Sarfaroshi سرفروس کی تمنا

User avatar
rajsharma
Super member
Posts: 14434
Joined: 10 Oct 2014 07:07

Re: Sarfaroshi سرفروس کی تمنا

Post by rajsharma »



انجلی شاید مجھےکوئی بوڑھا سمجھ رہی تھی ۔۔۔۔۔جس کو جگانے اور سیڈیوس کرنے کی ضرورت تھی ۔۔۔اوروہ اپنے بچپنے میں اس انداز میں کررہی تھی ۔۔مگر میرے رکنے کی وجہ کچھ اور تھی ۔۔۔۔
انکل آپ کب تک ہمارے ساتھ رہیں گے ۔۔۔انجلی کی سرگوشی میرے کانوں میں آئی تھی ۔

بس باقی دو دن بچے ہیں ۔۔اس کے بعدواپس جرمنی چلا جاؤں گا۔۔۔۔۔میں نے اسے بتایا ۔

آپ کو ہماری یاد آئے گی ۔۔۔انجلی نے پھر پوچھا تھا ۔۔

ہاں واپس جاؤں گا تو کچھ عرصے تک یاد آئی گی ۔۔۔پھر اگر تم چاہو تو جرمنی کا وزٹ کر سکتی ہو۔میں نے اس حل بتا دیا۔

انجلی کی اب آواز سرگوشی کے ساتھ معنی خیز بھی تھی ۔۔انکل آپ کو ماما کی بھی یاد آئے گی ۔؟؟

میں چونک پڑا ۔۔۔۔کیوں جب تم لوگوں کی یاد آئے گی تو تمہاری ماما کی بھی آ ئے گی ۔۔

مجھے اب شک ہونے لگاتھا ۔۔میں نے اس کی طرف کروٹ بدلی ۔۔اس کی آنکھوں میں شرارت کےساتھ اور بہت کچھ تھا۔۔۔۔سینے کا زیرو بم تیزی سے حرکت کر رہا تھا ۔۔

تو پچھلی رات تم نے مجھے ماما کے کمرے میں دیکھ لیا تھا ۔۔۔انجلی نے نظریں چرائی تھی ۔۔۔مطلب صاف تھا ۔۔۔۔

اب میری باری تھی ۔۔۔میں نے پوچھا کہ وجےکے ساتھ یہ سب کب سے چل رہا ہے ۔۔۔۔

انجلی ایک دم ہکلا گئی ۔۔کیا مطلب ۔۔۔۔کیا سب ۔۔۔ ایسا تو کچھ نہیں ہے ۔۔۔

بیٹا مجھے پتا چل گیا تھا ۔تم اپنی ماما کو بے وقوف بنا سکتی ہو ۔۔مجھے نہیں ۔۔میں پہلی نظر میں تاڑ گیا تھا ۔۔۔

انجلی کی ہوشیاری ہوا ہوچکی تھی ۔۔۔تبھی وہ ہلکے سے بولی انکل آپ ماما کو مت بتائیے گا۔۔۔۔یہ بولتے ہوئے وہ تھوڑی اور قریب کھسکی تھی ۔۔۔۔اس کی آنکھوں میں التجا کے ساتھ آگے بڑھنے کا اشارہ بھی تھا ۔۔

میں ابھی بھی کشمکش میں تھا ۔۔۔۔اس کا بچپنا اور نزاکت مجھے روک رہی تھی ۔۔۔۔

تبھی اس نے خود پیش قدمی کا سوچا ۔۔۔میرا ہاتھ کو اٹھا کر اپنے اوپر رکھتی ہوئی اور آگے کو کھسکی تھی ۔۔۔۔۔انکل میں آپ کو کیسے لگتی ہوں ۔۔۔میرے سامنے وہ منظر گھوم گیا جب وہ ٹی شرٹ میں میرا ہاتھ پکڑے کھینچ رہی تھی ۔۔۔اور ہلنے سے ٹی شرٹ میں اس کے چھوٹے چھوٹے سنگتر ے لرزتے ھتے۔۔۔۔۔اس نے برا پہننی نہیں شروع کی تھی ۔۔۔۔۔اور نپلز کی نوک تنگ ٹی شرٹ سے باہر جھلک رہی تھی ۔۔۔۔میں نے آنکھیں جھٹک کر اسکو پیچھے دھکیلا ۔۔اور کروٹ بدل کر لیٹ گیا ۔۔

مجھے اپنے پیچھے کھسر پھسر کی آوازیں سنائی دیں ۔۔مگر میں نے دھیان نہ دیا ۔۔۔۔۔اور سونے کی کوشش کرنے لگا۔

آوازیں اب بھی آ رہی تھی ۔۔۔اور پھر ایک ہاتھ رینگتا ہوا میری ہاتھ کے نیچے سے میرے پیٹ پر آیا تھا ۔۔اور ہلکا پھلکا وجود میری کمر سے چپکا ۔۔۔میں غصے میں پلٹا تھا ۔۔۔اور پھر اپنے الفاظ بھول گیا ۔۔۔

انجلی نے جیکٹ اور شرٹ اتار دی تھی ۔۔۔

اس کے ہلکے سے ابھار والے ، سرخ نپلز میرے سامنےتھے ۔۔۔۔ابھی تک کچے اورچھوٹے سنگترے تھے ۔۔۔۔ممے ابھی بالکل نئے تھے ۔۔بلکہ مموں کی جگہ ایک ابھار سا تھا۔۔۔جس پر گلابی رنگ کے چھوٹے سے نپلز تھے ۔۔۔۔۔انجلی نے میرا ہاتھ پکڑتے ہوئے اپنے سینے پر رکھنے کی کوشش کی۔۔مجھے اندازہ ہو گیا تھا کہ یہ ایسے ماننی والی نہیں ہے ۔۔۔وجے کے ساتھ اس کا تعلق نے اسے عادی بنا دیا تھا ۔۔۔۔

جویہاں بھی اسے مجبور کر رہا تھا ۔۔۔میرے ہاتھ اپنےسینے پر دبائے وہ پھیرنے لگی تھی ۔۔۔۔۔مموں کی جگہ گوشت کو تھوڑا سا ابھار تھا ۔۔۔وہ اس حصے پر زور دیتی ہوئ میرا ہاتھ رگڑ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔میں کچھ دیر اسے دیکھتا رہا اور پھر اس کی گرمی مٹانے کا فیصلہ کر لیا۔۔۔۔

کیمپ میں ہیٹر کی کافی گرمی ہو چکی تھی ۔۔میں نے ہاتھ بڑھا کر ہیڑ بند کردیا ۔۔۔سلیپنگ بیگ کی زپ ایک سائیڈ سے کھولتے ہوئے جگہ بڑھا دی ۔۔۔۔۔پورٹیبل لائیٹ جل رہی تھی ۔۔۔۔جس کی روشنی میں انجلی میرے سامنےتھی ۔۔۔مجھے ہیٹر بند کرتے دیکھتی ہوئی وہ پینٹ بھی اتار چکی تھی ۔۔۔۔۔۔نیچے سرخ پینٹی اس کی ٹانگوں میں پھنسی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔بھری بھری اور صحت مند رانیں میرے سامنے تھے ۔۔اور پیچھے پتلی کمر کے ساتھ چھوٹے سے گول مٹول چوتڑ ۔۔۔۔۔۔۔وہ مجھے مستقل حیران کئے جارہی تھی ۔۔۔۔۔۔اس عمر میں اتنی گرم لڑکی سے میرا پہلی بار واسطہ پڑا تھا ۔۔۔۔۔اپنے کپڑے اتارنے کے بعد وہ میرے کپڑے اتارنے کے درپے ہو گئی ۔۔۔۔اوپری بدن کے بعد نچلا بدن ۔۔۔۔۔۔۔اس نے خود سے زیادہ تیزی سے میرے کپڑے اتارے تھے ۔انڈروئیر اتارتے ہوئے وہ رکی اور۔۔۔۔۔اور پھر مجھ سے لپٹی چلی گئی ۔۔۔۔اس کے انداز نے میری وحشت کو بھی للکارا تھا ۔۔۔میں نے بھی اسے دبوچتے ہوئے خود سے لپٹا لیا۔۔۔۔ہم دونوں کے چہرے ایکدوسرے سے ٹکرا رہےتھے ۔۔۔۔۔۔ہونٹوں آپس میں رگڑتے اور آگ بھڑکاتے ۔۔۔نرم شبنمی ہونٹ ۔۔۔۔۔اور اس پر اس کی گرم گرم آہیں ۔۔۔۔۔

میرا پورا جسم دہک اٹھا تھا ۔۔۔۔اور اس کے جسم کی حرارت بھی میں محسوس کر رہا تھا ۔۔۔اس برف کے پہاڑ پر مجھ سے بھی زیادہ تپا ہوا ۔۔۔۔۔۔وہ مجھے سے لپٹی مجھے چومے جارہی تھی ۔۔۔۔۔اس کے منہ سے بے اختیار آہیں نکل رہی تھی ۔امم۔۔مم۔۔۔جن میں کبھی انکل جان کی آواز بھی ہوتی ۔۔۔۔۔۔۔۔عجیب ہی اس کی حالت تھی ۔۔۔۔۔میرے چہرے کو چومنے کے بعد وہ نیچے آئی ۔۔۔میرے سینے کو چومنے لگی ۔۔۔۔۔پورا سینہ چومتی ہوئی میرےنپلز پر اپنے ہونٹ پھیرنے لگی ۔۔۔میں نے بھی ہاتھ بڑھا کر اس کے چوتڑ پر رکھا اور پوری قوت سے دبانے لگا۔۔۔۔۔۔۔اس کے منہ سے کراہ نکلی ۔۔۔اس نے آگے کو ہوتے ہوئے اپنا جسم مجھ میں دبایا۔۔۔۔نیچے سے ہتھیار نے اچھل کر ملنے کی کوشش کی تھی ۔۔۔۔۔۔خود پر لیٹی اس چھوٹی لڑکی کو میں نے سائیڈ پر لٹایا اور خود اوپر آیا ۔۔۔۔میرا وزن خود پر محسوس ہوتے ہی وہ سخت بے تاب ہوئی ۔۔اور اٹھتے ہوئے میرے چہرے پر لپکنے کی کوشش کرنے لگی ۔۔۔۔میں نے بھی بھرپور جواب دیا ۔۔۔میرا ایک ہاتھ نیچے اس کی رانوں پر گھوم رہا تھا ۔۔اسے دبا رہا تھا ۔۔۔بھینچ رہا تھا ۔۔۔میں نے اس کی چوت پر ہاتھ لے جانے کی کوشش کی ۔۔۔انجلی نے ٹانگوں کو آپس میں بھینچا تھا ۔۔میں نے ہاتھ پینٹی میں لے جا کر اوپر ہاتھ پھیرنے لگا۔۔۔۔دونوں لب آپس میں بالکل چپکےہوئے تھے ۔۔۔۔لب پر انگلی پھیرتے میں نے اندر لے جانے کی کوشش کی ۔۔۔۔مگر تنگ لبوں نے انگلی واپس دھکیلی تھی ۔۔۔۔۔۔میرے ہاتھ میں گرم گرم سا پانی لگا تھا۔۔۔۔۔میں نے اب کی بار انگلی سیدھی کر کے اندر بھیجی تھی ۔۔۔تنگ چوت نے راستہ دے دیا ۔۔۔انگلی پھنستی ہوئی اندر گئی ۔۔۔۔اندر سے چوت مکمل گیلی تھی ۔۔۔میں نے انگلی کو اندر تک پہنچایا اور آگے پیچھے کرنے لگا۔۔۔۔۔انجلی کی سسکاری نکلنے لگی تھی ۔منہ کھولے گہر ے سانس لینے لگی ۔۔۔۔۔۔۔ساتھ ہی ٹانگوں کو حرکت دینے لگی ۔۔۔میں لیٹا ہوانیچے کو ہوتا گیا ۔اور پینٹی کو اتارنے لگا۔۔۔انجلی نے دونوں ٹانگیں اٹھاکر میری مدد کی ۔۔۔۔۔جلد ہی چھوٹی سیپ کی مانند چوت میرے سامنے آ گئی ۔۔بالوں سے پاک اور بالکل ننھی سی ۔۔۔اس کے لئے تو میری انگلی ہی کافی تھی ۔۔۔جو ابھی ابھی پھنستی ہوئی باہر آئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔میں نے اوپر انجلی کے چہرے پر دیکھا ۔۔۔۔وہ بھی مجھے ہی دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں نے کھانے کے سامان میں ہاتھ ڈالا اور کریم نکالی ۔۔۔ٹیوب کو اس کے اوپر لاتے ہوئے میں نے زور دیا تھا ۔۔نرم و ملائم کریم جھٹکے سے نکلی اور اس کے سینے پر گرتی چلی گئی ۔۔۔۔۔میں اوپر کو ہوتے ہوئے اسے صاف کرنے لگا۔۔۔۔اس کے ممے کے ابھار تھوڑے ہی بڑے تھے ۔۔تھوڑی دیر میں صاف ہو چکا تھا ۔۔میں نے اب کریم اس کی چوت پر انڈیلی تھی ۔۔۔۔پتلی سی چوت کے اوپر کریم کی ایک چھوٹی سی چوٹی بن گئی ۔۔۔۔میں نےہاتھ سے اس پوری چوت پر ملتے ہوئے مساج کرنے لگا۔۔۔کچھ کریم اندر بھی گئی ۔۔۔۔باقی میں نے اوپر سے چاٹ کر صاف کر دی ۔۔۔۔۔۔۔انجلی منہ کھولے یہ سب دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔دوسرا ہاتھ نیچے لے جاکر اپنا انڈر وئیر اتار دیا ۔۔بند ہتھیار قید سے آزاد ہوتے ہی سختی پکڑنے لگا۔۔۔۔میں نے کریم وہا ں بھی لگا دی ۔۔۔۔ٹوپا اور زیادہ پھولنے لگا۔۔۔میں نے کچھ دیر اور انجلی کی چوت اوپر سے صاف کی تھی ۔۔۔اتنی دیر میں ہتھیار تن کر اپنی لمبائی میں آ چکا تھا ۔۔۔انجلی کی برداشت کا ٹائم شروع تھا ۔۔۔ابھی تک اس نے ہتھیار دیکھا نہیں تھا ۔۔۔۔مگر شاید اندازہ ہو گیا ہو۔۔۔

میں اس کی دونوں ٹانگوں کو پھیلاتے ہوئے درمیان میں آیا ۔۔۔دونوں ٹانگیں میری رانوں کے اوپر سے ہوتی ہوئی پیچھے جار ہی تھیں۔۔۔۔۔اور ہتھیارکا ٹوپا چوت کے اوپر لہرا رہا تھا ۔۔۔میں نے انجلی کی ٹانگوں کو تھوڑا اور کھولتے ہوئے پیچھے کیا۔۔۔۔۔ٹوپا کریم سے بھرا ہوا تھا ۔۔۔میں نےٹوپے کو چوت کے لبوں پر رگڑا ۔۔۔۔اوپر اس کے چہرے کو دیکھا۔۔وہ مجھے ہی دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔میں نے ٹوپے کو چوت کے لب پر رکھ کر زور دیا ۔۔۔۔چوت نے راستہ دینے سے انکارکر دیا۔۔۔۔۔ٹوپا اوپر کو سلپ ہوا تھا ۔۔۔۔دوبارہ زور دیا تھا ۔۔اب کی بار میں نے واقعی زور لگایا تھا ۔۔ٹوپااندر جا گھسا تھا۔۔۔۔انجلی کے منہ سے ایک تیز چیخ نکلی ۔۔۔وہ اوپر کو اچھلنے لگی ۔۔۔میں نے بڑی مشکل سے ٹانگوں سے پکڑ کر اسے روکا ۔۔۔ٹوپا اندر بری طرح سے جکڑا ہوا تھا۔۔۔میں نے تھوڑا سا آگے کوہوتا ہوا ٹوپا دھکیلا ۔۔۔۔انجلی کہنی رکھے اٹھ کر بیٹھ گئی ۔۔اس کے منہ سے دبی ہوئی چیخیں اور ماما کی پکاریں تھی ۔۔مگر فی الحال اس کی ماما یہاں نہیں تھی۔۔۔۔۔اس کی نظروں نے ہتھیار دیکھ لیا تھا۔۔۔۔.انجلی کے آنکھوں میں آنسو بھرے ہوئے تھے ۔۔۔۔میں آہستہ آہستہ اس کی چوت کے دانے کو مسلنے لگا۔۔۔ ۔وہ ابھی بھی روئے جارہی تھی ۔۔۔۔انکل بس کردیں ۔۔۔انکل بس کردیں ۔۔۔میں نے اٹھ کر اسے چومنا چاہا ۔۔۔۔مگر انجلی نے راستے میں ہی روک دیا۔۔۔ہتھیار کے ہلنے سے اس کا درد بڑھ رہا تھا ۔۔۔میں کچھ دیر ایسے ہی چوت مسلتا رہا۔۔۔۔۔اور اس کے لیمو ں جیسے ممے کو پکڑ کر کھینچنے لگا۔۔۔۔۔۔وہ بھی دم سادھے سانس روکے لیٹی ہوئی تھی

اس نے جس جن کو جگایا تھا ۔۔اسے برداشت بھی خود ہی کرنا تھا ۔۔۔۔مجھے پانچ منٹ سے اوپر ہو چکے تھے ۔۔۔ٹوپا ابھی تک اندر ہی جکڑا ہوا تھا ۔۔۔میں نے آہستگی سے حرکت کی تھی ۔۔۔۔۔۔انجلی کے منہ سے ا وئی ۔۔۔آئی ۔۔۔۔آہ۔۔کی آواز نکلی تھی ۔۔۔۔میں نے چوت کے دانے کو مسلتے ہوئے ہتھیار کو آگےدھکیلا تھا ۔۔۔ہتھیار تھوڑا اور اندر گیا تھا ۔۔۔انجلی کہنی لٹا کر دوبارہ لیٹ گئی ۔۔۔وہ سلیپنگ پر ہاتھ مارتے ہوئے درد برداشت کرنے کی کوشش کر رہی تھی ۔۔میں نے تھوڑا سا اور آگے کو بڑھایا تھا ۔۔۔۔وہ پھر سے چلائی ۔۔۔۔اوئی ۔۔آئی۔۔۔آہ۔۔۔سس ۔۔۔انکل پلیز سلو ۔۔۔۔میں روک کرویسے ہی بیٹھا رہا۔۔۔اور کریم لے کر چوت پر پھیرنے لگا۔۔۔۔اگلے تین منٹ تک ایسے ہی بیٹھا رہا ۔۔۔۔۔پھر ہتھیار کو پیچھے کرتے ہوئے ہلانے لگا۔۔۔۔صرف ٹوپے کے ساتھ دو انچ ہی اندر تھا ۔۔۔مگر اس کے ہلنے سے انجلی کا پورا بد ن ہل رہا تھا ۔۔میں نے دونوں ہاتھ اس کی ٹانگوں پر ہی جمائے ہوئے تھے ۔۔۔۔اس کی سسکیاں جاری تھی ۔۔۔۔۔میں کچھ دیر ہلتا رہا ۔۔۔ اور پھر ہتھیار باہر نکال کر کریم لگانے لگا۔۔۔۔۔انجلی جلدی سے اٹھ کر بیٹھ گئی ۔۔۔اور حیرت سے اس ہتھیار کو دیکھنے لگی ۔۔۔۔اس کا اگلا سوال ایسا تھا کہ میں اچھل پڑا ۔۔۔۔انکل ماما نے یہ پورا لیا تھا ۔۔۔۔۔ ؟ ۔ وہ لڑکی اپنا مقابلہ اپنی ماما سے کر رہی تھی ۔۔میں نے اس کو سوچ کو سلام کیا ۔۔۔۔اور ہاں میں سر ہلا دیا ۔۔اس کا مطلب ہے یہ میں بھی لے سکتی ہوں ۔۔۔میں نے پھر ہاں میں سر ہلا دیا ۔۔۔۔۔وہ شاید دل ہی دل میں خود کو تیار کرنے لگی ۔۔۔۔۔اور پھر آگے کو آتی ہوئی ہتھیار کو چھوا ۔۔۔۔۔مجھے ایسے لگا جیسے کسی چھوٹے بچے کا ہاتھ ہو ۔۔۔۔وہ اپنے ہاتھ سے ہتھیار کو پکڑے دیکھنے لگی ۔۔۔موٹائی میں آدھے سے زیادہ ہتھیار ابھی بھی اس کی مٹھی سے باہر تھا ۔۔۔۔۔ماما یہ کیسے لے سکتی ہیں ۔۔۔وہ بڑبڑائی تھی ۔۔۔۔
میں نے اسے لٹایا ۔۔اور چہرے کوچومتے ہوئے نیچے آنے لگا۔۔۔کریم اس کی چوت پر پھر لگائی تھی ۔پہلےوالی پوزیشن میں آیا ۔۔۔۔اورٹوپے کو اوپر رکھ کر دھکیلا۔۔۔۔۔اس کی ٹانگیں ہلکی سی کانپی تھی ۔۔مگر وہ سمبھل گئی ۔۔۔میں دھکے بڑھاتے ہوئے پہلے مقام تک آیا ۔۔۔اس کے منہ سے دبی دبی کراہیں نکل رہی تھیں ۔۔۔۔مگر چلانے کا سلسلہ بند ہو گیا ۔۔۔۔۔۔میں نے تھوڑا سا آگے کو دھکیلا ۔۔۔۔ابھی آدھے سے کچھ کم ہی تھا۔۔۔کہ اس کی چیخ پھر نکلی ۔۔۔۔آئی۔۔۔اوئی۔۔۔سس ۔۔۔۔آہ۔۔۔۔میں پھر سے رک گیاتھا ۔۔اور وہیں ہلکے سے ہلانے لگا۔۔۔اس کا منہ کھل کر عجیب سا بن چکا تھا ۔۔۔۔میں اب رکا نہیں تھا ۔۔بلکہ مستقل ہلکے سے وائیبریٹ کرتا رہا ۔۔۔جس کے ساتھ ا نجلی کا بدن بھی لرزش میں تھا۔۔۔۔میں دھکے دیتا ہوا تھوڑا آگے بھی ہو جاتا تو وہ ایک دم اوپر کو جھٹکا کھا جاتی ۔۔۔۔۔۔میرے مستقل ہلکے ہلکے سے دھکے جاری تھی ۔۔۔جب اس کی آواز آئی ۔۔۔انکل آئی ایم کمنگ۔آہ۔۔۔سس ۔۔۔۔میں نے جھٹکے تھوڑے اور لہرائے تھے ۔۔۔اس کی اونچی آواز گونجی۔۔۔اور پھر اس کا پورا جسم جھٹکے کھانے لگا۔۔۔وہ جھٹکے کھاتی ہوئی پانی چھوڑ رہی تھی ۔۔۔۔۔میں آہستہ سے دھکے دیتا گیا ۔۔۔پانی اندر ہی گھومتا رہا۔۔۔۔میں نے ہلنا بند نہیں کیا تھا ۔۔۔وہ پانی چھوڑ کرسانس بحال کرنے میں لگی رہی ۔۔۔۔میں ہلکے سے ہلتا رہا ۔۔۔انجلی کی آنکھیں کھل چکی تھی ۔۔۔اور پھر سے خمار میں آتی جارہی تھی ۔۔۔۔ٹانگوں کو کھولتے ہوئےاس نے نیچے دیکھا ۔۔۔۔۔بلا ابھی تک باہر ہی تھی ۔۔۔۔۔میں نےتھوڑا زور دیتے ہوئے ٹوپے کو اور آگے دھکیلا ۔۔۔ انجلی اب قدرے ایڈجسٹ ہو چکی تھی ۔۔میں نے بھی جلد بازی نہیں کی تھی ۔۔۔ہلتے ہوئے اس نے مجھے دیکھا اور اوپر آنے کا اشارہ کیا ۔۔میں ہاتھ اس کے دائیں بائیں رکھتا ہوا اوپر آیا تھا ۔۔۔زور میرے بازو پر تھا ۔۔اس لئے نیچے کوئی زور نہیں پڑ ا تھا ۔۔۔انجلی کا گرم گرم بوسہ مجھ سے ٹکرایا تھا ۔۔۔۔جس میں میرے لئے تعریف بھی تھی ۔۔تحسین بھی ۔۔۔اور شکریہ بھی ۔۔۔۔

میری کمر ویسے ہی ہلکی ہلکی وائیبریٹ ہو رہی تھی ۔۔۔جب انجلی نے میری کمر پر ہاتھ رکھا ۔۔۔اور مجھے تھوڑا سا کھینچا تھا ۔۔۔۔میں نے کمر کو ہلا کر ہتھیار کو آگے دھکیلا تھا ۔۔۔انجلی کی درد بھری سسکاری نکلی تھی ۔۔۔اس نے نیچے ہاتھ بڑھا کر چوت پر رکھا اور مسلنے لگی ۔۔۔میرا وزن اب بھی میرے بازؤوں پر تھا ۔۔۔۔ انجلی نے کمر پر زور دیا ہوا تھا ۔۔جس کا مطلب رکنے کا تھا ۔۔میں کچھ دیر رکنے کے بعد ہلکا ہلکا ہلنے لگا۔۔۔۔انجلی کی کراہیں جاری تھی ۔۔۔۔آئی ۔۔۔۔اوہ ۔۔۔سس ۔۔۔ کچھ منٹ ہلنے کے بعد انجلی کا دباؤ کمرپر سے کم ہوا ۔۔۔اور میں نے اور تھوڑا سا آگے بڑھا دیا ۔۔۔وہ پھر سے منہ کھول کر چیخی ۔۔۔آئی ۔۔۔۔اوہ ہ۔۔۔۔۔میں رک کر پھر آہستہ سے ہلنے لگا ۔۔۔اگلے دس منٹ میں ایسے ہی آدھا ہتھیار اندر پہنچانے میں کامیاب ہو گیا ۔۔۔۔۔۔انجلی کی نظریں مجھ سے کہ رہی تھی کہ انکل بس آج کے لئے اتنا کافی ہے ۔۔۔۔میں نے بھی آنکھوں میں ہی جواب دے دیا ۔۔۔۔اور کچھ دیر تیز ہلانے کے بعد ہتھیار باہر نکال دیا ۔۔۔۔۔انجلی کوا ٹھاتے ہوئے گھوڑی بننے کا کہا ۔۔۔وہ جلدی سے الٹی ہو گئی ۔۔ میں نے اس کے چوتڑ دیکھے ۔۔۔پتلی کمر کے نیچے گول سے چوتڑ تھے ۔۔۔میں نےٹوپے کو پھر گیلا کرتے ہوئے اس کے پیچھے آیا ۔۔۔چوت پر ٹوپے کو رکھا کہ وہ ایکدم سے بیٹھی گئی ۔۔۔۔مین اسے اٹھا کر پھر ٹوپا رکھا تووہ پھر سے بیٹھ گئی ۔۔۔اب میں نے اٹھانے کے بجائے وہیں لٹا دیا ۔۔۔اور چوتڑ کے اوپر دائیں بائیں گھٹنے رکھ کر بیٹھ گیا ۔۔۔چوتڑ کھولتے ہوئے ٹوپے کو چوت پر رکھاتھا۔۔۔اور آہستگی سے اندر اتار دیا ۔۔۔۔۔اب کی باراینگل دوسر اتھا ۔۔۔اور ہتھیار اتنی آرام سے جانے کے بجائے تھوڑا تنگ کر رہا تھا ۔۔۔انجلی کے منہ سے کراہ نکلی تھی ۔۔۔میں آگے کو ہوتا ہوا اس کے اوپر جھک گیا ۔۔۔۔۔ہتھیار کچھ اور اندر گھسا تھا ۔۔۔وہ پھر سے چیخی تھی ۔۔میں نے گردن پر بوسہ دیتے ہوئے اسے سہلایا تھا۔۔۔۔اس کے کانوں کی لو کو چوستا ہوا ۔۔۔۔کندھے اور گردن کو چومتا ہوا ۔۔اس کی گردن کے پچھلے حصے کو چومتا رہا ۔۔۔۔۔میں کچھ دیر ایسے ہی رہا ۔۔۔اور پھر آہستہ سے ہلنا شروع کر دیا ۔۔۔میری اسپیڈ کچھ درمیانی ہوئی تھی ۔۔۔۔انجلی کی کراہیں بھی بلند ہونے لگیں۔۔۔۔۔اوہ ہ۔۔۔۔آہ۔۔۔سس ۔۔۔۔میں درمیانی اسپیڈ سے لگا رہا ۔۔۔۔اس کی سسکیاں بھی بلند ہوتی رہیں ۔۔۔۔اپنے ہونٹوں پر زبان پھیرتی ہوئی وہ پیچھے کو اٹھتی ۔۔۔۔میرا چہر ہ بھی اس پر جھکا ہوا تھا۔۔۔اس کے ہونٹ بھی پیاسے تھے ۔۔مگر میں صرف گال پر ہی بوسہ دے سکا ۔۔۔۔آگے ملنا مشکل تھا ۔۔۔وہ بھی پھر سر نیچے کر کے جھک گئی ۔۔۔میں نے ہلتے ہوئے جھٹکے اور تیز کرنے لگا۔۔۔انجلی نے اپنے دونوں ہاتھ بیگ پر رکھتی ہوئی اس پر اپنا منہ دبا کر لیٹ گئی ۔۔۔۔اس کی دبی دبی سسکیاں ابھی بھی نکل رہی تھی ۔۔۔میں نے جھٹکے تیز کئے تھے ۔۔۔اس اسپیڈ میں تو میں پوری رات فارغ نہیں ہو سکتا تھا۔۔۔۔کچھ دیر بعد ایسے لگا رہا ۔۔۔پھر انجلی کو سیدھا کرتے ہوئے اس کی ٹانگیں اٹھادیں ۔۔ٹانگیں اٹھا کراس کے سینے سے لگائی تھی ۔۔۔۔چوت کے سوراخ پہلے سے لال ہو کر پھولا ہوا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔میں نے آگے بڑھ کر اس کے قریب آیا ۔۔۔اور ٹوپے کو اوپر رکھے کر دبانے لگا۔۔۔۔اب کی بار پھسلتا ہوا اندر گیا تھا ۔۔۔میں نے آدھے تک اس کو آرام سے پہنچایا اور پھر کھینچ کر دھکے دینے لگا۔۔۔۔۔یہ دھکے ہر منٹ کے بعد تیز ہوتے جا رہے تھے ۔۔۔۔۔اور اسی اسپیڈ سے انجلی کا والیم بھی تیز ہوتا جار ہا تھا ۔۔۔اب کی بار مزےاور درد دونوں کی شدت برابر تھی ۔۔۔۔میں اپنی ٹانگوں کے زور پر ہتھیار ٹوپے تک باہر کھینچتا اور پھر اندر آدھے تک گھسا دیتا ۔۔۔۔انجلی منہ کھولے ہوئے آوازیں نکالنے میں مصروف تھی ۔۔۔اوہ ہ۔۔۔۔آئی۔۔۔۔سس۔۔۔۔۔میرے دھکے بڑھتے ہوئے جھٹکوں میں تبدیل ہوئے ۔۔۔۔انجلی کا جسم کانپ رہا تھا ۔۔۔۔نیچے کوئی آرام دہ بستر تو تھا نہیں ۔۔۔سخت پہاڑ کا فرش تھا ۔۔۔۔مگر وہ پھر حوصلے سے برداشت کرتی رہی ۔۔۔میرے جھٹکے تیز ہوئے تھے ۔۔۔ ۔۔طوفانی اسپیڈ انجلی فی الحال وہ برداشت کرنے کی حالت میں نہیں تھی ۔۔۔۔۔میں بھی اسی اسپیڈ پر رہا ۔۔۔۔۔۔وہ پھر سے پانی چھوڑنے والی ہو گئی تھی ۔۔۔اور اب شہوت بھری آواز میں مجھے بھی دعوت دے رہی تھی ۔۔۔۔۔۔اگلے پانچ منٹ میں نے جما کر جھٹکے مارے اور فوارے کو باہر کا راستہ دکھا دیا ۔۔۔۔۔انجلی بھی اس انتظار میں تھی ۔۔۔اس نے بھی پانی چھوڑ یا۔۔۔۔۔۔۔میں سانس بحال کرنے اس کے برابر میں لیٹا تھا ۔۔۔۔تبھی انجلی پھر میرے پاس آئی تھی ۔۔۔میرے سائیڈ پر لیٹتی ہوئی مجھے پر جھک سی گئی ۔۔۔۔میرے گال پر بوسہ دیا تھا ۔۔۔۔اور پھر پوچھا ۔انکل ماما نے واقعی یہ پورا لیا تھا ۔۔۔۔

میں نے اسےدیکھا اور خود سے لپٹا لیا

Read my all running stories

(ख़ौफ़ running) ......(फरेब running) ......(लव स्टोरी / राजवंश running) ...... (दस जनवरी की रात ) ...... ( गदरायी लड़कियाँ Running)...... (ओह माय फ़किंग गॉड running) ...... (कुमकुम complete)......


साधू सा आलाप कर लेता हूँ ,
मंदिर जाकर जाप भी कर लेता हूँ ..
मानव से देव ना बन जाऊं कहीं,,,,
बस यही सोचकर थोडा सा पाप भी कर लेता हूँ
(¨`·.·´¨) Always
`·.¸(¨`·.·´¨) Keep Loving &
(¨`·.·´¨)¸.·´ Keep Smiling !
`·.¸.·´ -- raj sharma

User avatar
rajsharma
Super member
Posts: 14434
Joined: 10 Oct 2014 07:07

Re: Sarfaroshi سرفروس کی تمنا

Post by rajsharma »



مینا کماری انجلی سے بات کرنے کے بعد اپنے کیمپ کی طرف آئی تھی ۔۔۔۔۔۔پورا گروپ خوف کی حالت میں تھا ۔۔مگر اب نیچے سب خیر کی رپورٹ کے بعد سب واپس اپنے کیمپ میں جا چکے تھے ۔۔۔۔۔وجے اندر ہی تھا ۔۔۔اور ان سب سے بہت پریشان ہو چکاتھا ۔۔۔اس کے چہرہ بھی خوف سے زرد ہوا تھا۔۔۔۔۔کیمپ کی زپ بند کرتے ہوئے وہ وجے کی طرف بڑھی اور اسے خود سے لپٹا لیا۔۔۔۔۔دبلا پتلا وجے اپنی ماما کے سینے میں دبتا چلا گیا ۔۔۔۔۔کچھ دیر بعد مینا نے اسے چھوڑا ۔۔۔اور پھر سلیپنگ بیگ کھولتی ہوئی اسے اندر لٹا دیا ۔۔۔۔۔وجے کا سلیپنگ بیگ بھی انجلی کے کیمپ میں رہ گیا تھا ۔۔۔۔اورسردی بڑھتی جا رہی تھی ۔۔۔۔مینا کماری نے اپنا ہیٹر نیچے بھجوا دیا تھا ۔۔۔۔۔سردی بڑھنے لگی تو وہ بھی وجے کے ساتھ ہی اندر بیگ میں آگئی ۔۔۔وجے کی سردی دور ہونے لگی تھی ۔۔۔۔۔اس نے اپنی ماما سے پوچھا ۔۔۔ماما کل صبح تک انجلی آ جائے گی اوپر ۔۔۔
جی بیٹا ۔۔تمہارے انکل بہت ہمت والے ہیں ۔۔آج بھی انہوں نے انجلی کی جان بچائی ۔۔۔مجھے پوری امید ہے کل وہ ضرور اسے اوپر لانے میں کامیاب ہوں گے ۔۔۔وجے نے بھی سر ہلا دیا تھا ۔۔۔۔۔اسے پچھلی رات کا منظر یاد آ گیا تھا ۔۔۔جب انکل اور ان کی ماما ایک بیڈ پر تھے ۔۔۔اور انکل اس کی ماما کے اوپر چڑھے ہوئے تھے ۔۔انجلی اور وجے دونوں نےیہ منظر ایک ساتھ دیکھا تھا۔۔۔۔۔اس کے جسم میں سنسناہٹ بڑھنے لگی

۔۔۔وجے اور انجلی ایک ہی کالج میں تھے ۔۔ساتھ سوتےاور ساتھ رہتے تھے ۔۔۔۔دونوں بہن بھائی اس جدید دور میں جلد ہی باہر کی ہوا کی کھا چکے تھے ۔۔ساتھ ساتھ سوتے ہوئے وہ کب آپس کے لمس سے آشنا ہوئے تھے انہیں پتا ہی نہیں چلا ۔۔۔ہنستے کھیلتے پہلے خود کو نہاتے ہوئے دیکھتے ۔۔۔اور پھر آپس میں سوتے سوتے کب بارود میں چنگاری لگی انہیں پتا ہی نہیں چلا۔۔۔۔۔۔پہل انجلی نے ہی کی تھی۔۔اس میں بے پناہ گرمی تھی ۔۔۔ ۔۔اور پھر وجے بھی اس کے رنگ میں رنگتا گیا ۔۔ان کی اکثر راتیں آپس میں لپٹے گزرتی تھی ۔۔۔۔۔۔پچھلی رات کا منظرپھر اس کی آنکھوںمیں گھوم گیا۔۔۔اس کی ماما اپنی دونوں ٹانگیں ہوا میں اٹھائے ہوئے لیٹی تھی ۔۔۔اور انکل ان کے بھاری بھرکم ممے پکڑے ہوئے جھکے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔اپنی ماما کی چیخیں ابھی بھی اس کے کانوں میں گونج رہی تھیں ۔۔ایسی درد بھری چیخ اس نے پہلے کبھی نہیں سنی تھی ۔۔۔۔۔۔اور یہ سب سوچ کر اس کے لن میں حرکت شروع ہو چکی تھی ۔۔۔۔اس کی ماما کے بڑے بڑے سے ممے ابھی بھی اٹھے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔سانس کی حرکت کے ساتھ وہ بھی اور اوپر کو اٹھتے ۔۔۔۔ماما انکل کے آنے سے آپ اتنی خوش ہوگئیں ۔۔۔۔ایسا کیا ہوا ہے جو آپ اتنی خوش ہیں ۔۔۔وجے نے سوال پوچھا تھا ۔۔۔۔

مینا کماری پہلے تو سوچنے لگی ۔۔۔وجے بچہ تھا ۔۔اسے کیسے سمجھاتی ۔۔۔پھر کہا کہ تمہار ے پاپا کے جانے کے بعد بہت اداس ہو گئی تھی ۔۔۔اور انکل جان بہت ہنس مکھ ہیں ۔۔ان کے آنے سے میں بہل گئی ہوں ۔۔۔۔

وجے بچہ تو تھا نہیں ۔۔۔اگلا سوال کہ ماما ان کے جانے کے بعد پھر اداس ہو جائیں گی ۔۔۔۔۔۔۔مینا کماری سوچ میں پڑ گئی تھی ۔۔۔۔۔اور تبھی وجے اس سے لپٹا تھا ۔۔۔ماما ہم آپ کو اداس نہیں رہنے دیں گے ۔۔۔۔۔۔۔جگہ کم تھی ۔۔۔وجے نے کروٹ لی تھی ۔۔۔اور پھر مینا کماری نے بھی کروٹ لے لی ۔۔۔۔تبھی اسے عجیب سے احساس ہوا تھا ۔۔۔کچھ سخت سا ابھار اسے نیچے کی طرف محسوس ہوا تھا۔۔۔۔پہلے تو اس نے وہم سمجھا ۔۔۔مگر پھر وجے کا اسے بار بار دباؤ دینا ۔۔۔۔۔۔اس نے جلدی سےوجے کو دھکیلا ۔۔۔۔بیٹا اس طرف منہ کر کے سو جاؤ ۔۔مجھے بھی نیند آ رہی ہے ۔۔۔۔۔ساتھ ہی مینا کماری نے بھی کروٹ لے لی ۔۔۔جگہ اتنی تو تھی نہیں ۔۔۔دونوں کی پشت ابھی بھی ملی ہوئی تھی ۔۔۔وجے کا ذہن کسی اور طرف جا رہا تھا ۔انکل کے جانے کے بعد ماما نے اداس ہو جانا تھا ۔۔اور وہ اسی اداسی کو دور کرنا چاہ رہا تھا ۔۔۔۔۔اس نے تھوڑی دیر بعد کروٹ لی اور پھر اپنی ماما کے پیچھے سے لپٹ گیا ۔۔ماما مجھے سردی لگ رہی ہے ۔۔۔مینا کماری بے بسی سے دوسری طرف منہ کر کے لیٹی رہی۔۔۔۔کچھ دیر بعد وجے کا ایک ہاتھ اٹھا ۔۔۔اور مینا کماری کی کمر پر آکر رکا تھا ۔۔۔۔بجلی کی ایک لہر مینا کے جسم میں ابھری ۔۔۔وہ غصے میں تیزی سے پلٹی تھی ۔۔۔۔اور وجے کو دھکا دینے لگی ۔۔۔۔دبلا پتلا وجے پیچھے کو لہرا یا تھا ۔۔۔اور پھر واپس اپنی ماما سے لپٹ گیا ۔۔۔ماما میں آپ کو خوش دیکھنا چاہتا ہوں ۔۔۔آپ کو پیار کرنا چاہتا ہوں ۔۔۔جیسے رات کو انکل آپ کو کر رہے تھے ۔۔۔۔میں نہیں چاہتاکہ آپ ان کے جانے کے بعد پھر اداس ہو جائیں ۔۔۔۔۔۔مینا کماری ایک دم سن ہو گئی تھی ۔۔۔۔۔وجے کے ہاتھ اس کے سینے پر بھاری بھرکم دودھ پر تھے ۔۔۔۔مگر مینا کماری کا ذہن کہیں اور تھا ۔۔۔۔وجے کی آواز اب تک اس کے کان میں گونج رہی تھی ۔۔۔۔۔رات کو اس کے بیٹے نے اسے دیکھ لیا تھا ۔۔۔اس نے پھر دھکیلنے کی کوشش کی تھی ۔۔میں تمہار ی ماں ہوں ۔۔۔تمہارے ساتھ نہیں ہو سکتا ۔۔مگر وجے کسی جونک کی طرح لپٹا ہوا تھا ۔۔۔۔اس نے دودھ کو اور زور سے دبانا شروع کر دیا تھا ۔۔۔۔ماما کسی کو پتا نہیں چلے گا۔۔۔۔مینا کماری کی مزاحمت کی جاری تھی ۔۔۔۔مگر وجے رکنے میں نہیں آ رہا تھا۔۔۔آخر میناکماری کے ذہن میں شادی کے ابتدائی دنوں کی بات یاد آ گئی۔۔۔۔اور اس نے مزاحمت کم کرنی شروع کر دی ۔۔۔وجے اور شیر ہوتا گیا ۔۔۔۔۔۔۔وہ بڑے زور دار انداز میں دودھ کو دبائے جارہا تھا ۔۔جیسے کسی بچے کے ہاتھ میں پہلی بار کوئی کھلونا آ جائے ۔۔۔۔ساتھ ہی اس نے جیکٹ کی زپ کھول دی ۔۔۔سامنے ہی ایک کھلی سی ٹی شرٹ میں بے تحاشہ بڑے ممے اس کے سامنے تھے ۔۔۔ا س نے ٹی شرٹ کے اوپر سے ہی اسے چوسنا شروع کر دیا ۔۔۔۔مینا کماری نے اس کے سر پر ہاتھ پھیرنے شروع کر دیئے ۔۔۔وجے اب اس پر لیٹا ہوا دودھ چوسنے میں مصروف تھا ۔۔۔۔۔اس نے ٹی شرٹ آگے سے گیلی کر دی تھی ۔۔۔اور پھر بھرائی ہوئی آواز میں بولا ۔۔۔ماما ٹی شرٹ اتاریں ۔۔۔۔۔۔مینا کماری نے حیرت سے دیکھا ۔۔۔اور وجے کی آنکھیں سرخ ہو چلی تھی ۔۔۔اور منہ سے تھوک بہہ رہا تھا ۔۔وہ اس کا کوئی اور ہی انداز تھا ۔۔۔۔۔۔اور پھر وجے نے ہی اپنی ماما کی شرٹ کو اوپر کو کھینچا ۔۔اور ہاتھ اٹھوا کر شرٹ اتار دی ۔۔۔۔۔۔سرخ کلر کی برا کو اس نے ایسے ہی اوپر کھینچ دیا ۔۔۔۔۔۔سانولے کلر کے بڑے بڑے سے دودھ تیزی سے نیچے کو آئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔اور نپلز تو اچھے خاصے لمبے تھے ۔۔۔۔وجے تیزی سے ان پر لپکا تھا ۔۔۔اور تیزی سے چوسنے لگا۔۔۔۔۔وہ بہت ہی جنونی انداز میں دودھ چوسے جا رہا تھا ۔۔۔مینا کماری بھی اس کی بے صبری پر حیران تھی ۔۔۔اور پھراس نے نپلز کاٹنے شروع کر دیئے ۔۔۔۔۔۔مینا کماری کی سسکیاں نکلنے لگی ۔۔۔۔۔مگر وجے پر کوئی اثر نہیں تھا۔۔۔وہ اپنے دانت لمبے نپلز پر ایسے گاڑ رہا تھا کہ مینا کی کراہ نکل گئی۔۔۔۔۔بیٹا آرام سے ۔۔۔۔۔درد ہو رہی ہے ۔۔۔۔کچھ دیر بعد وجے اٹھا اور اپنی جیکٹ کھولتے ہوئے سلیپنگ بیگ سے باہر اچھال دی۔۔۔۔۔۔ساتھ ہی شرٹ اور پینٹ بھی اتار دی ۔۔۔۔اس کے انداز بہت بے صبرا تھا ۔۔۔۔۔انڈروئیر تک اتار کر باہر پھینک دیا ۔۔سلیپنگ بیگ بند تھا ۔۔۔اور مینا کماری نیچے نہیں دیکھ سکتی تھی ۔۔۔مگر پھر بھی جب وجے اس پر لیٹا تو گرم گوشت کا ٹکڑا اس کے پیٹ پر ٹکرا یا تھا۔۔۔وجے اب اپنی ماما کے چہرے پر آیا تھا ۔۔۔اور بے تحاشا چومے جار ہا تھا۔۔۔۔۔ساتھ ہی اس کے منہ سے بہنے والا تھوک مینا کماری کے چہرے پر بھی گرتا جار ہا تھا ۔۔۔۔۔وجے پورا چہر ہ گیلا کرنے کے بعد زپ کو ایک سائیڈ سی تھوڑا سا کھول دیا ۔۔۔یہ ایک بوری کیطرح بیگ تھا۔۔۔جو صرف اوپر سے کھلا ہوا تھا ۔۔اور اب سائیڈ سے تھوڑی سی زپ اورکھلی گئی تھی ۔۔۔۔وجے نے تھوڑا سا باہر کو نکل کر اپنے پاؤں باہر نکا لے ۔۔۔اور دوبارہ بیگ میں گھس گیا ۔۔۔۔اب کی بار اس نے پاوں باہر رکھ کر سر پہلے اندر کیا تھا۔۔۔۔اور اسی طرح اندر گھستا چلا گیا ۔۔۔۔مینا کماری نے اسے اٹھانے کی کوشش کی تھی ۔۔بیٹا باہر آؤ سانس رک جائے گی ۔۔۔۔مگر وجے اپنے ہوش میں کہاں تھا۔۔۔۔اس نے تیزی سے اپنی ماما کی جینز کے بٹن کھولے اور نیچے کو اتارنے لگا ۔۔۔۔ٹانگوں تک پینٹ گھسیٹ کر اس نے پینٹی بھی کھینچی اور پنڈلیوں تک پہنچا دی ۔۔۔اب وہ تھوڑا سا اوپر اٹھا اور سیدھ اپنی ماما کی چوت پر ہونٹ رکھ دیئے ۔۔۔۔۔مینا کماری کی ایک تیز سسکاری نکلی تھی ۔۔۔یہ مزا اس کے لئے نیا تھا۔۔۔۔وجے کی زبان ، تھوک اور ہونٹ اسے محسوس ہو رہے تھے ۔۔۔۔۔ساتھ ہی اس کاسانولا سا لن اس کے چہرے کے اوپر آیا ہوا تھا۔۔۔۔اس نے منہ کھول کر اسے اندر لینے کی کوشش کی ۔۔اور کامیاب بھی ہو گئی۔۔۔۔۔ادھر وجے نے اس کی چوت کو چوس کراپنی زبان اندر داخل کر دی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔مینا کماری نے بھی تیزی سے اس کے لن کو چوسنا شروع کر دیا ۔۔۔جو تیزی سے بڑا ہوتا جا رہا تھا ۔۔۔۔اور جلد ہی اپنی موٹائی میں آکر منہ میں پھنسنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وجے کی برداشت کم تھی ۔۔۔وہ اب ایسے ہی سلیپنگ بیگ سے باہر آیا ۔۔۔اور زپ ایک سائیڈ سی پوری کھول دی ۔۔اور واپس اندر چلا گیا۔۔۔۔۔

Read my all running stories

(ख़ौफ़ running) ......(फरेब running) ......(लव स्टोरी / राजवंश running) ...... (दस जनवरी की रात ) ...... ( गदरायी लड़कियाँ Running)...... (ओह माय फ़किंग गॉड running) ...... (कुमकुम complete)......


साधू सा आलाप कर लेता हूँ ,
मंदिर जाकर जाप भी कर लेता हूँ ..
मानव से देव ना बन जाऊं कहीं,,,,
बस यही सोचकर थोडा सा पाप भी कर लेता हूँ
(¨`·.·´¨) Always
`·.¸(¨`·.·´¨) Keep Loving &
(¨`·.·´¨)¸.·´ Keep Smiling !
`·.¸.·´ -- raj sharma

User avatar
rajsharma
Super member
Posts: 14434
Joined: 10 Oct 2014 07:07

Re: Sarfaroshi سرفروس کی تمنا

Post by rajsharma »


اس نے اپنی ماما کی صحت مند رانیں تھامیں اور اٹھا دی۔۔۔نیچے سے اس کا لن تیار تھا ۔۔۔جو غڑاپ سے اندر گھسا تھا ۔۔۔۔۔۔کل کی دھواں دار چدائی کے بعدمینا کماری کی چوت سوجی ہوئی تھی ۔۔اور پچھلا درد ابھی بھی باقی تھا۔۔۔مگر وجے ان سے بے خبر دھکے دینے میں مصروف تھا۔۔۔لن پھنسا ہوا اندر جارہا تھا ۔۔مگر کماری کو بے تحاشہ درد ہو رہا تھا ۔۔اس کی سسکیاں بے اختیار بڑھتی جا رہی تھی ۔۔۔اس نے ہاتھ منہ پر رکھ کر روکنے کی کوشش کی ۔۔۔

نیچے سے وجے کے دھکے بھی طاقت ور ہوتے گئے ۔۔۔۔وہ اپنی پتلی ٹانگوں پربیٹھا ہو ا پوری طاقت سے گھسے ماررہا تھا ۔۔۔اس کے بس میں نہیں تھا کہ وہ پورا ندر گھس جاتا ۔۔۔۔اس کے طاقت ور دھکوں نے مینا کماری کی سسکاریاں نکال دی ۔۔۔وہ منہ کھولے ہوئے اپنے بیٹے کو دیکھ رہی تھی ۔۔۔جو خود بھی منہ کھولے دھکے ماری جا رہا تھا۔۔۔۔۔۔مینا کماری کے ممے بھی اوپر کو اچھل رہے تھے ۔۔۔۔۔۔اس نے ہاتھ سے ممے تھامے اور اپنے نپلز مسلنے لگی ۔۔۔وجے دھکے مارتے ہوئے آگے کو آیا اور اپنا چہرہ ماما کی طرف لانے لگا۔۔۔اور تقریبا لیٹتے ہوئے وہ مینا کماری کے چہرے تک پہنچا اور ہونٹوں کو چومنے لگا ۔۔۔مینا نے بھی کھل کر ساتھ دیا تھا ۔۔۔۔۔وجے کے منہ سے تھوک گر رہا تھا ۔۔۔جو اس کی ما ما کے منہ میں شامل ہو رہا تھا۔۔۔وجے آگے کو جھکا ہوا دھکے ماری جا رہا تھا۔۔۔اور پھر اپنی ماما کو کروٹ پر لٹاتے ہوئے ٹانگیں موڑ دی۔۔۔اور سائیڈ سے لن دوبارہ اندر گھسا دیا ۔۔۔۔مینا کماری دوبارہ سے سسکنے لگی ۔۔۔اسے چوت کے اندر جلن سی مچ رہی تھی ۔۔۔مگر وجے کچھ سننے کو تیار ہی نہیں تھا ۔۔۔اس کے جھٹکے تیز ہونے لگے تھے ۔۔۔۔۔۔مینا کماری کو بھی لگا کہ وہ چھوٹنے والی ہے ۔۔۔اس نے ہاتھ بڑھا کر وجے کابازو تھام لیا۔۔۔وجے نے دھکے تیز کیے اور چیختے ہوئے فارغ ہونے لگا۔۔۔

فارغ ہونے کے بعد وہ اپنی ماما کے ساتھ ہی لیٹ گیا ۔۔اور ان کے ممے تھام کو ہلانے لگا۔۔۔جو حیرانگی سے وجے کو دیکھ رہی تھی ۔۔۔جسے وہ بچہ سمجھ رہی تھی ۔۔وہ انہیں کو چود چکا تھا۔۔۔وجے ایک بار پھر ماما سے لپٹ گیا ۔۔۔۔۔

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
Read my all running stories

(ख़ौफ़ running) ......(फरेब running) ......(लव स्टोरी / राजवंश running) ...... (दस जनवरी की रात ) ...... ( गदरायी लड़कियाँ Running)...... (ओह माय फ़किंग गॉड running) ...... (कुमकुम complete)......


साधू सा आलाप कर लेता हूँ ,
मंदिर जाकर जाप भी कर लेता हूँ ..
मानव से देव ना बन जाऊं कहीं,,,,
बस यही सोचकर थोडा सा पाप भी कर लेता हूँ
(¨`·.·´¨) Always
`·.¸(¨`·.·´¨) Keep Loving &
(¨`·.·´¨)¸.·´ Keep Smiling !
`·.¸.·´ -- raj sharma

User avatar
rajsharma
Super member
Posts: 14434
Joined: 10 Oct 2014 07:07

Re: Sarfaroshi سرفروس کی تمنا

Post by rajsharma »



اور تبھی کیمپ کی زپ کھلی تھی ۔۔۔۔۔اور وکرم اندر گھسا تھا ۔۔۔۔وہ شاید کافی دیر سے باہر تھا ۔۔۔۔اور ساری آوازیں سن چکا تھا ۔۔۔۔اس نے نجانے کسے طریقے سے باہر سے زپ کھولی تھی ۔۔۔اور اندر آ کر زپ بند کی اور ہیٹر رکھتے ہوئے ان کی طرف مڑا ۔۔۔جہاں ماں بیٹے سلیپنگ بیگ میں لپٹے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔وکرم کے چہرے پر شیطانیت مسکراہٹ تھی ۔۔۔۔۔۔اس نے آتے ہی کہا کہ اچھا یہاں یہ سب چل رہا ہے اور میں باہر تیری بیٹی کی فکر میں جاگ رہا ہوں ۔۔۔۔۔مینا کماری نےوجے کو الگ کیا ۔۔۔اور پوچھا کہ تمہیں اندر آنے کی ہمت کیسی ہو ئی ۔۔۔۔۔ کیا چاہتےہو ۔۔۔۔۔۔۔

جواب بڑا خوفنا ک تھا۔۔۔۔۔دیوی جی ۔۔ چاہنا تو تمکو ہے ۔۔اگر اپنی بیٹی کی زندگی چایئے تو ۔۔۔۔۔کل اگر میں رسی پھینک کر نہ کھینچوں تو کیا ہو گا۔۔وہ دونوں نیچے ہی رہیں گے ۔۔۔۔خود سوچ لو ۔کوئی اعتراض ہے تو میں واپس چلا جاتا ہوں ۔۔۔۔۔۔

مینا کماری نے وجے کی طرف دیکھا ۔۔جو حیرت اورخوف کی ملی جلی کیفیت میں تھا ۔۔۔ان دونوں کے پاس کوئی حل نہیں تھا ۔دونوں ایکدوسرے کو دیکھتے رہے ۔۔۔۔جبھی وکرم چلتا ہوا قریب آیا تھا ۔۔۔۔اور اپنی جیکٹ اتارتا ہوا قریب آیا ۔۔۔۔اس کے منہ سے شراب کی بو آ رہی تھی ۔۔۔۔اس نےوجے کو سلیپنگ بیگ پورا کھولنے کا اشارہ کیا ۔۔۔اور مینا کماری کو کہا کہ میری پینٹ اتارو

مینا کماری بے چارگی کے عالم میں وجے کو دیکھتی ہوئی اٹھی ۔۔اور وکرم کیطرف بڑھی ۔۔۔اس کے جسم پر ایک بھی کپڑا نہیں تھا ۔۔۔پیچھے سے بڑے بڑے چوتڑ ہل رہے تھے ۔۔۔وکرم کی پینٹ اترتے ہی اس کا موٹا تازہ لن سامنے آیا تھا ۔۔۔جو کہ وجے سے دو گنا موٹا اور لمبا تھا ۔۔۔۔۔۔وکرم سیدھا آ کر سلیپنگ بیگ میں لیٹا ۔۔۔اور مینا کماری کو لن چوسنے کا کہا۔۔۔۔مینا کماری اس کی ٹانگوں کے پاس آ کر گھوڑی بنی اور اس کےلن کو چوسنے لگی ۔۔۔۔۔جو اس کے منہ کے تھوک اور حرارت لگتے ہی اور پھولنے اور لمبا ہونے لگا۔۔۔۔کیمپ کے اندر لگے ہوئے ہیٹر نے حدت اور گرمی بڑھا دی تھی ۔۔۔۔۔۔وجے اپنی ماما کو وکرم کا لن چوستے ہوئےدیکھ رہا تھا ۔۔اور پیچھے سے موٹی اور بھاری گوشت سے بھرے گول مٹول چوتڑ دیکھ کر اس کا بھی لن کھڑا ہونے لگا۔۔۔وکرم نےیہ دیکھ لیا تھا ۔۔۔۔۔مگر بولا کچھ نہیں ۔۔۔۔۔۔ادھر چند ہی منٹ میں وکرم کا لن تن چکا تھا ۔۔۔۔مینا کماری کے تھوک نے اس چمکا دیا تھا ۔۔۔۔۔وکرم نے وجے کو لیٹنے کا کہا ۔۔۔۔وجے سیدھا لیٹ گیا ۔۔۔۔اور پھر اسنے مینا کماری کو الٹااس پر لٹا دیا ۔۔۔۔۔۔مینا کماری کے بھاری بھرکم دودھ اپنے لمبے لمبے نپلز کے ساتھ اپنے بیٹے کے سینے پر گڑے ہوئے تھے ۔۔۔۔وجے کی ٹانگیں سیدھی تھیں ۔۔۔جبکہ مینا کی ٹانگیں وکرم نے موڑ کر اس مینڈ ک کی شکل دے دی تھی ۔۔۔۔۔پیچھے سے وکرم نے اپنے موٹے تازے لن کو سمبھالا جو ہوا میں لہرا رہا تھا ۔۔اور پھر مینا کماری کی گانڈ کے نیچےسے چوت پر ٹکا دیا۔۔۔جو سوجی ہوئی حالت میں لال سرخ ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔اور پھر ایک جھٹکے میں آدھا اندرگھسا دیا ۔۔۔۔مینا کماری چلائی تھی ۔۔۔۔۔۔۔اوئی بھگوان مر گئی ۔۔۔۔۔ہائے ۔۔۔۔اف۔۔۔۔۔ساتھ ہی اس کے دودھ بھی وجے کے سینے پررگڑے تھے۔۔۔۔۔۔۔وجے نے اپنی ماما کی آنکھوں میں آنے والے آنسو دیکھے ۔۔۔۔جو ہونے والے کی درد کی نشانی تھے ۔۔۔۔مینا کماری ابھی بھی چلا رہی تھی ۔ہائے ۔۔۔اف۔۔۔سس ۔۔۔۔۔مگروکرم نے پورا لن اند ر گھسا دیا تھا ۔۔۔اور اب تیزی سے جھٹکے مارتا جا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ مینا کماری کے آنسو وجے کے چہر ے پر گر رہے تھے ۔۔۔اس نے اٹھ کر ماما کے چہرے کو تسلی دینے کے لئے چومنے کی کوشش کی تھی ۔۔۔۔۔۔مینا کماری بھی تھوڑی سی نیچے جھکی ۔۔۔۔اور پھر وجے کے ہونٹوں کے ساتھ اس کے ہونٹ پیوست ہو گئے ۔۔۔۔۔۔وجے کے جسم میں سنسنی سی دوڑنے لگی تھی ۔۔۔۔۔اور نیچے سے ادھ موا لن بھی کھڑا ہونے لگا۔۔۔۔وجے نے اپنی ماما کے ساتھ کسنگ تیز کر دی تھی۔۔۔۔۔۔مینا کماری کے ممے اب بھی اس کے سینے پر رگڑ کھا رہےتھے ۔۔۔نرم نرم سے ممے وجے کو اور زیادہ مزے دے رہے تھے ۔۔۔اور اپنےاوپر رکھے وزن کا احساس بھی ختم کر رہے تھے ۔۔۔وجے سترہ اٹھار ہ سالہ لڑکا تھا ۔۔اور ابھی اپنی ماما کے نیچے بالکل چھپ سا گیا تھا ۔۔۔۔وکر م کے دھکے اسی طرح سے جاری تھی ۔۔۔مینا کماری کے چوتڑ پر ہاتھ مارتا ہوا وہ دھکے مارے جا رہا تھا ۔۔۔۔کچھ دیر بعد مینا کماری کی تکلیف کم ہونے لگی تھی ۔۔۔جسےوجے نے بھی محسوس کر لیا تھا۔۔۔۔۔تبھی مینا کماری نے وجے کے ہونٹوں سے اپنے ہونٹ اٹھا ئے تھے ۔۔۔اور سسکاری بھری تھی ۔۔۔گرم گرم ۔۔۔اور شہوت سے بھرپور ۔۔۔اور وجے بھی پورا اندر سے ہل گیا ۔۔۔اس کے لن نے اچھل کر سلامی دی تھی ۔۔۔۔اس نے ہاتھ بڑھا کر اپنی ماما کی پیٹھ پر ہاتھ پھیرنا شروع کر دیا ۔۔۔۔مینا کماری نے وجے کے دائیں بائیں گھٹنے ٹکائے ہوئے تھی ۔۔اب اٹھنے لگی ۔۔۔اوربیگ پر رکھے گھٹنے کے ساتھ کھڑی ہو گئی ۔۔۔پیچھے وکرم نے بھی گھٹنے ٹکا کر اس کے پیچھے جڑ گیا تھا۔۔۔۔مینا کماری بھی ہلکی سی وکرم سےٹیک لگائے ہوئے تھی ۔۔۔۔وجے اپنی ماما کے ممے اچھلتے ہوئے دیکھ رہا تھا ۔۔۔ نیچے سے اس کالن بھی کھڑا تھا۔۔۔جو مینا کماری نے حیرت دیکھا۔۔۔۔۔اس کے بیٹے کو اپنی ماما کے درد کا بالکل بھی احساس نہیں تھا ۔۔۔۔آ خر مینا کماری نے بھی ہاتھ بڑھا اور وجے کے لن کو دیکھنے لگی ۔۔۔درمیانی موٹائی کا یہ لمبا لن تھا ۔۔۔۔ٹوپی تھوڑی سی موٹی تھی ۔۔اور رنگت سرخ و سفید ہوئی تھی ۔۔۔مینا کماری ایک ہاتھ سے تھامتی ہوئ اوپر نیچے کرنے لگی ۔۔۔پیچھے سے وکرم کے دھکے اور تیز ہوئے تھے ۔۔۔۔۔مینا کماری کی سسکاری بلند ہو کر پورے کیمپ میں گونجنے لگی ۔۔۔۔اور وجے کے اندر سے شہوت کا ایک طوفان امڈنے لگا۔۔اس کا لن تیزی سے اکڑ چکا تھا ۔۔۔۔وکرم یہ سب کچھ دیکھ رہا تھا ۔۔۔وہ جھٹکے مارتا ہوا پیچھے ہٹ گیا ۔۔۔۔اورسلیپنگ بیگ پر وجے کے ساتھ جا لیٹا ۔۔مینا کماری نے ایک ہاتھ اسکی طرف بڑھا دیا ۔۔اور سختی کھونےوالے لن کو ہاتھ سے پکڑ کر ہلانے لگی ۔۔۔مینا کماری کے ایک ہاتھ میں وکرم کا لن اور دوسرے ہاتھ میں اپنے بیٹے کا لن تھا ۔۔وہ دونوں کو سہلا رہی تھی ۔۔دونوں ہی شہوت بھری نظروں سے اسے دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔وکرم کا لن وجے سے کافی بڑا اور کالا تھا ۔۔۔جبکہ وجے ابھی بھی بڑھوتری کے عمل میں تھا۔۔۔۔اس لئے چھوٹا اور سرخ و سپید سا مگر لمبائی میں کچھ لمبا اور پتلا۔۔۔۔۔جلد ہی دونوں کے لن تن چکے تھے ۔۔۔۔وجے اٹھ کر پیچھے کیطر ف آیا تھا ۔۔۔۔اورآگے کو جھکی ہوئی ماماکے پیچھے گیا ۔۔اور پر ہاتھ پھیرنے لگا۔۔۔۔۔اور پیچھے سے ہی ہاتھ بڑھا کر ممے تھامنے لگا۔۔۔ممے اس کے چھوٹے ہاتھوں میں کہاں آتے ۔۔۔۔۔۔بار بار وہ دبوچ کر دباتا ۔۔۔۔۔پیچھے سے اس کا لن اس کی ماما کی کمر کو چھو رہا تھا۔۔۔وکرم نے اپنا لن تیار ہونے کے بعد مینا کماری کو آگے کی طرف کھینچا۔۔۔۔آو دیوی جی ۔۔۔۔۔ہماری بھی سوار ی کرو۔۔۔۔۔مینا کماری کھسکتی ہوئی آگے بڑھی اور وکرم کے لن کو پکڑتی ہوئی بیٹھنے لگی ۔۔۔پیچھے سے وجے یہ سب دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔اپنی ماما کے بڑے بڑے ہلتے ہوئے چوتڑ نے اس کے اندر ہلچل مچادی تھی ۔۔۔۔۔۔ادھر مینا کماری وکرم کے اوپر بیٹھ کر آگے کو جھک گئی تھی ۔۔۔۔۔ادھر وجے نے تھوک نکال کر اپنےہاتھ پر پھینکا اور اپنے لن کو گیلا کرنے لگا۔۔۔۔مینا کماری وکرم کے دائیں بائیں گھٹنے رکھے آگے کو جھکی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے سے چوتڑ فل گولائی میں مڑے ہوئے تھے ۔۔۔جب وجے اس کے پیچھے آیا ۔۔۔ایک نظر گانڈ کےسوراغ کو دیکھا تھا ۔۔۔۔یہ جگہ اب تک اس کے لئے ممنوع رہی تھی ۔۔۔انجلی نے کبھی چھونے نہیں دیا تھا۔۔مگر اس مرتبہ وہ ٹرائی کرنا چاہ رہا تھا ۔۔۔مینا کماری آگے کوہوئی سسکیاں بھر رہی تھی ۔۔۔اس کے بڑے سے ممے وکرم کے سینے پرتھے ۔۔۔۔جسے وہ ہاتھ نیچے لے جا کر کھینچا اور نپلز اور لمبے کرنے کی کوشش کرتا ۔۔۔۔۔۔ادھر وجے نے پھر تھوک پھینک کر اپنے لن کو گیلا کیا ۔۔۔اور گانڈ کے اندر انگلی کرنے لگا۔۔۔۔۔۔۔میناکماری ایک جھٹکے سے اچھلی تھی ۔۔۔۔۔وجے ۔۔۔یہ کیا کر رہے ہو ۔۔۔۔ہٹو یہاں سے ۔۔۔مگر وجے کا ایسا کوئی ارادہ نہیں تھا ۔۔۔۔مینا کماری اٹھنے لگی تھی ۔۔مگر وجے نے دونوں ہاتھوں سے اسے واپس دبا دیا ۔۔۔وجے نے اپنا لن گانڈ پر رکھے ہوئے زور دینے لگا۔۔۔سوراخ تنگ تھا ۔۔۔مگر وجے کے دباؤ نے کھلنے پر مجبور کر دیا ۔۔۔۔۔مینا کماری بلبلا اٹھی تھی ۔۔۔۔۔اس کے جسم میں خاصی لرزش ہوئی تھی ۔۔۔۔۔وجے کو بھی لن پر گرمی کااحساس ہوا ۔۔۔اس نے اپنی ماما کی پیٹھ پر ہاتھ رکھ کر دھکے دینے لگا۔۔۔۔۔میناکماری ایک ایک دھکےکے ساتھ اٹھتی ۔۔۔اوراس کی کمر اندر کو ہوتی ۔۔۔۔منہ سے کراہیں نکلتی ۔۔۔مگر وجے ان سب سے بے خبر دھکے دیتا رہا ۔۔۔۔نیچے سے وکرم نے بھی اچھال کر مینا کماری کو اپنے سہارے پر ہونے کا کہا۔۔۔وہ آگے کو ہو کر اپنے گھٹنے اور ہاتھ کے بل پر ہوگئی ۔۔۔مگر تھی ابھی بھی وکرم کے اوپر ۔۔۔نیچے سے وکرم نے بھی جھٹکا مارا تھا۔۔۔۔مینا کماری چلائی تھی ۔۔۔۔۔۔۔اب اس کی چوت اور گانڈ دونوں میں دھکے جاری تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔وکرم پہلے سے لگا ہوا تھا ۔۔۔وہ جلدی فارغ ہو گیا ۔۔۔۔۔اور نیچے سے نکلنے لگا۔۔۔۔۔۔میناکماری اب ٹھیک سے گھوڑی بن گئی ۔۔۔۔۔اور وجے اب تھوڑا اور آگے بڑھ آیا تھا ۔۔۔اپنی ماما کی بغل میں ہاتھ ڈالتے ہوئے تھوڑا سا اٹھا یا ۔۔۔اور مموں کو پکڑتے ہوئے دھکے دینے لگا۔۔۔۔۔مینا کماری تھوڑی سی اٹھی ہوئی دھکے کھا رہی تھی ۔۔۔۔گانڈ جیسے چر گئی تھی ۔۔۔۔اور دھکے کے ساتھ درد کی لہر بھی دوڑتی ۔۔۔۔وجے نے دھکے تیز کئے تھے ۔۔۔شاید فارغ ہونے والا تھا ۔۔۔۔اور پھر زور سے چلاتے ہوئے اس نے اندر پانی چھوڑا ۔۔۔۔۔میناکماری نے سکون کا سانس لیا ۔۔اور آگے کو ہو کر لیٹ گئی ۔۔۔۔۔مگر پیچھے ہی ایک بھاری وزن آ کر اس کے چوتڑوں پر بیٹھا تھا۔۔۔یہ وکرم تھا ۔۔۔اور لن کو ہلاتے ہوئے گانڈ میں گھسانے لگا۔۔۔۔الیٹی لیٹی میناکماری درد سے چلانے لگی ۔اور ہٹنے کاکہنے لگی ۔۔مگرجب وجے نے اس کا احساس نہیں کیا تو وکرم کیسے کرتا ۔۔۔۔اس نے تھوک لگا کر لن اندر گھسا دیا۔۔۔مینا کماری کو اب صحیح کا درد ہونے لگا تھا ۔۔۔وہ رونے لگی ۔۔۔چلانے لگی ۔۔مگر وکرم ایسے ہی لگا رہا تھا ۔۔۔۔دونوں ہاتھ مینا کماری کی کمر پر دباتے ہوئے پیچھے سے دھکے مارتا رہا ۔۔۔۔۔۔اگلے پانچ منٹ دھکے ایسے ہی جاری رہے ۔۔۔۔۔۔۔اور پھر وکرم نے پانی چھوڑا ۔۔۔۔پھر اٹھا اور اپنے کپڑے پہننے لگا۔۔۔۔۔میناکماری ویسے ہی بے سدھ لیٹی رہی تھی ۔۔شادی کے ابتدائی دنوں میں اس کی بہن کی فیملی کا ایک فضائی حادثے میں انتقال ہو گیا تھا ۔۔صرف اس کا بچہ ہی باقی تھا ۔جو اس سفر میں جانے کے بجائے مینا کماری کے پاس تھا ۔۔اور آج وہی وجے کی صورت میں اس کے سامنے تھا ۔۔۔۔۔
وکرم نے کل صبح جانے کا بتا کر باہر چلا گیا ۔۔۔۔وجے اپنی ماما کے قریب آیا ۔۔سلیپنگ بیگ کے اندر گھسیٹ کر اوپر سے زپ بند کر دی ۔اور لپٹ کر سو گیا۔

٭٭٭٭٭٭٭٭


رات انجلی نے میری بانہوں میں ہی گزاری۔۔۔میرے سینے پر سر رکھے وہ سو گئی تھی ۔۔۔میں بھی کچھ دیر بعد سو گیا ۔۔۔جب آنکھ کھلی تو۔۔۔صبح کی روشنی چھانے لگی تھی ۔۔۔اتنے میں ریڈیو ٹرانسمیٹر پر سگنل آنا شروع ہوئے ۔۔میں نے آن کیا تو وکرم تھا ۔۔ ۔۔پروفیسر صاحب ۔۔ ہم کیبل نیچے بھیج رہے ہیں ۔۔۔۔آپ لوگ تیاری کریں ۔۔۔ کچھ دیر میں ایک مضبوط کیبل نیچے لٹکتی ہوئی آئی۔۔۔۔ میں نے سلیپنگ بیگ کو لپیٹ کر اکھٹا کیا اور چوکور کرتے ہوئے کیبل کے سرے پر جھولا بنانے لگا۔۔۔اور سلیپنگ بیگ اس پر رکھتے ہوئے انجی کو اس پر بٹھا دیا ۔۔۔۔۔اس کا ڈر کے مارے برا حال تھا ۔۔۔۔میں نے کیبل کا ایک بل اس کی کمر کے گرد بھی دے دیا ۔۔۔۔اور وکرم کو ریڈیو پر کھینچنے کا کہا ۔۔۔۔۔کیبل آہستہ آہستہ اوپر کھنچنے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔انجلی خوف ذدہ نظروں سے مجھے دیکھ رہی تھی ۔۔۔میں اسے نگاہوں میں تسلی دینے لگا۔۔۔۔۔کچھ دیر بعد اسے میں نے کنارے کے قریب دیکھا ۔۔۔۔اور پھر اوپر سے اٹھے ہوئے دو تین ہاتھوں نے اسے کھینچ لیا۔۔۔۔۔۔۔۔کیبل واپس نیچے آئی تھی ۔۔۔۔اب کی با ر میں کیمپ لپیٹ کر تیار بیٹھا تھا ۔۔۔۔۔اور کیبل کے آتے ہی میں نے اس پرجھولے پر پیر رکھے اور وکرم نے مجھے کھینچنا شروع کر دیا ۔۔۔جلد ہی میں بھی اوپر تھا ۔۔۔۔۔۔۔کل رات کی تباہ کاری ختم ہوگئی تھی ۔۔اور اب سب کے چہروں پر سکون نظر آ رہا تھا ۔۔۔مینا کماری بھی عجیب سی نگاہوں سے مجھے دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔اس کی بیٹی کی جان بچانے کے لئے ۔۔یا پھر کوئی اور وجہ تھی ۔۔۔۔وکرم نے بلند آواز سب کو تیار ہونے کا کہا کہ دس منٹ میں ہم روانہ ہورہے ہیں ۔۔میں مینا کماری کے کیمپ میں پہنچا جہاں چائے میرا انتظار کر رہی تھی ۔۔۔چائے پی کر ہم باہر آئے اور سفر پھر شروع ہو گیا ۔۔۔۔ اب کی بار چڑھائی کم تھی ۔۔۔۔اور متوازن میدان میں سفر ہو رہا تھا ۔۔۔مگر جمی برف کے اوپر یہ سفر بھی خاصا مشکل تھا ۔۔۔۔۔۔راستے میں دو تین جگہ رکے ۔۔۔۔۔آخری مرتبہ اسٹاپ پر وکرم نے بتایا کہ یہ آخری اسٹاپ ہے ۔۔اگلی مرتبہ ہم ہلسا پر جا کر رکیں گے ۔۔۔۔۔۔میں نے اپنا کیمپ کھولا ۔۔۔۔اور بیگ لئے اندر جا گھسا ۔۔۔۔۔عمران صاحب کا دیا بیگ کھولنے کا ٹائم آ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔خصوصی فون نکال کر اس پر ایک بٹن دبا دیا ۔۔۔۔اور بیگ کھولنے لگا۔۔۔۔۔۔اندر موجود تمام چیزیں میں نے اپنے جسم پر پہن لی ۔۔۔۔اور پھر پرانا لباس پہن کر جیکٹ چڑھالی۔۔۔۔بیگ کو لائٹر سے آگ لگا دی ۔۔۔کچھ دیر میں وہاں صرف راکھ پڑی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔میں باہر آیا تو مینا کماری نے مجھے حیرانگی سے دیکھا تھا ۔۔۔۔مگر جیکٹ کی وجہ سےزیادہ محسوس نہیں ہوا ۔۔۔۔۔۔میں نے اب اپنی اسپیڈ تیز کر دی تھی ۔۔۔۔ہم 20000 فیٹ اونچی برفانی چوٹی پر سفر کر رہے تھے ۔۔۔میں وکرم کے ساتھ ہو گیا تھا ۔۔۔۔اورپیچھے ہماری لائن ویسے ہی چل رہی تھی ۔۔۔۔۔۔اور پھر ایک بڑی سی پہاڑ کے کنارے میں پہنچ کر وکرم نے بتایا کہ ہمارے دائیں طرف تبت کا علاقہ ہے ۔۔۔۔۔اور بائیں طرف انڈیا کا علاقہ ہے ۔۔انڈیا کا اتر کھنڈ کا علاقہ میرے سامنےہی تھا۔۔۔۔۔میں نےپیچھے مڑ کر دیکھا ۔۔باقی لوگ کافی پیچھے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور نیچے دور کہیں ہلسا گاؤں تھا ۔۔جہاں ابھی ہم نے اتر کر جانا تھا۔۔۔۔میں کنارے پر کھڑے وکرم کو دیکھ رہا تھا ۔۔۔اور اس سے اشارے میں مختلف جگہ کے نام پوچھ رہا تھا ۔۔۔۔کہ میرا پاؤں ڈگمگایا ۔۔۔۔وکرم لپک کر سہارا دینے آیا تھا ۔۔۔مگر دیر ہو گئ تھی ۔۔۔۔۔۔۔میں ہاتھ پاؤں مارتا ہوں نیچے گرنے لگا۔۔۔۔۔وکرم کی چیخ میرے کانوں میں پڑی تھی ۔۔۔اور۔۔۔میں بادلوں کے درمیان سے گذرتا ہوا نیچے گرنےلگا۔۔۔

Read my all running stories

(ख़ौफ़ running) ......(फरेब running) ......(लव स्टोरी / राजवंश running) ...... (दस जनवरी की रात ) ...... ( गदरायी लड़कियाँ Running)...... (ओह माय फ़किंग गॉड running) ...... (कुमकुम complete)......


साधू सा आलाप कर लेता हूँ ,
मंदिर जाकर जाप भी कर लेता हूँ ..
मानव से देव ना बन जाऊं कहीं,,,,
बस यही सोचकर थोडा सा पाप भी कर लेता हूँ
(¨`·.·´¨) Always
`·.¸(¨`·.·´¨) Keep Loving &
(¨`·.·´¨)¸.·´ Keep Smiling !
`·.¸.·´ -- raj sharma

User avatar
rajsharma
Super member
Posts: 14434
Joined: 10 Oct 2014 07:07

Re: Sarfaroshi سرفروس کی تمنا

Post by rajsharma »


قسط نمبر4۔


بادلوں کی اوٹ آتے ہی میں سیدھا ہو گیا ۔۔خود کو بیلنس کرتے ہوئے میں نے اپنے کپڑے اتارنا شروع کر دیا ۔۔کپڑے اترنے کے بعد ہوا میں اڑتے ہوئے دور دور جانے لگے ۔۔۔۔۔۔۔کپڑے اتارنے کے بعد اپنا میک اپ بھی اتارنا شروع کر دیا۔۔۔۔۔۔۔پروفیسر کا پاسپورٹ میں اوپر بیگ کے ساتھ جلا کرآیا تھا ۔۔۔اور اب وہ شخصیت بھی ختم ہو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔نیچے میرا دوسرا لباس تھا۔۔۔۔جس کے ساتھ گلائیڈر اور خصوصی پیراشوٹ بندھا ہوا تھا ۔۔۔۔۔یہ گلائیڈ بازو سے لے کر نیچے تک اور دونوں ٹانگوں کے درمیان ایک پردے کے صورت میں تھا ۔۔۔۔۔میں نے دونوں ہاتھ پھیلائے اور ٹانگوں کو پھیلایا تو یہ کھلتےگئے ۔۔اور میں تیزی سے آگے کی طرف تیرنے لگا۔۔۔۔۔۔انڈیا کی سمت میرے سامنےتھی ۔۔۔۔اور میں تیزی سے تیرتے ہوئے اس طرف جانے لگا۔۔۔۔۔اونچائی تیزی سے کم ہوتی جارہی تھی ۔۔۔۔نیچے کی زمیں اور روڈ مجھے نظر آرہا تھا ۔۔۔۔شام کےدھندلکے پھیلنے لگے تھے ۔۔۔۔۔قریب پہنچ کر مجھے ایک جیپ اور اس کے ساتھ ہی سرخ رنگ کا دھواں اٹھتا ہوا نظرآنے لگا۔۔جیب مین روڈ سے ہٹ کر کھڑی تھی ۔۔۔اور ساتھ کھڑے ایک آدمی کاخاکہ ابھر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔میں نے آنکھیں سکیڑ کر نیچے دیکھااور پیرا شوٹ کھینچ دیا ۔۔۔اوزون نامی یہ پیرا شوٹ چھوٹا اور ایک آدمی کے لئے بہترین تھا ۔۔۔ میں جیپ سےبیس قدم کے فاصلے پر اترا تھا۔۔۔پاؤں زمیں پر لگتے ہی میں نے دوڑنا شروع کیا ۔۔۔اور کچھ قدم بھاگ کر مڑا اور پیرا شوٹ کو کھینچ کر اتارنے لگا۔۔۔۔۔۔پیراشوٹ کو لپیٹ کر میں نے پھر لائٹر نکالا اور آگ دکھا دی ۔گلائیڈ ر اتار کر ووہ بھی ساتھ ہی ڈال دیا ۔۔اب میں ایک چست ٹراوزر اور ٹی شرٹ میں تھا۔۔۔۔۔جیپ کا سوار میرے پیچھے آ چکا تھا۔۔۔میں مڑا اور ساتھ ہی ایک خوش شکل نوجوان مجھے بغل گیر ہوا تھا ۔۔۔۔اندا ز میں گرم جوشی تھی ۔۔۔۔۔اور الگ ہوتے ہوئے بولا مجھے عاصم علی خان کہتے ہیں ۔۔۔۔انڈیا کی سرزمیں پر خوش آمدید ۔۔۔۔میں نے بھی خوش دلی سے اس کو جواب دیا ۔۔۔عمراں صاحب نے مجھے بتا دیا تھا کہ وہاں مجھے دوست ملے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں دوبارہ سے پیراشوٹ کی طرف متوجہ ہوا ۔۔۔۔۔۔جو جل کر راکھ ہو چکا تھا ۔۔۔اتنے میں عاصم کی آواز آئی ۔۔آؤ دوست چلیں اب ۔۔ہمیں کل تک منزل تک پہنچنا ہے ۔۔۔۔عاصم نے ڈرائیونگ سیٹ سمبھال لی تھی ۔پیچھے سے عاصم نے جیکٹ بڑھا دی کہ پہن لو ۔۔۔۔۔جلد ہی ہمار ا سفر شروع ہوگیا ۔۔۔تھوڑی ہی دیر میں مجھے اندازہ ہو گیا تھا کہ ۔۔عاصم ایک ہنس مکھ اور جذباتی نوجوان تھا ۔۔۔۔بات بات پر قہقہ لگانے والا۔اور ہر قسم کی سچوئیشن کو ہینڈ ل کرنے والا۔۔چمکتی ہوئی آنکھوں والا یہ نوجوان اپنے وطن سے محبت میں اتنا دور آیا ہوا تھا ۔۔۔۔کئی سال پہلے پاکستان سے آنے کے بعد صرف رپورٹنگ کر رہا تھا ۔۔مگر اب عمراں صاحب سے ضد کے بعد اسے میرے ساتھ ایکشن میں شامل ہونے کی اجازت مل گئی تھی ۔۔۔۔۔عاصم نے پچھلے کئی برسوں میں کئی بہترین راز بھجوائے تھے۔۔۔یہاں تک انڈین پارلیمنٹ ہاؤس کی خفیہ ریکارڈنگ بھی وہ بھیجتا رہا تھا۔۔۔۔۔یہ مشن بھی اسی کی رپورٹ پر ترتیب دیا گیا ۔۔۔۔انڈیا نے اسرائیل کی مدد سے شملہ میں ایک ڈرون طیاروں کا ہیڈکوارڈر بنایا تھا ۔جس کی تنصیب سے لے ٹریننگ تک سب اسرائیلی ایجنٹ نے آ کر دی تھی ۔۔۔۔۔یہاں سے ڈرون اڑ کر وادی کاشمیر کی جدوجہد آزادی کی فضائی نگرانی کرتے تھے ۔۔۔۔۔ساتھ ہی پاکستان کے ساتھ لگنے والی لاہور اور سیالکوٹ سے لے کر مظفر آباد تک پورے بارڈر بھی ان کے رینج میں تھے ۔۔۔۔پاکستان ان کے کئی ڈرون تباہ کر چکا تھا ۔۔۔مگر اصل جڑ یہی ہیڈ کواٹر تھا ۔۔۔۔۔اور موجودہ حالات میں فضائی نگرانی کر کے کشمیری قیادت اور عوام کو محصور کرنے کا ذمہ دار بھی یہی ہیڈ کواٹر تھا ۔۔۔۔۔جو اب کسی بھی قیمت پر تباہ کرنا ہمارا مقصد تھا ۔۔۔

٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ہم جیپ پر مستقل سفر کررہے تھے ۔۔۔۔رات سر پر آچکی تھی مگر ہمیں قیام گاہ پر پہنچنے کی جلدی تھی ۔۔۔۔عاصم نے مجھے ڈرائیونگ کرنے کا کہا ۔۔۔۔اور میں نے اسٹیرنگ سمبھال لیا۔۔ہم گونجی کا علاقہ کراس کر چکے تھے ۔۔۔اور پیھلام کی طرف جانے والے روڈ پر سفر کر رہے تھے ۔۔۔چاروں طرف بلند بالا برف سے بھرے پہاڑ تھے ۔۔۔جن کے درمیان پتلی سی ناگن نما سڑک پر ہمارا سفر جاری تھی ۔۔۔۔۔۔آدھی رات تک ہم پیھلا م پہنچ چکے تھے ۔۔۔سڑک کنارے ایک ہوٹل میں ہم نے چائے پی ۔۔فیول بھروانے کے بعد۔پھر عاصم نے دوبارہ سے ڈرائیونگ سمبھال لی ۔عاصم کے پاس یہاں کا شناختی کارڈ بھی تھا ۔۔اور بہترین کور بھی ۔۔۔ساتھ ہی جیپ کے کاغذات بھی پورے رکھے ہوئے تھے ۔۔۔عاصم نے اچھے ایجنٹ کی طرح یہاں اونچے حکام سے تعلقات بنا رکھے تھے ۔۔۔اس لئے ہمارا سفر بغیر کسی رکاوٹ اور دشواری کے جاری تھا۔۔۔۔۔اب ہماری منزل منسیاری تھی ۔۔۔۔عاصم نے جیپ کی اسپیڈ بڑھا دی تھی ۔۔۔۔جب ہم منسیاری گاؤں میں داخل ہوئے صبح ہو چکی تھی ۔۔۔۔۔مگر ہمارا سفر ایسے ہی جاری تھا۔۔۔گیارہ بجے ہم کاشی پور پہنے ۔۔عاصم نے ایک اچھے ہوٹل کے سامنے گاڑی روکی ۔۔۔فریش ہو کر کھانا کھایااور پھر ڈرائیونگ میرے پاس آ گئی ۔۔۔۔۔عاصم مجھے گائیڈکرنے لگا ۔۔۔ہم دس منٹ بعد ہی اگلی منزل پر پہنچے تھے ۔۔یہ کوئی رہائش علاقہ تھا ۔۔۔ہم وہاں جیپ کو لاک کر کے اترے ۔۔پیچھے سے عاصم نے سیٹ کے نیچے سے اپنا بیگ نکالا ۔۔اور ہم اندر گلیوں میں بڑھ گئے ۔۔۔اور پھر ایک پرانے سے مکان کے سامنے پہنچ کر عاصم نے دروازہ کھٹکھٹایا ۔۔اندر سے بوڑھی کھانستی ہوئی آواز آئی ۔۔۔اور پھر دروازہ کھلا ۔۔ہم اندر داخل ہوگئے ۔۔بوڑھی عورت واپس اندر اپنے کمرے میں داخل ہو گئی ۔۔۔عاصم ایک اور کمرے کی طرف بڑھا ۔۔چابی سے کھولتے ہوئے اس نے مجھے اندر آنے کا کہا ۔۔۔لائٹ آن کی اور دروازہ بند کرکے پلٹا ۔۔۔کمرے میں ایک بیڈ ، الماری دوسرا ہلکا پھلکا ساما ن تھا ۔۔۔۔۔اب وہ الماری کے طر ف گیا اور دروازہ کھول کر اندر کوئی ہک گھمایا تھا ۔۔۔الماری کے اندر سے راستہ نمودار ہوا تھا ۔۔۔عاصم مجھے لئے ہوئے اندر گھسا تھا ۔۔نیچے سیڑھیا ں جا رہی تھی ۔۔۔۔۔جلد ہی ہم ایک بیس منٹ میں تھے ۔۔یہاں ایک طرف ٹیبل ، لیپ ٹاپ ، اور ڈیجیٹل کیمرہ رکھا ہوا تھا ۔۔۔۔راجہ صاحب آپ کے چہرے پر میک اپ کرنا ہے ۔۔اگر کوئی اعتراض نہ ہو تو ۔۔۔۔۔میں نے ہاں میں سر ہلادیا ۔۔اس نے ساتھ لائے بیگ کو کھولا اور سامان پھیلانے شروع کر دیے ۔۔۔۔۔۔اور پھر میرے چہرے پر اس کا کام شروع ہوا ۔۔۔طرح طرح کی ٹیوب اور کریمیں لگانے کے بعد اس نے ایک مونچھیں تیار کی تھی ۔۔۔۔اور پھر چہرے پر لگانے کے بعد میرے سامنے آئینہ کر دیا ۔۔۔میں سانولی رنگت کے نوجوان میں تبدیل ہو چکا تھا۔۔۔۔اور پھر کیمرے کے سامنے بٹھا کر میری تصویر نکالی ۔۔پرنٹر سے پرنٹ آوٹ نکالنے کے بعد اب وہ میرا شناختی کارڈ بنا رہا تھا ۔اس کے بیگ میں کافی ساری کارڈ پہلےہی تھے ۔۔وہ بس تصویر کو احتیاط سے تبدیل کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔اگلے آدھے گھنٹے میں میرا کارڈ میرے سامنے تھا ۔۔۔۔میرا نام راجہ سے راجو ہو گیا تھا ۔۔۔۔اس کے بعد عاصم نے مجھے ایک ایڈریس اورعلاقہ یاد کروادیا جو میرا آبائی گاؤں تھا ۔۔۔۔اگر کوئی میری انکوائر ی کرتا تو اس ایڈریس سے اوکے کی رپورٹ ملتی ۔۔۔۔۔ساتھ ہی ایک ڈریسنگ الماری سے میرے لئے تین چار سوٹ اور ایک بیگ منتخب کر کے میرا سفری بیگ بھی تیار تھا ۔۔۔اب میں عاصم کے گاؤں کا کوئی نوجوان تھا جو روزگار کی تلاش میں اس کے پاس آیا تھا ۔۔۔اس کے بعد ہم واپس جیپ تک پہنچے تھے ۔۔عاصم نے بتایا کہ شملہ میں غیرملکی بڑی تعداد میں آتے ہیں ۔اس لئے چیکنگ سخت ہوتی ہے۔۔۔اس لئے یہ سب ضروری ہے ۔۔۔ورنہ میں خود تو بغیر کسی شناخت کے آدھا ہندوستان گھوم چکا ہوں ۔۔۔۔ڈرائیونگ سیٹ میرے حوالے تھی ۔۔۔ہائی وے تک عاصم نے مجھے راستہ بتا یا ۔۔۔ہائی وے پر چڑھتے ہی میں نے اسپیڈ بڑھا دی ۔۔۔آگے راستہ آسان تھا ۔۔سائن بورڈ ہر طرف لگے ہوئے تھے ۔۔۔۔ ۔میں نے جیپ کو ٹاپ گئیر لگا دیا۔۔عاصم پچھلی سیٹ پر چلا گیا اور سونے لگا۔۔۔۔۔میں نے ریس پر پاؤں جمائے رکھا ۔۔راستے میں آنے والے سائن بورڈ میں پڑھتا رہا ۔۔ہم ہماچل پردیش میں داخل ہو چکے تھے اور منزل راج گڑ ھ تھی ۔۔جو کہ شملہ سے دو گھنٹے کے فاصلے پر تھا۔۔۔۔راج گڑھ جب قریب پہنچا تو میں نے عاصم کو آواز دی ۔۔۔وہ آنکھیں ملتا ہوا اٹھا ۔۔اور روڈ دیکھ کر حیران ہوا ۔۔۔۔۔بڑی اسپیڈ ماری ہے شہزادے ۔۔۔۔۔آگے عاصم نے گائیڈ کرنا شروع کیا ۔۔۔۔ہم راج گڑھ کی ایک رہائش علاقے میں داخل ہوئے ۔۔۔ایک خوبصورت سے بنگلے کے سامنے جیپ رکی تھی ۔۔۔۔۔۔جیپ روک کر میں اترا ۔۔۔عاصم پیچھے سے سامان اٹھا نے لگا۔۔میں بنگلے کے مین گیٹ کی طرف جانے لگا۔۔۔تو پیچھے سے عاصم کی آواز کی آئی ۔۔راجہ صاحب اس طرف ۔۔۔۔میں نے مڑ کر دیکھا تو سامنے عام سا بنا ایک چھوٹا سا مکان تھا۔۔۔۔میں تھوڑا شرمندہ ہوا ۔۔۔اور پھر عاصم کے پیچھے چلتا ہوا مکان میں داخل ہوا ۔۔۔۔۔۔یہ تین کمرے اور ایک کچن پر مشتمل گھر تھا ۔۔۔۔عاصم نے مجھے ایک کمرے میں بٹھایا ۔۔۔۔۔کمر ے کا وہی حال تھا جو پردیسی مسافروں کا ہو سکتا تھا ۔۔۔تھوڑی ہی دیر میں عاصم چائے بنا کر لے آیا ۔۔۔۔۔ہم آمنے سامنے بیٹھے ایکدوسر ے کو دیکھ رہے تھے ۔۔۔وطن سے دور ملنے والے ہم وطن ایسے ہی ایک دوسرے کو دیکھا کر تے تھے ۔۔۔۔ پھر عاصم نے بتایا کہ ابھی کچھ دن پہلے ہی وہ یہاں شفٹ ہوا ہے ۔۔اور وہ جیپ سامنے والے بنگلے والوں کی ہے ۔۔۔بیٹا کسی اچھی کمپنی میں کام کرتا ہے ۔۔اور بوڑھے والدین یہاں اکیلے رہتے ہیں ۔۔عاصم بھی ان کے کام آتا رہتا ہے ۔۔اس لئے آنے جانے کے لئے جیپ مل جاتی تھی ۔۔۔۔عاصم خود یہاں انشورنس ایجنٹ کا کام کر رہا تھا ۔۔ہر دو مہینے بعد اس کے کام بھی بدل جاتے تھے ۔۔۔اسے صبح ہوتے ہی کام میں نکلنا تھا ۔۔۔۔اس نے اپنے ہاتھ سے اسپیشل کڑاہی بنائی ۔۔اور کھانے کے دوران اس کی خوش کلامی اور لطیفے ایسے ہی جاری تھے ۔۔۔۔۔کھانے کے بعدعاصم کے ساتھ باہر گشت پر نکل گئے ۔۔سامنے والے انکل سے بھی ملے ۔۔۔۔عاصم مجھے لہجے اور الفاظ کی پریکٹس کروا رہا تھا ۔۔۔راستے میں ہم مختلف لوگوں سے ملے ۔۔۔عاصم یہاں کافی مقبول تھا ۔۔۔سب کے کام آنا اور خوش اخلاقی سے بات کرنا ۔۔۔یہ اس کی مخصوص عادت تھی ۔۔۔ایک گھنٹے بعد ہم واپس ہوئے ۔۔اور سونے کے لئے چلے گئے ۔۔۔۔

٭٭٭٭٭٭٭٭٭

اگلی صبح عاصم نے مجھے اٹھا یا تھا ۔۔۔۔سگھڑ بیوی کی طرح ناشتہ تیار کرلیا تھا ۔۔۔۔خود بھی تیار ہو چکا تھا ۔۔ایک چابی مجھے پھینکی کی ، یہ میری کھٹارا بائک ہے ۔۔۔۔پچھلی سائیڈ پر کھڑی ہے ۔۔۔باہر جاؤ تو اسے استعمال کرلینا ۔۔۔اور یہ تمہار ا موبائل ۔۔اور یہ پرس میں پیسے رکھ رہا ہوں ۔۔۔۔۔۔موبائل میں میرا نمبر سیو ہے ۔۔۔کوئی مسئلہ ہو تو کال کر لینا ۔۔۔میں آفس جا رہا ہوں ۔شام تک آؤں گا۔۔۔میں نے اوکے کی آواز لگائی اور دوبارہ سے آنکھیں بند کر لیں ۔۔ایک گھنٹے بعد میں اٹھ گیا ۔۔۔۔شاور لینے کے بعد باہر نکلا ۔۔۔ناشتہ میں سینڈوچ اور آملیٹ تھے ۔۔ناشتہ کر کے کپڑے چینج کئے اور پرس اور بائک کی چابی اٹھائے باہر آگیا ۔۔۔گھر کے باہر ہی ایک بائک کھڑی تھی ۔۔اور عاصم کے بتائے ہوئے کھٹارا سے کہیں زیادہ حالت خراب تھی ۔۔۔میں لاک کھول کر بائک سڑک پر لے آیا ۔۔۔انجن اچھی حالت میں تھا ۔۔۔پہلی کک میں ہی بائک کی آواز گونجی تھی ۔۔میں نے بائک آگے بڑھا دی ۔۔۔اسپیڈ آہستہ رکھی ۔۔اور شہر گھومنے لگا۔۔۔راج گڑھ ایک چھوٹی وادی نما علاقہ تھا ۔۔۔چاروں طرف ہریالی اور مخصوص طرز کے مکان بنے ہوئے تھے ۔۔۔۔یہاں کی آبادی تو کم تھی مگر پھر بھی روزانہ سینکڑوں مسافر یہاں آتے تھے ۔۔اس کی وجہ رادھا کشن کا مشہور مندر تھا ۔۔۔میں بھی گھومتا گھامتا رادھا کشن مندر جا پہنچا ۔۔۔۔سڑک پر ایک بھیڑ لگی ہوئی تھی ۔۔۔آنےجانے والے عقیدت مندوں کا رش تھا ۔۔۔۔باہر سے گشت کرتے ہوئے میں نے چاروں طرف کا چکر لگایا ۔۔اور پھر آگے بڑھ گیا ۔۔۔یہاں کی دوسر ی مشہور جگہ برّو صاحب کا گردوارہ تھا ۔۔۔جہاں بھی سکھ برادری کا ایسا ہی ہجوم تھا۔۔۔۔کچھ ٹائم وہاں گذار کر شیو مندر چلا آیا ۔۔۔۔یہاں بھی وہی رش تھا ۔۔۔ہر بھگوان کے اپنے چاہنے والے تھے ۔۔جو اسی سے امید لگائے بیٹھے تھے ۔۔۔۔۔میں اگلے ایک گھنٹے تک پورا علاقہ گھومتا رہا تھا ۔۔۔۔ایک ہی مین روڈ تھا جو ہائی وے بھی تھا ۔۔جس سے اندر کی طرف مختلف راستے نکلتے تھے ۔۔۔۔۔دوپہر ہونے لگی ۔۔۔تو میں واپس رادھا کشن مندر جا پہنچا ۔۔یہاں سب سے زیادہ رش تھا ۔۔۔۔سامنے ایک بڑی سی جھیل تھی ۔۔اورمندر کے دائیں بائیں عقیدت مندوں کے درمیان مختلف ٹھیلے والے بھی تھے ۔۔۔۔میں بھی ایک کے پاس کھڑا ہو گیا۔۔اور پیٹ کی آگ بجھانے لگا۔۔۔تبھی ایک گاڑیوں کی لائن میرے سامنے سے گذری تھی ۔۔۔آگے پیچھے تین تین ایمبیسیڈر کار کے درمیان ایک سرمئی ٹیوٹا فارچونر ۔۔رکی تھی ۔۔۔۔پیچھے کار میں سے گارڈ بھاگتے ہوئے آیا ۔اور ٹیوٹا کا دروازہ کھولا۔۔ایک خوبصورت عورت سفید ساڑھی میں اتری تھی ۔۔جس کے ہاتھ میں بڑی سے ٹرے تھی جس پر کپڑا ڈھکا ہوا تھا ۔۔۔۔۔باقی گارڈ بھی آ کر دائیں بائیں کھڑے ہو چکے تھے ۔۔۔میں نے ٹھیلے والے سے پوچھا کہ یہ کون ہیں۔۔اس نے بتایا کہ یہ کسی سرکاری ادارے کے افسر کی بیوی ہے ۔۔ہر ہفتے بڑے پجاری سے ملنے آتی ہے ۔۔۔مگر وہ کسی بڑی پوجا میں مصروف ہیں ۔۔اس لئے ایسے ہی واپس چلی جاتی ہے ۔۔۔۔مجھے اس پجاری پر حیرت ہوئی کہ کیوں اس خوبصورت عورت کو پریشان کر رہا تھا ۔۔۔شاید اسی طرح اس کی دکانداری چلتی تھی ۔۔۔۔اور دوسرے لوگ بھی راغب ہوتے تھے ۔۔۔۔وہ عورت اندر کی طرف بڑھنے لگی ۔۔گارڈ بھی ساتھ ہی تھے۔۔۔میں بھی مناسب فاصلے رکھے اندر چل پڑا ۔۔۔۔سامنے ہی رادھا کشن کا دیو قامت بت بنے ہوئے تھے ۔۔۔ایک طرف بھجن گائے جائے رہے تھے ۔۔۔بت کے سامنے نیچے پجاری جی بیٹھے تھے ۔۔۔جو لوگ آتے وہ بت کو چھوتے اور کچھ پیسے زیور وغیرہ اس کے قدموں میں ڈالتے اور پجاری ان کو پرشاد اور ٹیکہ لگاتا ۔۔اور دوسرے راستے سے واپس ہو جاتے ۔۔۔میں یہ سب منظر دیکھ رہا تھا۔۔۔۔وہ عورت بت کے پیچھے بنے ہوئے ایک کمرے میں داخل ہوئی تھی ۔۔۔۔۔میں نے پیچھے جانا چاہا تو روک دیا گیا ۔۔۔پتا چلا کہ یہ وی آئی پی کے لئے مخصوص جگہ ہے ۔۔۔۔میں واپس آیا ۔۔مندر میں ہر طرف مختلف پجاری پیلے رنگ کے کپڑوں میں پھر رہے تھے ۔۔میں ایک پجاری کو لئے سائیڈ پر گیا ۔۔ہزار کا نوٹ نکال کر اس کے ہاتھوں میں پکڑا دیا ۔۔اور بڑی لجاجت سے بڑے پجاری سے ملاقات کروانے کا کہا ۔۔۔پجاری پیسےدیکھ کر چونکا ۔۔پھر اپنی دھوتی میں پیسے اٹکاتے ہوئے بولا ۔۔بالک بڑے پجاری مصروف ہیں ۔۔کام بتاؤ کیا کام ہے ، کیوں ملنا ہے ۔۔۔میں نے مزید بے چارگی سے کہا کہ بہنوں کی شادی ہے ۔۔۔روزگار نہیں ہے ۔۔۔۔خودکشی پر آگیا ہوں ۔۔اب وہی سہار ا ہیں ۔۔۔۔
پجاری مجھے دیکھ کر کچھ ہلکا ہوا اور بولا کہ بڑے پجاری سے تو کوئی نہیں مل سکتا۔۔۔ان سے چھوٹے پجاری اندر ہیں وہاں پہنچا دیتا ہوں ۔۔۔وہ پرشاد دیں گے ۔۔گھر میں سب کو کھلا دینا ۔۔۔سب مشکلیں ٹل جائیں گیں۔۔۔میں نے جلدی سے ہامی بھر لی ۔۔۔اور یہ پجاری مجھے لے کر آگے بڑھ گیا ۔۔ایک میلا سا پردہ اٹھا کر اندر گیا ۔۔اندر ایک گلی تھی ۔۔جس کا دائیں بائیں مختلف کمرے اور ہال تھے ۔۔۔میں راستہ یاد کرتے ہوئے بڑھنے لگا۔۔اور جلد ہی اسی وی آئی پی ہال کے اندر تھا ۔۔اب کی بار راستہ اندر سے تھا ۔۔۔۔میں جا کر بیٹھ گیا ۔۔یہاں تمام اونچے خاندانوں کی عورتیں بیٹھی تھی ۔۔ایک سے بڑھ کر ایک حسین ۔۔۔یہاں بھی چھوٹا بت تھا ۔۔جس کے سامنے کوئی داسی اپنا رقص پیش کر رہی تھی ۔۔۔۔ایک طر ف کچھ داسیاں بھجن گا رہی تھی ۔۔۔۔بھجن کے ساتھ مختلف لوگ اٹھتے ۔۔پرشاد لے کر جاتے رہے ۔۔۔مگر وہ سفید ساڑھی والی عورت ایسے ہی بیٹھی رہی ۔۔۔بھجن ختم ہو چکا تھا ۔۔تب بھی وہ نہیں ہلی ۔۔۔آ خر میں اٹھا اور پجاری کے قدموں میں جا کربیٹھ گیا ۔۔مسئلہ بتایا اور پرشاد لئے باہر آگیا ۔۔۔اس سے زیادہ رکنا خطرناک تھا ۔۔۔میں واپس اس پجار ی کے پاس پہنچا تھا ۔۔۔اور اس سے پھر التجا کی کہ اگر بڑے پجاری کی کوئی تصویر ہے تو مجھے دیکھا دے۔۔میں روز اس کا دیدار کروں گا تو کام جلدی ہو جائیں گے ۔۔۔۔وہ پجار ی مجھے کوئی زیادہ ہی عقیدت مند سمجھا تھا ۔۔۔اس کا ہاتھ پھر سے اپنی دھوتی میں گیا تھا ۔۔۔اب کی بارآئی فون باہر آیا ۔۔۔اس نے مجھے بڑے پجاری کی تصویر دکھا دی تھی ۔۔۔یہ کوئی جوان پجاری تھا جو باہر کے ملک سے پی ایچ ڈی بھی کرکے آیا تھا ۔۔۔۔تصویر کے بعد میں نے اسے کہا کہ مجھے بڑے پجاری کی رہائش کی سمت بھی بتا دے میں اس کی طرف دیکھتے ہوئے پرشاد کھا نا چاہتا ہوں ۔۔۔اس نے پھر مندر کی اوپری سمت اشارہ کر دیا ۔۔میں نے اس کی طرف دیکھ کرپرشاد منہ میں ڈالا۔پجاری کچھ حیران تھا ۔ایسی عقیدت شاید پہلے دکھنے میں نہیں آئی تھی ۔۔۔۔میں پجاری کے ہاتھ میں ایک اور بڑا نوٹ رکھتے ہوئے باہر آگیا ۔۔۔۔میرا کام ہو گیاتھا ۔۔۔

٭٭٭٭٭٭٭
Read my all running stories

(ख़ौफ़ running) ......(फरेब running) ......(लव स्टोरी / राजवंश running) ...... (दस जनवरी की रात ) ...... ( गदरायी लड़कियाँ Running)...... (ओह माय फ़किंग गॉड running) ...... (कुमकुम complete)......


साधू सा आलाप कर लेता हूँ ,
मंदिर जाकर जाप भी कर लेता हूँ ..
मानव से देव ना बन जाऊं कहीं,,,,
बस यही सोचकर थोडा सा पाप भी कर लेता हूँ
(¨`·.·´¨) Always
`·.¸(¨`·.·´¨) Keep Loving &
(¨`·.·´¨)¸.·´ Keep Smiling !
`·.¸.·´ -- raj sharma

Post Reply