گھمسان ​​چدائی

User avatar
rajaarkey
Super member
Posts: 6832
Joined: 10 Oct 2014 10:09
Contact:

Re: گھمسان ​​چدائی

Post by rajaarkey » 02 Apr 2017 19:40

پرگتِ رُک گئی اؤر اُنکے لںڈ کو پُورا اَندر رکھتے ہُئے اُوپر ہی بیٹھی رہی۔ اَب ماسٹرجی نے ایک بڑی مجیدار بات کی۔ اُنہوںنے پرگتِ کو بِنا لںڈ باہر نِکالے لںڈ کی دھُری پر گھُومنے کو کہا۔ پرگتِ کو سمجھ نہیں آیا کِ کیا کرنا ہے، تو ماسٹرجی نے اُسکا بایاں پاںو تھوڑی اؤر بائیں ترپھ سرکایا اؤر اُسکے داہِنے پاںو کو پیٹ کے اُوپر سے لاتے ہُئے باّیں پاںو کے کریب رکھ دِیا۔ ایسا کرنے سے پرگتِ لںڈ پر بیٹھی بیٹھی ایک چؤتھائی بائیں اور گھُوم گئی۔ اَب اُنہوںنے پرگتِ کو ایک دو بار اُٹھٹھک-بیٹھک لگانے کو کہا جِسّے لںڈ شِتھِل ن ہو جایے اؤر ایک بار پھِر اُسکو بائیں اور پاںو سرکاتے ہُئے لںڈ کی دھُری پر گھُومنے کو کہا۔ پرگتِ نے اَپنے بایاں پاںو دھیان سے ماسٹرجی کی بائیں جاںگھ کی باّیں اور رکھ دِیا اؤر اَپنا داہِنا پاںو اُنکی داہِنے جاںگھ کے داہِنی اور۔ اِس اَوستھا میں اُسکی پیٹھ ماسٹرجی کی ترپھ ہو گئی اؤر وہ اُلٹی گھُڑسواری کرنے لگی۔ ماسٹرجی نے اُسکی کمر پکڑ رکھی تھی اؤر وے اُسکی اُٹھٹھک-بیٹھک سے تال مِلا کر اَپنی کمر اُوپر نیچے کر تھے۔ اِس ترہ دونوں ہی چُدائی میں میں لگ گئے۔

پرگتِ کی چُوت کو اِس آسن میں ماسٹرجی کا لںڈ ایک نئی دِشا میں سںپرک کر رہا تھا۔ جِس جگہ پر سُپاڑا اَب دباو ڈال رہا تھا وہاں پہلے نہیں ڈال رہا تھا۔ پرگتِ کے لِئے یہ ایک نئی اَنُبھُوتِ تھی۔ ماسٹرجی کو بھی اِس آسن میں جیادا گھرشن لگ رہی تھی۔ پرگتِ کی چُوت اِس نئے آبھاس کے کارن اؤر بھیگی ہو گئی اؤر لںڈ کا یاتایات آسان ہو گیا۔ماسٹرجی اَب اُٹھکر پرگتِ کے پیچھے بیٹھ گئے اؤر اَپنی ٹاںگیں موڑ کر پیچھے کر لیں۔ لںڈ کو باہر نِکالے بِنا پرگتِ کو آگے کی اور دھکیل دِیا اؤر اُسے ہاتھوں اؤر گھُٹنے کے بل کُتِیا آسن میں پہُںچا دِیا۔ ماسٹرجی کھُد گھُٹنوں کے بل ہو گئے اؤر کوئی وِرام دِئے بِنا پیچھے سے چودنا جاری رکھا۔

ماسٹرجی نے پرگتِ کی کمر پکڑ رکھی تھی اؤر آگے کی اور دھکّا مارتے وقت اُسکی کمر کو پیچھے کی ترپھ کھیںچ لیتے تھے۔ جِسّے لںڈ بہُت گہرائی تک اَندر چلا جاتا۔ پیچھے آتے وقت لںڈ کو لگبھگ پُورا باہر آنے دیتے اؤر پھِر پُورے جور اؤر جوش کے ساتھ پُورا اَندر گھُسا دیتے۔ جب دونوں کے بدن زور سے ٹکراتے تو ایک تالی جیسی آواز ہوتی۔ دونوں کو یہ آواز اَچّھی لگ رہی تھی۔ اِس آواز کو کایم رکھنے کے لِئے دونوں زور زور سے لے-تال میں ایک دُوسرے کے برکھِلاپھ وار کر رہے تھے۔ ایک تھک جاتا تو دُوسرا چالُو ہو جاتا۔

تھپ تھپ تھپ کی آواز سے کمرا گُوںجنے لگا اؤر اِس آواز میں پرگتِ کے کرہانے کی اؤر ماسٹرجی کے چِلّانے کی آواجیں بھی شامِل ہو گئیں۔ ماسٹرجی کو بہُت مزا آ رہا تھا۔ آم تؤر پر تو اِتنی کسی ہُئی چُوت کو چودنے میں ماسٹرجی 4-5 مِنٹ سے جیادا نہیں لگا پاتے تھے، پر آج کیوںکِ وے دو بار پہلے ہی ویر-گتِ کو پیارے ہو چُکے تھے، اُنکا لںڈ وِسپھوٹ کے نجدیک نہیں تھا۔ ایک کسی ہُئی چُوت کا گھرشن اُسے اُتّیجِت ہالت میں رکھنے میں کامیاب ہو رہا تھا۔ نتیجا یہ تھا کِ ماسٹرجی کریب آدھے گھںٹے سے پرگتِ کو چود رہے تھے اؤر لِںگ مہاراج اَپنی ایںٹھ چھوڑ ہی نہیں رہے تھے۔

اُنکا لںڈ نا ہی شِتھِل ہو رہا تھا اؤر نا ہی پھٹ رہا تھا، بس ایک پِسٹن کی ترہ پرگتِ کے چُوت رُوپی سِلیںڈر میں ایک سٹیم اِںجن کی ترہ یاتایات کر رہا تھا۔ پرگتِ کی اُتّیجنا کا سیلاب پھُوٹنے والا ہو رہا تھا۔ ماسٹرجی اُسکی مٹر کے پاس اُںگلی جو گھُمانے لگے تھے۔ اُسکی آواجیں اَسبھے ہوتی جا رہیں تھیں اؤر ماسٹرجی کو زور سے چودنے کے لِئے پریرِت کر رہیں تھیں۔ آکھِر پرگتِ کا باںدھ ٹُوٹ ہی گیا اؤر وہ کںپکںپانے لگی، اُسنے ماسٹرجی کا ہاتھ اَپنی مٹر سے دُور ہٹا دِیا اؤر ماسٹرجی کے چودنے کو بھی وِرام دینا پڑا۔ وہ اَنِیںترِت ترہ سے ہِلنے لگی تھے اؤر اُسکا جِسم کا ہر ہِسّا سںویدنا سے اوت پروت ہو گیا تھا۔ کہیں بھی سپرش کرنے سے اُسے اَتیدھِک سںویدنا کا اَہساس ہوتا۔ ماسٹرجی نے اُسکی ہالت کا آدر کرتے ہُئے لںڈ باہر نِکال لِیا اؤر ایک ترپھ بیٹھ کر اُسکا ہاتھ تھام لِیا۔ تھوڑی دیر میں پرگتِ ہوشوہواس میں آ گئی۔

اُسکو پہلی بار لںڈ کے گھرشن سے چرموتکرش کی پراپتِ ہُئی تھی جو بہُت کم لڑکِیوں کو نسیب ہوتی ہے۔ آم تؤر پر مرد جلدی ہی پراکاشٹھا پر پہُںچ جاتا ہے اؤر ستری اَدھُوری پیاس کے ساتھ رہ جاتی ہے۔ کُچھ لوگ تو لڑکی کو باد میں اُںگلی سے چرم آنںد کا سواد چکھا دیتے ہیں پر کئی سوارتھی آدمی ایسا نہیں کرتے۔ ایسے لوگوں کے ساتھ لڑکِیوں کو جیادا مزا نہیں آتا اؤر مؤکا پانے پر وے اُنہیں چھوڑ کر کوئی نِسوارتھی آدمی کو ڈھُوںڈھ لیتی ہیں۔ آدمِیوں کو چاہِئے کِ اَپنا مزا لُوٹنے کے باد یکین کریں کِ لڑکی بھی نِہال ہُئی ہے یا نہیں۔ اَگر نہیں، تو اُسے ہاتھ سے میتھُن کرکے چرم سیما تک لے جانا چاہِئے۔

جب تک پرگتِ ہوش میں آئی، لںڈ جناب کُچھ نتمستک ہو گئے تھے۔ پرگتِ نے لںڈ کو پھِر سے سُلگانے کے لِئے اَپنے مُںہ کا پریوگ کِیا اؤر جیبھ کے کُشل اِستیمال سے اُسے شیگھر ہی اُجاگر کر دِیا۔ پرگتِ لںڈ میں شکتِ پھُوںک کر ماسٹرجی کی ترپھ دیکھنے لگی کِ اُنہیں کؤن سا آسن چاہِئے۔ ماسٹرجی نے نِرنایک راُّںڈ کے لِئے سبسے آرامدیہ آسن چُنا اؤر پرگتِ کو پیٹھ کے بل لیٹنے کا آدیش دِیا اؤر سویں اُسکے اُوپر دںڈ پیلنے کے لِئے آ گئے۔ اُنہوںنے نِرنے کِیا کِ وے اِسی آسن میں اُسے تب تک چودتے رہیںگے جب تک اَپنے پھوّارے پر کابُو رہتا ہے۔ اَب وے آسن نہیں بدلیںگے۔

اِس نِشچے کے ساتھ وے سرل سوبھاو سے پرگتِ کو چودنے لگے۔ ہالاںکِ اُنکی گتِ دھیمی تھی پر وار گہرا تھا۔ ہر بار پُورا اَندر باہر کر رہے تھے۔ ہر آگے کے سٹروک میں پرگتِ کے کِسی ن کِسی اَںگ کو چُوم رہے تھے۔ پرگتِ کو اِس ترہ کا پیار بہُت اَچّھا لگ رہا تھا اؤر وہ آتموِبھور ہو رہی تھی۔ ماسٹرجی لگے رہے جیسے ایک لمبی ریس کا گھوڑا ہو۔ پرگتِ کو اُنکا لگاتار پرہار پھِر سے اُتّیجنا کی اور لے جا رہا تھا اؤر وہ اَپرتیاشِت رُوپ سے اُنکا ساتھ دینے لگی۔ ماسٹرجی کو اِس سہیوگ سے پروتساہن مِلا اؤر اُنہوںنے اَپنے وار لمبے رکھتے ہُئے اُنکی گتِ تیز کی۔

تیز گتِ سے چودنے میں مزا تو بہُت آتا ہے پر جلدی سکھلن کا اَںدیشا بھی بڑھ جاتا ہے۔ ماسٹرجی اِس چُدائی کو لمبا کھیںچنا چاہتے تھے سو اُنہوںنے اَپنے آپ کو آگے کرتے ہُئے اَپنا سینا پرگتِ کی چھاتی پر رکھ دِیا اؤر اَپنی ٹاںگیں سیدھی کرتے ہُئے اَپنا پیٹ بھی پرگتِ کے پیٹ سے سٹا دِیا۔ اُنہوںنے اَپنا وزن اَپنے گھُٹنوں اؤر کوہنِیوں پر لے رکھا تھا۔ اَب اُنکا لںڈ چودتے سمے آگے-پیچھے ن ہوتے ہُئے اُوپر-نیچے ہو رہا تھا۔ اِس آسن کو تھوڑا بدلتے ہُئے، ماسٹرجی نے اَپنے آپ کو کریب 3-4 اِںچ پرگتِ کے سِر کی ترپھ سرکایا۔ ایسا کرنے سے ماسٹرجی کا لںڈ چُوت کے مُکھ سے 1-2 اِںچ آگے ہو گیا۔ اِس ستھِتِ میں چُدائی سے لںڈ ایک کیلے کی ترہ اُوپر-نیچے کی چال چل رہا تھا اؤر یونِ-مُکھ کے اُوپری ہِسّے پر گھرشن کر رہا تھا۔ پرگتِ کا یونِ مٹر اُس جگہ کے نزدیک تھا اؤر لںڈ کا آواگمن مہسُوس کر رہا تھا۔

کہتے ہیں یونِ-مٹر ستری کے گُپتاںگوں کا سبسے مرم اؤر سںویدنشیل اَںگ ہوتا ہے۔ اِسکے زرا سے سپرش سے اُسمیں کام واسنا کا پُرزور پرواہ ہونے لگتا ہے۔ یہ اِتنا مارمِک ہوتا ہے کِ اِسے سیدھا نہیں چھُونا چاہِئے بلکِ اِسکے آس پاس کے اِلاکے کو سہلانا چاہِئے۔ سیدھا چھُونا لڑکی کے لِئے اَسہاے ہو سکتا ہے۔ پر اُسکے آس پاس کے سہلانے سے لڑکی کو اَسیم سُکھ مِلتا ہے۔

ماسٹرجی نے اَپنے آسن میں چھوٹا سا پرِورتن اِسیلِیے کِیا تھا جِسّے لںڈ کا یونِ پرویش اُوپر-نیچے کی دِشا میں ہو اؤر اُنکے لںڈ کا مُوٹھ یونِ-مٹر کے چھور یا کِنارے سے سںپرک کرے۔ کہتے ہیں سمبھوگ کے دؤران اُںگلی سے اِس مٹر دانے کے آس پاس سہلانے سے لڑکی کو اَتیںت خُشی مِلتی ہے۔ پر اَگر یہ کام اُںگلی کے بجاے لںڈ سے کِیا جایے تو لڑکی کی خُشی کا کوئی ٹھِکانا نہیں ہوتا۔ لںڈ سے مٹر کا سںپرک بنانے کے لِئے ماسٹرجی دوارا لِیا گیا آسن ایکدم اُپیُکت تھا۔

اِس اُپیُکت آسن کا لابھ اُنہیں مِل گیا کیوںکِ جیسے ہی اُنہوںنے چُدائی شُرُو کی اؤر اُنکا مُوٹھ مٹر کو رِجھانے لگا، پرگتِ میں کامُکتا نے اُوںچی چھلاںگ لگائی ! اُسکے اَںگ-پرتیںگ میں اُورجا آ گئی اؤر وہ پُوری ترہ جاگرت ہو گئی۔ وہ اَپنے آپ کو ہِلا ڈُلا کر یونِ مٹر کو لںڈ گھرشن کے اؤر پاس لانے کا پریتن کرنے لگی۔ جب مٹر سے مُوٹھ چھُل جاتا تو ایک سُکھ کی چیتکار نِکل جاتی اؤر یونِ میں وِدیُتیکرن ہو جاتا۔ پرگتِ اِس نئے اَنُبھو سے آنںدِت تھی اؤر اُسکا روم روم سمبھوگ سے پربھاوِت تھا۔ وہ اُچک اُچک کر سمبھوگ میں سہیوگ کر رہی تھی اؤر اُوپر اُٹھ اُٹھ کر ماسٹرجی کے ماتھے کو چُوم رہی تھی۔ ایسا کرنے سے اُسکے ستن ماسٹرجی کے چیہرے کو چھیڑ رہے تھے۔ ماسٹرجی بھی مؤکا مِلنے پر اُسکی چُوچِیاں مُںہ میں لے لیتے تھے۔

پرگتِ کے اُنماد کو دیکھ کر ماسٹرجی کے بھیتر وِسپھوٹ کے پراتھمِک سںکیت اُپجنے لگے۔ ماسٹرجی اَب اَسمںجس میں پڑ گئے۔ وِسپھوٹ کے سںکیتوں کا دھیان کرکے چُدائی میں ڈھیل دیں جِسّے اؤر دیر تک سمبھوگ کر سکیں یا پھِر اِن اُپجتے سںکیتوں کو نزرںداز کرکے چُدائی جاری رکھیں اؤر چرموتکرش کی پراپتِ کریں۔ وے دُوِدھا میں تھے کیوںکِ اُنکا لںڈ نِیںترن میں تھا اؤر وے سمبھوگ کی اَودھِ اَپنی مرجی سے تے کر سکتے تھے۔ آم تؤر پر اِس ترہ کا نِرنے نہیں لینا پڑتا کیوںکِ لںڈ اِتنی دیر تک سںیم میں نہیں رہتا۔ اَسمںجس دُور کرنے کے لِئے اُنہوںنے پرگتِ کی نیّت جانّی چاہی اؤر اُسکی ترپھ دیکھا۔

پرگتِ تو اَپنی دُنِیا میں کھوئی ہُئی تھی۔ آںکھیں مُوںدی ہُئی، ساںسیں تیز، ستن اُبھرے ہُئے اؤر چُوچِیاں تنی ہُئیں وہ آتموِبھور سی کِسی اؤر دُنِیا میں تھی۔ یدا کدا اُسکے گربھ سے اَسیم آنںد کی چیتکار نِکل رہی تھی۔ اُسکا بدن ماسٹرجی کی چُدائی کی لے میں اُٹھ-بیٹھ رہا تھا۔ وہ سوپنلوک میں وِچر رہی تھی۔ ماسٹرجی نے ایسے میں اُسے جاگرت کرنا اُچِت نہیں سمجھا اؤر سمبھوگ سماپن کا نِرنے لِیا جِسّے جب وے چرم بِںدُ پر پہُںچیں اُنکی پرگتِ بھی اُدھر ہی ہو۔

ماسٹرجی نے اَپنے آپکو کام واسنا کی پراکاشٹھا تک پہُںچانے کا بیڑا اُٹھایا۔ سمبھوگ میں یہ سبسے آسان کارے ہوتا ہے۔ کوئی بھی آدمی کلائیمیکس تک آسانی سے پہُںچ جاتا ہے۔ مردانگی تو اِسے وِلںبِت کرنے میں ہوتی ہے !!!

ماسٹرجی کو اِس آسان کام کو پُورا کرنے میں کوئی کٹھِنائی نہیں ہُئی اؤر وے شیگھر ہی ویرے-پتن کے کگار پر آ گئے۔ اُنکے شریر کا ہال بھی اَب پرگتِ کے بدن سا ہونے لگا۔ ماںس-پیشِیاں جکڑنے لگیں، ساںسیں تیز اؤر مُںہ سے اُوہ آہ کی آواجیں نِکلنے لگیں۔ جب اُنہیں سکھلن بِلکُل نِکٹ لگنے لگا تو ایک آخری بار اُنہوںنے اَپنا بھالا یونِ سے پُورا باہر نِکالا، ایک-دو کشن باہر رکھا اؤر پھِر پُورے زور سے پرگتِ کی بںد ہوتی گُپھا میں مُوٹھ تک گھوںپ دِیا۔ اُنکے بدن کی گہرائیّوں سے ایک مادک چِںگھاڑ نِکلی اؤر وے ایک نِرجیو شو کی ترہ پرگتِ کے شریر پر لُڑھک گئے۔ اُنکا چیہرا پرگتِ کے ستنوں کو تکِیا بنا چُکا تھا اؤر اُنکا لںڈ پرگتِ کے گربھ میں ویرے-پرپات چھوڑ رہا تھا۔ ویرے پرپات کے جھٹکے ماسٹرجی کے شریر کو جھںجھوڑ رہے تھے۔

ہر لڑکی کو مرد کا سکھلن ترپتِ پردان کرتا ہے۔ ایک تو اِسّے اُسکے گربھ میں سرجن کی کرِیا شُرُو ہوتی ہے اؤر دُوسرے، کُچھ دیر کے لِئے ہی سہی، مردانگی کا پتن ہوتے دیکھتی ہے۔ وہ کیسا نِسّہاے اؤر کمزور ہو جاتا ہے !! پرگتِ کرتجنتا پُورن ہاتھوں سے ماسٹرجی کے سِر اؤر پیٹھ پر ہاتھ پھیر رہی تھی۔ اُسنے اَپنی ٹاںگیں اُوپر اُٹھا لیں تھیں جِسّے ویرے باہر ن جائے اؤر اُسکی چُوتچُوت نے لںڈ کو جکڑ کر رکھا تھا اؤر اُسکے ویرے کی آخری بُوںد اَپنے اَندر نِچوڑ رہی تھی۔ جب لںڈ میں دینے لایک کُچھ نہیں بچا تو لالچی چُوت نے اَپنی پکڑ ڈھیلی کی اؤر نِرجیو لِںگ کو باہر نِکال دِیا !! ماسٹرجی مُورچھِت سے پڑے ہُئے تھے۔ لںڈ کے نِشکاسِت ہونے سے اُنہیں ہوش آیا اؤر وے ممّوں کا رس پان کرنے لگے۔ دھنیواد کے رُوپ میں اُنہوںنے پرگتِ کے مُںہ کو چُوم لِیا اؤر اُسکے بدن کو سہلانے لگے۔

وے سمبھوگ اُپراںت سُکھ کا سیون کر ہی رہے تھے کِ اَچانک دروازے کی گھںٹی نے اُنکی شاںتِ بھںگ کر دی۔ گھںٹی ایسے بج رہی تھی مانو بجانے والا کرودھ میں ہو۔ پرگتِ اؤر ماسٹرجی جھٹکے سے اُٹھ گئے۔ چِںتا اؤر گھبراہٹ سے دونوں ایک دُوسرے کو دیکھنے لگے۔ پھِر پرگتِ اَپنے کپڑے اُٹھاکر گُسلکھانے کی ترپھ بھاگ گئی اؤر ماسٹرجی جلدی جلدی کپڑے پہن کر دروازے پر آیے دُشمن کا سامنا کرنے چل پڑے۔

دروازے پر اَںجلِ اؤر اُسکے پِتاجی کو دیکھ کر ماسٹرجی کے ہوش اُڑ گئے۔

" پرگتِ کو کیا پڑھا رہے ہو ؟ " پِتاجی نے گُسّے میں پُوچھا۔

" جی، کیا ہو گیا ؟ " ماسٹرجی نے سوال کا جواب سوال سے دیتے ہُئے اَپنے آپ کو سںبھالا۔

" پرگتِ کہاں ہے ؟ "

" جی، اَندر ہے !"

" اَندر کیا کر رہی ہے ؟ "

" جی پڑھنے آئی تھی !"

" اُسکی پڑھائی ہو گئی۔ اُسے بُلاّو !" کہتے ہُئے پِتاجی نے پرگتِ کو آواز دی۔

پرگتِ بھیگی بِلّی کی بھاںتِ آئی اؤر نزریں جھُکائے ماسٹرجی کے پاس آ کر کھڑی ہو گئی۔

" گھر چلو !" پِتاجی نے آدیش دِیا۔ اؤر ماسٹرجی کی ترپھ دیکھ کر چیتاونی دی،" یہ تو بچّی ہے پر تُم تو سمجھدار ہو۔ ایک جوان لڑکی کو اِس ترہ اَکیلے میں پڑھاتے ہو ! لوگ کیا کہیںگے ؟"

ماسٹرجی کو راہت مِلی کِ ماملا اِتنا سںگین نہیں ہے جِتنا وے سوچ رہے تھے۔

ماسٹرجی کے جواب کا اِںتزار کِیے بگیر پِتاجی نے کہ دِیا،" اَب سے اِس گھر میں پڑھائی نہیں ہوگی۔ یا تو ہمارے گھر میں یا سکُول میں، سمجھے ؟"

یہ کہتے ہُئے پِتاجی دونوں لڑکِیوں کو لیکر اَپنے گھر روانا ہو گئے۔ پرگتِ نے جاتے جاتے ایک آخری بار ماسٹرجی کی ترپھ مایُوس آںکھوں سے دیکھا اؤر پھِر پیر پٹکتی ہُئی اَپنے گھر کو چل دی۔

یہاں پر " پرگتِ کا اَتیت " شرّںکھلا سماپت ہوتی ہے۔

آشا ہے آپکو پرگتِ کا اَب تک کا جیون اَچّھا لگا ہوگا۔ اُسکے جیون میں آگے کیا ہونے والا ہے جانّے کے لِئے " پرگتِ کے سںسمرن " نامک شرّںکھلا کی پرتیکشا کیجِیے۔
(¨`·.·´¨) Always
`·.¸(¨`·.·´¨) Keep Loving &;
(¨`·.·´¨)¸.·´ Keep Smiling !
`·.¸.·´ -- raj sharma

Re: گھمسان ​​چدائی

Sponsor

Sponsor
 

Post Reply