں اَلگ ہی روماںچ اؤر آنںد آ رہا تھا۔۔

دھیرے دھیرے میری اُںگلِیوں کی گتِ بڑھتی گیّ۔۔ اؤر میں نِڈھال ہوکر بِستیر پر پِچھے آ گِری۔ّ۔ اُںگلِیاں اَب اُسکو سہلا نہی رہی تھی۔ّ۔ بُلکی بُری ترہ سے پُوری یونِ کو ہی پھاںکوں سمیت مسل رہی تھی۔ّ۔ اَچانک میری اَجیب سی سِسکِیو سے میرے کانوں میں میٹھی سی دھُن گُوںجنے لگی اؤر نا جانے کب ایسا کرتے ہُئے میں سب کُچّھ بھُلا کر دُوسرے ہی لوک میں جا پہُںچی۔ّ۔۔

گہری ساںسیں لیتے ہُئے میں اَپنے سارے شریر کو ڈھیلا چھچوڑ باہوں کو بِستیر پر پھیلائے ہوش میں آنے ہی لگی تھی کِ درواجے پر دستک سُنکر میرے ہوش ہی اُڑ گیے۔ّ۔۔

مینے پھٹاپھٹ اُٹھتے ہُئے سکرٹ کو اَچّھِ ترہ نیچے کِیا اؤر جاکر درواجا کھول دِیا۔ّ۔۔

"کِتنی دیر سے نیچے سے آواز لگا رہا ہُوں؟ میں تو واپس جانے ہی والا تھا۔ّ۔اَچّچھا ہُآ جو اُپر آکر دیکھ لِیا۔ّ۔ " سامنے زمیںدار کا لڑکا کھڑا تھا; سُندر!

" کیا بات ہے؟ آج سکُول نہی گیی کیا؟" سُںدر نے مُجھے آںکھوں ہی آںکھوں میں ہی میرے گالوں سے لیکر گھُٹنو تک ناپ دِیا۔۔

"گھر پر کوئی نہی ہے!" مینے سِرف اِتنا ہی کہا اؤر باہر نِکل کر آ گیّ۔ّ۔

کمینا اَںدر جاکر ہی بیٹھ گیا،"تُم تو ہو نا!"

"نہی۔ّ۔ مُجھے بھی اَبھی جانا ہے۔۔ کھیت میں۔۔!" مینے باہر کھڑے کھڑے ہی بولا۔ّ۔

"اِتنے دینو میں آیا ہُوں۔۔ چاے واے تو پُوچّھ لِیا کرو۔۔ اِتنا بھی کںجُوس نہی ہونا چاہِئے۔ّ۔"

مینے مُڑکر دیکھا تو وو میرے موٹے نِتںبوں کی اؤر دیکھتے ہُئے اَپنے ہوںٹو پر جیبھ پھیر رہا تھا۔ّ۔۔

"دُودھ نہی ہے گھر میں۔ّ۔!" میں نِتںبوں کا اُبھار چچھُپانے کے لِئے جیسے ہی اُسکی اؤر پلٹی۔۔ اُسکی نزریں میرے سینے پر جم گیی

"کمال ہے۔۔ اِتنی موٹی تاجی ہو اؤر دُودھ بِلکُل نہی ہے۔۔" وہ داںت نِکال کر ہںسنے لگا۔ّ۔

آپ شاید سمجھ گیے ہوںگے کی وہ کِس 'دُودھ' کی بات کر رہا تھا۔۔ پر میں بِلکُل نہی سمجھی تھی اُس وقت۔۔ تُمہاری کسم

"کیا کہ رہے ہو؟ میرے موٹی تازی ہونے سے دُودھ ہونے یا نا ہونے کا کیا متلب"

وہ یُوںہی میری ساںسوں کے ساتھ اُپر نیچے ہو رہی میری چُوچِیو کو گھُورتا رہا،" اِتنی بچّی بھی نہی ہو تُم۔۔ سمجھ جایا کرو۔۔ جِتنی موٹی تاجی بھیںس ہوگی۔۔ اُتنا ہی تو زیادا دُودھ دیگی" اُسکی آںکھیں میرے بدن میں گڑھی جا رہی تھی۔ّ۔

ہائے رام! میری اَب سمجھ میں آیا وو کیا کہ رہا تھا۔۔ مینے پُورا زور لگاکر چیہرے پر گُسّا لانے کی کوشِش کی۔۔ پر میں اَپنے گالوں پر آئے گُلبیپن کو چھُپا نا سکی،" کیا بکواس کر رہے ہو تُم۔ّ۔؟ مُجھے جانا ہے۔۔ اَب جاّو یہاں سے۔۔!"

"اَرے۔۔ اِسمیں بُرا مان'نے والی بات کؤنسی ہے۔ّ؟ زیادا دُودھ پیتی ہوگی تبھی تو اِتنی موٹی تازی ہو۔۔ ورنا تو اَپنی دیدی کی ترہ دُبلی پتلی نا ہوتی۔ّ۔ّاؤر دُودھ ہوگا تبھی تو پیتی ہوگی۔ّ۔مینے تو سِرف اُداہرن دِیا تھا۔۔ میں تُمہے بھیںس تھوڑے ہی بول رہا تھا۔ّ۔ تُم تو کِتنی پیاری ہو۔۔ گوری چِتِّ۔ّ۔ تُمہارے جیسی تو اؤر کوئی نہی دیکھی مینے۔ّ۔ آج تک! کسم جھںڈے والے بابا کی۔ّ۔"

آکھری لائین کہتے کہتے اُسکا لہزا پُورا کامُک ہو گیا تھا۔۔ جب جب اُسنے دُودھ کا جِکر کِیا۔۔ میرے کانو کو یہی لگا کِ وو میری مدبھری چُوچِیو کی تاریف کر رہا ہے۔ّ۔۔

"ہاں! پیتی ہُوں۔۔ تُمہے کیا؟ پیتی ہُوں تبھی تو ختم ہو گیا۔۔" مینے چِڑ کر کہا۔ّ۔۔

"ایک آدھ بار ہمیں بھی پیلا دو نا!۔۔۔ ۔۔ کبھی چکھ کر دیکھنے دو۔۔ تُمہارا دُودھ۔ّ۔!"

اُسکی باتوں کے ساتھ اُسکا لہزا بھی بِلکُل اَشلیل ہو گیا تھا۔۔ کھڑے کھڑے ہی میری ٹاںگے کاںپنے لگی۔ّ۔ّ۔

"مُجھے نہی پتا۔ّ۔مینے کہا نا۔۔ مُجھے جانا ہے۔۔!" میں اؤر کُچّھ نا بول سکی اؤر نزریں جھُکائے کھڑی رہی۔۔

"نہی پتا تبھی تو بتا رہا ہُوں اَںجُو! سیکھ لو ایک بار۔۔ پہلے پہل سبھی کو سیکھنا پڑتا ہے۔ّ۔ ایک بار سیکھ لِیا تو جِںدگی بھر نہی بھُولاگی۔ّ۔" اُسکی آںکھوں میں واسنا کے لال ڈورے تیر رہے تھے۔ّ۔

میرا بھی بُرا ہال ہو چُکا تھا تب تک۔۔ پر کُچّھ بھی ہو جاتا۔۔ اُس کے نیچے تو مینے نا جانے کی کسم کھا رکھی تھی۔۔ مینے گُسّے سے کہا،"کیا ہے؟ کیا سیکھ لُوں۔۔ بکواس مت کرو!"

"اَرے۔۔ اِتنا اُکھڑ کیُوں رہی ہو بار بار۔ّ۔ میں تو آئے گیے لوگوں کی میہمان-نوازی سِکھانے کی بات کر رہا ہُوں۔۔ آخِر چاے پانی تو پُوچّھنا ہی چاہِئے نا۔۔ ایک بار سیکھ گیی تو ہمیشا یاد رکھوگی۔۔ لوگ کِتنے کھُش ہوکر واپس جاتے ہیں۔۔ ہے ہے ہے!" وا کھیںسے نِپورتا ہُآ بولا۔ّ۔ اؤر چارپائی کے سامنے پڑی میری کچھی کو اُٹھا لِیا۔ّ۔

مُجھے جھٹکا سا لگا۔۔ اُس اؤر تو میرا دھیان اَب تک گیا ہی نہی تھا۔ّ۔ مُجھے نا چاہتے ہُئے بھی اُسکے پاس اَںدر جانا پڑا،"یے مُجھے دو۔ّ۔!"

بڑی بیشرمی سے اُسنے میری گیلی کچھی کو اَپنی ناک سے لگا لِیا،"اَب ایک مِنِٹ میں کیا ہو جاّیگا۔۔ اَب بھی تو بیچاری پھرش پر ہی پڑی تھی۔ّ۔" مینے ہاتھ بڑھایا تو وو اَپنا ہاتھ پِچھے لے گیا۔۔ شاید اِس غلتپھہمی میں تھا کِ اُس'سے چھین'نے کے لِئے میں اُسکی گود میں چڑھ جاُّنگِ۔ّ۔۔

میں پاگل سی ہو گیی تھی۔۔ اُس پل مُجھے یے خیال بھی نہی آیا کی میں بول کیا رہی ہُوں۔ّ،" دو نا مُجھے۔ّ۔ مُجھے پہن'نِ ہے۔ّ۔" اؤر اَگلے ہی پل یے اَہساس ہوتے ہی کِ مینے کیا بول دِیا۔۔ مینے شرم کے مارے اَپنی آںکھیں بںد کرکے اَپنے چیہرے کو ڈھک لِیا۔ّ۔۔

"اوہ ہو ہو ہو۔ّ۔ اِسکا متلب تُم نںگی ہو۔ّ۔! زرا سوچو۔۔ کوئی تُمہے زبردستی لِٹا کر تُمہاری 'دیکھ' لے تو!"

اُسکے باد تو مُجھسے وہاں کھڑا ہی نہی رہا گیا۔۔ پلٹ کر میں نیچے بھاگ آئی اؤر گھر کے درواجے پر کھڑی ہو گیّ۔۔ میرا دِل میری اَکڑ چُکی چُوچِیو کے ساتھ تیزی سے دھک دھک کر رہا تھا۔ّ۔

کُچّھ ہی دیر میں وہ نیچے آیا اؤر میری برابر میں کھڑا ہوکر بِنا دیکھے بولا،" سکُول میں تُمہارے کرتبوں کے کافی چرچے سُنے ہیں مینے۔۔ وہاں تو بڑی پھُدکتِ ہے تُو۔ّ۔ یاد رکھنا چھورِ۔۔ تیری ماں کو بھی چودا ہے مینے۔۔ پتا ہے نا۔ّ۔؟ آج نہی تو کل۔۔ تُجھے بھی اَپنے لںڈ پر بِٹھا کر ہی رہُوںگا۔ّ۔" اؤر وو نِکل گیا۔ّ۔

ڈر اؤر اُتّیجنا کا مِشرن میرے چیہرے پر ساپھ جھلک رہا تھا۔ّ۔ مینے درواجا جھٹ سے بںد کِیا اؤر بدہواس سی بھاگتے بھاگتے اُپر آ گیّ۔ّ۔ مُجھے میری کچھی نہی مِلی۔۔ پر اُس وقت کچھی سے زیادا مُجھے کچھی والی کی پھِکر تھی۔۔ اُپر والا درواجا بںد کِیا اؤر شیشے کے سامنے بیٹھکر میں جاںگھیں پھیلاکر اَپنی یونِ کو ہاتھ سے مسلنے لگی۔ّ۔ّ۔ّ۔

اُسکے نام پر مت جانا۔ّ۔ وو کہتے ہیں نا! آںکھ کا اَںدھا اؤر نام نینسُکھ۔ّ۔ سُںدر بِلکُل ایسا ہی تھا۔۔ ایک دم کالا کلُوٹا۔۔ اؤر 6 پھیٹ سے بھی لںبا اؤر تگڑا ساںڑ! مُجھے اُس'سے گھِن تو تھی ہی۔۔ ڈر بھی بہُت لگتا تھا۔۔ مُجھے تو دیکھتے ہی وہ ایسے گھُورتا تھا جیسے اُسکی آںکھوں میں کش-رے لگا ہو اؤر مُجھکو نںگی کرکے دیکھ رہا ہو۔ّ۔ اُسکی جگہ اؤر کوئی بھی اُس سمے اُپر آیا ہوتا تو میں اُسکو پیار سے اَںدر بِٹھا کر چاے پِلاتی اؤر اَپنا اَںگ-پردرشن اَبھِیان چالُو کر دیتی۔ّ۔ پر اُس'سے تو مُجھے اِس دُنِیا میں سبسے زیادا نفرت تھی۔ّ۔

اُسکا بھی ایک کارن تھا۔۔

کریب 10 سال پہلے کی بات ہے۔۔ میں 7-8 سال کی ہی تھی۔ ممّی کوئی 30 کے کریب ہوگی اؤر وو ہرمزدا سُںدر 20 کے آس پاس۔ لںبا تو وو اُس وقت بھی اِتنا ہی تھا، پر اِتنا تگڑا نہی۔ّ۔۔

سردِیوں کی بات ہے۔ّ۔ میں اُس وقت اَپنی دادی کے پاس نیچے ہی سوتی تھی۔ّ۔ نیچے تب تک کوئی اَلگ کمرا نہی تھا۔ّ۔ 18 جے 30 کی چھت کے نیچے سِرف اُپر جانے کے لِئے جینا بنا ہُآ تھا۔ّ۔رات کو اُنسے روز راجا-رانی کی کہانِیاں سُنتی اؤر پھِر اُنکے ساتھ ہی دُبک جاتی۔ّ۔ جب بھی پاپا مار پیٹ کرتے تھے تو ممّی نیچے ہی آکر سو جاتی تھی۔۔ اُس رات بھی ممّی نے اَپنی چارپائی نیچے ہی ڈال لی تھی۔ّ۔
ہمارا درواجا کھُلتے سمے کافی آواز کرتا تھا۔ّ۔ درواجا کھُلنے کی آواز سے ہی شاید میں اُنیدی سی ہو گیی ۔۔۔

"مان بھی جا اَب۔۔ 15 مِنِٹ سے زیادا نہی لگوںگا۔ّ۔" شاید یہی آواز آئی تھی۔۔ میری نیںد کھُل گیّ۔۔ مردانا آواز کے کارن پہلے مُجھے لگا کِ پاپا ہیں۔۔ پر جیسے ہی مینے اَپنی رزائی میں سے جھاںکا; میرا بھرم ٹُوٹ گیا۔۔ نیچے اَںدھیرا تھا۔۔ پر باہر سٹریٹ لائیٹ ہونے کے کارن دھُںدھلا دھُںدھلا دِکھائی دے رہا تھا۔ّ۔

"پاپا تو اِتنے لںبے ہیں ہی نہی۔۔!" مینے مین ہی مین سوچا۔ّ۔

وو ممّی کو دیوار سے چِپکائے اُس'سے سٹکار کھڑا تھا۔۔ ممّی اَپنا مؤن وِرودھ اَپنے ہاتھوں سے اُسکو پِچھے دھکیلنے کی کوشِش کرکے جاتا رہی تھی۔ّ۔


"دیکھ چاچی۔۔ اُس دِن بھی تُونے مُجھے ایسے ہی ٹرکا دِیا تھا۔۔ میں آج بڑی اُمّید کے ساتھ آیا ہُوں۔ّ۔ آج تو تُجھے دینی ہی پڑیگی۔۔!" وو بولا۔ّ۔ّ۔

"تُم پاگل ہو گیے ہو کیا سُندر؟ یے بھی کوئی ٹائیم ہے۔ّ۔تیرا چاچا مُجھے جان سے مار دیگا۔ّ۔ّ۔ تُم جلدی سے 'وو' کام بولو جِسکے لِئے تُمہے اِس وقت آنا زرُوری تھا۔۔ اؤر جاّو یہاں سے۔ّ۔!" ممّی پھُسپھُسائی۔ّ۔

"کام بولنے کا نہی۔۔ کرنے کا ہے چاچی۔۔ اِسشہ۔۔" سِسکی سی لیکر وو واپس ممّی سے چِپک گیا۔ّ۔

اُس وقت میری سمجھ میں نہی آ رہا تھا کِ ممّی اؤر سُندر میں یے چھینا جھپٹی کیُوں ہو رہی ہے۔ّ۔میرا دِل دھڑکنے لگا۔ّ۔ پر میں ڈر کے مارے ساںس روکے سب دیکھتی اؤر سُنتی رہی۔ّ۔

"نہی۔۔ جاّو یہاں سے۔ّ۔ اَپنے ساتھ مُجھے بھی مرواّوگے۔ّ۔" ممّی کی کھُسپھُساہٹ بھی اُنکی سُریلی آواز کے کارن ساپھ سمجھ میں آ رہی تھی۔ّ۔۔

"وو لُڈرُو میرا کیا بِگاڑ لیگا۔ّ۔ تُم تو ویسے بھی مروگی اَگر آج میرا کام نہی کروایا تو۔ّ۔ میں کل اُسکو بتا دُوںگا کی مینے تُمہے باجرے والے کھیت میں اَنِل کے ساتھ پکڑا تھا۔ّ۔۔" سُںدر اَپنی گھٹِیا سی ہںسی ہںسنے لگا۔ّ۔۔

"میں۔ّ۔ میں منا تو نہی کر رہی سُںدر۔ّ۔ کر لُوںگی۔۔ پر یہاں کیسے کرُوں۔ّ۔ تیری دادی لیٹی ہُئی ہے۔ّ۔ اُٹھ گیی تو؟" ممّی نے گھِگھِیاتے ہُئے وِرودھ کرنا چھچوڑ دِیا۔ّ۔۔

"کیا بات کر رہی ہو چاچی؟ اِس بُدھِیا کو تو دِن میں بھی دِکھائی سُنائی نہی دیتا کُچّھ۔۔ اَب اَںدھیرے میں اِسکو کیا پتا لگیگا۔ّ۔" سُںدر سچ کر رہا تھا۔ّ۔۔

"پر چھہوٹی بھی تو یہیں ہے۔ّ۔ میں تیرے ہاتھ جوڑتی ہُوں۔ّ۔" ممّی گِڑگِڈائی۔ّ۔
(¨`·.·´¨) Always
`·.¸(¨`·.·´¨) Keep Loving &;
(¨`·.·´¨)¸.·´ Keep Smiling !
`·.¸.·´ -- raj sharma

User avatar
rajaarkey
Super member
Posts: 6651
Joined: 10 Oct 2014 10:09
Contact:

Re: بالی اُمر کی پیاس پارٹ-- urdu sexi stori

Post by rajaarkey » 02 Apr 2017 15:45


"یے تو بچّی ہے۔۔ اُٹھ بھی گیی تو اِسکی سمجھ میں کیا آایگا؟ ویسے بھی یے تُمہاری لاڈلی ہے۔ّ۔ بول دینا کِسی کو نہی بتاّیگی۔ّ۔ اَب دیر مت کرو۔۔ جِتنی دیر کروگی۔۔ تُمہارا ہی نُکسان ہوگا۔ّ۔ میرا تو کھڑے کھڑے ہی نِکلنے والا ہے۔ّ۔ اَگر ایک بار نِکل گیا تو آدھے پؤنے گھںٹے سے پہلے نہی چھُوتیگا۔۔ پہلے بتا رہا ہُوں۔ّ۔"

میری سمجھ میں نہی آ رہا تھا کِ یے 'نِکلنا' چھچھُوٹنا' کیا ہوتا ہے۔۔ پھِر بھی میں دِلچسپی سے اُنکی باتیں سُن رہی تھی۔ّ۔ّ۔ّ۔

"تُم پرسوں کھیت میں آ جانا۔۔ تیرے چاچا کو شہر جانا ہے۔ّ۔ میں اَکیلی ہی جاُّنگی۔۔ سمجھنے کی کوشِش کرو سُندر۔۔ میں کہیں بھاگی تو نہی جا رہی۔ّ۔ّ۔" ممّی نے پھِر اُسکو سمجھانے کی کوشِش کی۔ّ۔۔

" تُمہے میں ہی مِلا ہُوں کیا؟ چُوتِیا بنانے کے لِئے۔ّ۔ اَنِل بتا رہا تھا کِ اُسنے تُمہاری اُسکے باد بھی 2 بار ماری ہے۔ّ۔ اؤر مُجھے ہر بار ٹرکا دیتی ہو۔ّ۔ پرسوں کی پرسوں دیکھیںگے۔ّ۔۔ اَب تو میرے لِئے تو ایک ایک پل کاٹنا مُشکِل ہو رہا ہے۔۔ تُمہے نہی پتا چاچی۔۔ تُمہارے گول گول پُتّھے (نِتںب) دیکھ کر ہی جوان ہُآ ہُوں۔۔ ہمیشا سے سپنا دیکھتا تھا کِ کِسی دِن تُمہاری چِکنی جاںگھوں کو سہلاتے ہُئے تُمہاری رسیلی چُوت چاٹنے کا مؤکا مِلے۔۔ اؤر تُمہارے موٹے موٹے چُوتدوں کی کساوٹ کو مسلتا ہُآ تُمہاری گاںد میں اُںگلی ڈال کر دیکھُوں۔۔ سچ کہتا ہُوں، آج اَگر تُمنے مُجھے اَپنی مارنے سے روکا تو یا تو میں نہی رہُوںگا۔ّ۔ یا تُم نہی رہوگی۔۔ لو پاکڑو اِسّکو۔ّ۔"

اَب جاکر مُجھے سمجھ میں آیا کِ سُندر ممّی کو 'گںدی' بات کرنے کے لِئے کہ رہا ہے۔ّ۔ اُنکی ہرکتیں اِتنی ساپھ دِکھائی نہی دے رہی تھی۔ّ۔ پر یے زرُور ساپھ دِکھ رہا تھا کِ دونو آپس میں گُتّھم گُتّھا ہیں۔ّ۔ میں آںکھیں فاڈے زیادا سے زیادا دیکھنے کی کوشِش کرتی رہی۔ّ۔۔

"یے تو بہُت بڑا ہے۔ّ۔ مینے تو آج تک کِسی کا ایسا نہی دیکھا۔ّ۔۔" ممّی نے کہا۔ّ۔۔

"بڑا ہے چاچی تبھی تو تُمہے زیادا مزا آایگا۔ّ۔ چِںتا نا کرو۔۔ میں اِس ترہ کرُوںگا کِ تُمہے ساری اُمر یاد رہیگا۔ّ۔ ویسے چاچا کا کِتنا ہے؟" سُندر نے کھُش ہوکر کہا۔۔ وہ پلٹ کر کھُد دیوار سے لگ گیا تھا اؤر ممّی کی کمر میری ترپھ کر دی تھی۔ّ۔ّمّمی نے شاید اُسکا کہنا مان لِیا تھا۔ّ۔۔

"دھیرے بولو۔ّ۔ّ۔۔" ممّی اُسکے آگے گھُٹنو کے بل بیٹھ گیّ۔ّ۔ اؤر کُچّھ دیر باد بولی،" اُنکا تو پُورا کھڑا ہونے پر بھی اِس'سے آدھا رہتا ہے۔۔ سچ بتاُّ؟ اُنکا آج تک میری چُوت کے اَںدر نہی جھاڑا۔ّ۔" ممّی بھی اُسکی ترہ گںدی گںدی باتیں کرنے لگی۔۔ میں ہیران تھی۔۔ پر مُجھے مزا آ رہا تھا۔۔ میں مزا لیتی رہی۔ّ۔ّ۔

"واہ چاچی۔ّ۔ پھِر یے گوری چِکنی دو پھُولجھڑِیاں اؤر وو لٹتُو کہاں سے پیدا کر دِیا۔۔" سُںدر نے پُوچّھا۔ّ۔ پر میری سمجھ میں کُچّھ نہی آیا تھا۔ّ۔۔

"سب تُم جیسوں کی دیا ہے۔ّ۔ میری مجبُوری تھی۔ّ۔میں کیا یُوںہی بیوپھا ہو گیّ۔ّ۔؟" کہنے کے باد ممّی نے کُچّھ ایسا کِیا کی سُندر اُچّھل پڑا۔ّ۔۔

"آآّاَہّ۔ّ۔ یے کیا کر رہی ہو چاچی۔ّ۔ مارنے کا اِرادا ہے کیا؟" سُںدر ہلکا سا تیج بولا۔ّ۔ّ۔

"کیا کرُوں میں؟ مُںہ میں تو آ نہی رہا۔ّ۔ باہر سے ہی کھا لُوں تھوڑا سا!" اُسکے ساتھ ہی ممّی بھدّے سے تریکے سے ہںسی۔ّ۔ّ۔

"اَرے تو اِتنا تیج 'بُڑکا' (بیتے) کیُوں بھر رہی ہے۔ّ۔ جیبھ نِکال کر نیچے سے اُپر تک چاٹ لے نا۔ّ۔!" سُندر نے کہا۔ّ۔ّ۔

"ٹھیک ہے۔۔ پر اَب نِکلنے مت دینا۔ّ۔ مُجھے تیّار کرکے کہیں بھاگ جاّو۔ّ۔" ممّی نے سِر اُپر اُٹھاکر کہا اؤر پھِر اُسکی جاںگھوں کی ترپھ مُںہ گھُما لِیا۔ّ۔۔

مُجھے آدھی اَدھُوری باتیں سمجھ آ رہی تھی۔ّ۔ پر اُنمیں بھی مزا اِتنا آ رہا تھا کِ مینے اَپنا ہاتھ اَپنی جاںگھوں کے بیچ دبا لِیا۔ّ۔۔ اؤر اَپنی جاںگھوں کو ایک دُوسری سے رگڑنے لگی۔ّ۔ اُس وقت مُجھے نہی پتا تھا کِ مُجھے یے کیا ہو رہا ہے۔ّ۔ّ۔ّ۔

اَچانک ہمارے گھر کے آگے سے ایک ٹریکٹر گُجرا۔ّ۔ اُسکی روشنی کُچّھ پل کے لِئے گھر میں پھیل گیّ۔۔ ممّی ڈر کر ایک دم اَلگ ہٹ گیّ۔۔ پر مینے جو کُچّھ دیکھا، میرا روم روم روماںچِت ہو گیا۔ّ۔

سُںدر کا لِںگ گدھے کے 'سُوںڈ' کی ترہ بھاری بھرکم، بھیانک اؤر اُسکے چیہرے کے رںگ سے بھی زیادا کالا کلُوٹا تھا۔ّ۔وو ساںپ کی ترہ سامنے کی اؤر اَپنا پھن سا پھیلائے سیدھا کھڑا تھا۔ّ۔ لِںگ کا آگے کا ہِسّا ٹماٹر کی ترہ اَلگ ہی دِکھ رہا تھا۔ ایک پل کو تو میں ڈر ہی گیی تھی۔۔ مینے اُس'سے پہلے کائی بار چھہوٹُو کی 'لُلّی' دیکھی تھی۔۔ پر وو تو مُشکِل سے 2 اِںچ کی تھی۔ّ۔ واپس اَںدھیرا ہونے کے باد بھی اُسکا آکر میری آںکھوں کے سامنے لہراتا رہا۔ّ۔

"کیا ہُآ؟ ہٹ کیُوں گیی چاچی۔۔ کِتنا مزا آ رہا ہے۔۔ تُم تو کمال کا چاٹ'تی ہو۔ّ۔!" سُندر نے ممّی کے بالوں کو پکڑ کر اَپنی اؤر کھیںچ لِیا۔ّ۔۔

"کُچّھ نہی۔۔ ایک مِنِٹ۔ّ۔۔ لائیٹ ऑن کر لُوں کیا؟ بِنا دیکھے مُجھے اُتنا مزا نہی آ رہا۔ّ۔ " ممّی نے کھڑا ہوکر کہا۔ّ۔

"مُجھے تو کوئی دِکّت نہی ہے۔ّ۔ تُم اَپنی دیکھ لو چاچی۔ّ۔!" سنڈر نے کہا۔ّ۔۔

"ایک مِنِٹ۔ّ۔!" کہکر ممّی میری ترپھ آئی۔۔ مینے گھبراکر اَپنی آںکھیں بںد کر لی۔ّ۔ ممّی نے میرے پاس آکر جھُک کر دیکھا اؤر مُجھے تھپکی سی دیکر رزائی میرے مُںہ پر ڈال دی۔ّ۔

کُچّھ ہی دیر باد رزائی میں سے چھن چھن کر پرکاش مُجھ تک پہُںچنے لگا۔ّ۔ میں بیچین سی ہو گیّ۔۔ میرے کانو میں 'سپڈ سپڈ' اؤر سُندر کی ہلکی ہلکی سِسکِیاں سُنائی دے رہی تھی۔ّ۔ مُںہ ڈھک کر سونے کی تو مُجھے ایسے بھی آدت نہی تھی۔ّ۔ پھِر مُجھے سارا 'تماشا' دیکھنے کی للک بھی اُٹھ رہی تھی۔ّ۔

کُچّھ ہی دیر باد مینے بِستیر اؤر رزائی کے بیچ تھوڑی سی جگہ بنائی اؤر سامنے دیکھنے لگی۔ّ۔ میرے اَچرج کا کوئی ٹھِکانا نا رہا۔۔ "یے ممّی کیا کر رہی ہیں؟" میری سمجھ میں نہی آیا۔ّ۔۔

گھُٹنو کے بل بیٹھی ہُئی ممّی نے اَپنے ہاتھ میں پکڑ کر سُندر کا بھیانک لِںگ اُپر اُٹھا رکھا تھا اؤر سُندر کے لِںگ کے نیچے لٹک رہے موٹے موٹے گولوں (ٹیسٹیس)کو باری باری سے اَپنے مُںہ میں لیکر چُوس رہی تھی۔ّ۔

میری گھِگھی بںدھتی جا رہی تھی۔ّ۔ سب کُچّھ میرے لِئے اَوِشوسنیے سپنے جیسا تھا۔۔ میں تو اَپنی پلکیں تک جھپکنا بھُول چُکی تھی۔ّ۔ّ۔

سُندر کھڑا کھڑا ممّی کا سِر پکڑیں سِسک رہا تھا۔۔ اؤر ممّی بار بار اُپر دیکھ کر مُشکُرا رہی تھی۔ّ۔ سُندر کی آںکھیں پُوری ترہ بںد تھی۔ّ۔ اِسیلِئے مینے رزائی کو تھوڈا سا اؤر اُپر اُٹھا لِیا۔ّ۔۔

کُچّھ دیر باد ممّی نے گولوں کو چھچوڑ کر اَپنی پُوری جیبھ باہر نِکالی اؤر سُندر کے لِںگ کو نیچے سے شُرُو کرکے اُپر تک چاٹ لِیا۔۔ مانو وہ کوئی آئیسکریم ہو۔ّ۔۔

"اوہُواُو۔ّ۔ اِشہ۔ّ۔ میرا نِکل جاّیگا۔ّ۔!" سُںدر کی ٹاںگیں کاںپ اُٹھی۔ّ۔ پر ممّی بار بار اُپر نیچے نیچے اُپر چاٹ-تی رہی۔۔ سُندر کا پُورا لِںگ ممّی کے تھُوک سے گیلا ہوکر چمکنے لگا تھا۔۔

"تُمہارے پاس کِتنا ٹائیم ہے؟" ممّی نے لِںگ کو ہاتھ سے سہلاتے ہُئے پُوچّھا۔ّ۔۔

"میرے پاس تو پُوری رات ہے چاچی۔ّ۔ کیا اِرادا ہے؟" سُندر نے ساںس بھر کر کہا۔ّ۔

"تو نِکل جانے دو۔ّ۔" ممّی نے کہا اؤر لِںگ کے سُوپدے پر مُںہ لگا کر اَپنے ہاتھ کو لِںگ پر۔ّ۔تیزی سے آگے پِچھے کرنے لگی۔ّ۔

اَچانک سُندر نے اَپنے گھُٹنو کو تھوڑا سا موڑا اؤر دیوار سے سٹکار ممّی کے بالوں کو کھیںچتے ہُئے لِںگ کو اُسکے مُںہ میں تھُوسنے کی کوشِش کرنے لگا۔ّ۔ 'ٹماٹر' تو ممّی کے مُںہ میں گھُس بھی گیا تھا۔۔ پر شاید ممّی کا دم گھُٹنے لگا اؤر اُنہونے کِسی ترہ اُسکو نِکال دِیا۔ّ۔

سُںدر کا لِںگ ممّی کے چیہرے پر گاڑھے ویرے کی پِچکارِیاں سی چھچوڑ رہا تھا۔۔ ۔۔ ممّی نے واپس سُوپدے کے آگے مُںہ کھولا اؤر سُندر کے رس کو گٹاکنے لگی۔ّ۔ جب کھیل ختم ہو گیا تو ممّی نے ہںستے ہُئے کہا،" سارا چیہرا کھراب کر دِیا۔۔"

"میں تو اَںدر ہی چھچوڑنا چاہتا تھا چاچی۔ّ۔ تُمنے ہی مُںہ ہٹا لِیا۔۔" سُندر کے چیہرے سے سنتُستِ جھلک رہی تھی۔ّ۔۔

"کمال کا لںڈ ہے تُمہارا۔ّ۔ مُجھے پہلے پتا ہوتا تو میں کبھی تُمہے نا تڑپتِ۔ّ۔" ممّی نے سِرف اِتنا ہی کہا اؤر سُںدر کی شرٹ سے اَپنے چیہرے کو ساپھ کرنے لگی۔ّ۔ّ۔

مُجھے تو تب تک اِتنا ہی پتا تھا کِ 'لُلّی' مُوتنے کے کام آتی ہے۔ّ۔ آج پہلی بار پتا چلا کِ 'یے' اؤر کُچّھ بھی چھچوڑتا ہے۔۔ جو بہُت میٹھا ہوتا ہوگا۔ّ۔ تبھی تو ممّی چٹکھارے لے لیکر اُسکو باد میں بھی چاٹ'تی رہی۔ّ۔

"اَب میری باری ہے۔ّ۔ کپڑے نِکال دو۔ّ۔" سُںدر نے ممّی کو کھڑا کرکے اُنکے نِتںب اَپنے ہاتھوں میں پکڑ لِئے۔ّ۔۔

"تُم پاگل ہو کیا؟ پرسوں کو میں سارے نِکال دُوںگی۔ّ۔ آج سِرف سلوار نیچے کرکے 'چود' لو۔ّ۔" ممّی نے ناڈا ڈھیلا کرتے ہُئے کہا۔ّ۔

میرا اَشلیل شبدکوش اُنکی باتوں کے کارن بڑھتا ہی جا رہا تھا۔ّ۔

"مین تو کر رہا ہے چاچی کِ تُمہے اَبھی نگی کرکے کھا جاُّ! پر اَپنا وادا یاد رکھنا۔ّ۔ پرسوں کھیت والا۔ّ۔" سُندر نے کہا اؤر ممّی کو جھُکانے لگا۔۔ پر ممّی تو جانتی تھی۔ّ۔ ہلکا سا اِشارا مِلتے ہی ممّی نے اُلٹی ہوکر جھُکتے ہُئے اَپنی کوہانِیا پھرش پر ٹیکا لی اؤر گھُٹنو کے بل ہوکر جاںگھوں کو کھولتے ہُئے اَپنے نِتںبوں کو اُپر اُٹھا لِیا۔ّ۔











(¨`·.·´¨) Always
`·.¸(¨`·.·´¨) Keep Loving &;
(¨`·.·´¨)¸.·´ Keep Smiling !
`·.¸.·´ -- raj sharma

Post Reply

Who is online

Users browsing this forum: No registered users and 6 guests